Monday , January 22 2018
Home / شہر کی خبریں / اوقافی جائیدادوں کی ترقی و تعمیر ، گرانٹ ان ایڈ کی رقم 9 کروڑ 51 لاکھ جاری

اوقافی جائیدادوں کی ترقی و تعمیر ، گرانٹ ان ایڈ کی رقم 9 کروڑ 51 لاکھ جاری

حیدرآباد ۔ 19 ۔ فروری (سیاست نیوز) حکومت نے ریاست کے مختلف اضلاع میں اوقافی جائیدادوں کی ترقی اور تعمیر و مرمت کیلئے گرانٹ ان ایڈ کے طور پر 9 کروڑ 51 لاکھ 5243 روپئے جاری کئے ہیں۔ اس رقم سے مختلف اضلاع میں 188 کاموں کی تکمیل کی جائے گی۔ ان میں اوقافی اداروں کی مرمت وضو خانہ ، ٹائلیٹس کی تعمیر ، الکٹریکل ریپیرس اور دیگر ضروری اشیاء کی تکمیل

حیدرآباد ۔ 19 ۔ فروری (سیاست نیوز) حکومت نے ریاست کے مختلف اضلاع میں اوقافی جائیدادوں کی ترقی اور تعمیر و مرمت کیلئے گرانٹ ان ایڈ کے طور پر 9 کروڑ 51 لاکھ 5243 روپئے جاری کئے ہیں۔ اس رقم سے مختلف اضلاع میں 188 کاموں کی تکمیل کی جائے گی۔ ان میں اوقافی اداروں کی مرمت وضو خانہ ، ٹائلیٹس کی تعمیر ، الکٹریکل ریپیرس اور دیگر ضروری اشیاء کی تکمیل جیسے کام انجام دیئے جائیں گے۔ حکومت نے اس مد کے تحت وقف بورڈ کو 15 کروڑ روپئے بجٹ میں مختص کئے تھے۔ ضلع کلکٹر سے خواہش کی گئی ہے کہ وہ میونسپل کمشنر ، تحصیلدار اور این پی ڈی اوز کو عیدگاہ ، مساجد اور دیگر اداروں کا شخصی طور پر جائزہ لیتے ہوئے وہاں کی ضرورتوں کے بارے میں رپورٹ پیش کریں۔ اس کے بعد ہی رقم جاری کی جائے۔ چیف اگزیکیٹیو آفیسر وقف بورڈ کو ہدایت دی گئی ہے کہ وہ یہ رقم ضلع کلکٹر کے پاس محفوظ رکھیں اور ضلع کلکٹرس کاموں کی تکمیل اور بجٹ کے مناسب استعمال کو یقینی بنائیں گے۔ عادل آباد ضلع میں 5 اداروں کو 20 لاکھ روپئے مختص کئے گئے ہیں۔

اس کے علاوہ اننت پور میں تین اداروں کو 63 لاکھ ، چتور میں 5 اداروں کو 63 لاکھ، گنٹور میں 6 اداروں کو 20 لاکھ، کریم نگر میں 12 اداروں کو 15 لاکھ 50 ہزار ، کھمم کے 8 اداروں کو 15 لاکھ، کرنول کے 11 اداروں کو 35 لاکھ ، محبوب نگر کے 11 اداروں کو 50 لاکھ ، میدک کے تین اداروں کو 20 لاکھ، نلگنڈہ کے 6 اداروں کو 30 لاکھ ، نظام آباد کے 13 اداروں کو 50 لاکھ ، پرکاشم کے 4 اداروں کو 20 لاکھ ، نیلور کے پانچ اداروں کو 25 لاکھ، مغربی گوداوری کے 5 اداروں کو 25 لاکھ ، کڑپہ کے 44 اداروں کو ایک کروڑ 24 لاکھ۔ رنگا ریڈی کے 30 اداروں کو ایک کروڑ 56 لاکھ اور حیدرآباد کے 28 اوقافی اداروں کو دو کروڑ 19 لاکھ 5243 روپئے مختص کئے گئے۔ حیدرآباد میں جن اداروں کے لئے رقومات مختص کی گئیں ، ان میں درگاہ امر اللہ شاہ مغلپورہ میں سماع خانہ کی تعمیر کیلئے 15 لاکھ ، مسجد آستانہ شطاریہ دبیر پورہ کی تعمیر کیلئے 5 لاکھ روپئے درگاہ حضرت سید شاہ علی عباس حسین حسینی علم کی خانقاہ کیلئے 5 لاکھ ، درگاہ حضرت سید شاہ رضا صاحب قبلہ مغلپورہ کے مدرسہ اور مسجد کی تعمیر کیلئے 5 لاکھ ، آستانہ شطاریہ دبیر پورہ مسجد کی تزئین نو کیلئے تین لاکھ روپئے، حج ہاؤز کی توسیع کیلئے 10 لاکھ ، اردو اکیڈیمی کیلئے 10 لاکھ ، مکہ مسجد و شاہی مسجد کیلئے 20 لاکھ ،

دائرۃ المعارف کیلئے 10 لاکھ ، مسجد چیونٹی شاہ تین لاکھ، قبرستان مسجد الٰہی 3 لاکھ ، درگاہ حضرت سید شاہ درویش محی الدین ثانی کاروان کی مسجد اور درگاہ کیلئے 5 لاکھ ، قبرستان پنجہ گٹہ میں بورویل کی تنصیب اور واٹر ٹینک کی تعمیر کیلئے 3 لاکھ، درگاہ حضرت برہنا شاہ کی اوقافی اراضی کے تحفظ کیلئے باؤنڈری وال کی تعمیر پر 25 لاکھ ، درگاہ صوفی سید شاہ رحیم الدین حسینی بالا پور کی تعمیر کیلئے 4 لاکھ ، جامع مسجد مشیر آباد کی پہلی منزل کی تعمیر کیلئے 5 لاکھ ، درگاہ یوسفین کے سماع خانہ اور نیاز خانہ کی تعمیر کیلئے 50 لاکھ ، عاشور خانہ بارہ امام آصف نگر کی تعمیر نو کیلئے 4 لاکھ ، درگاہ حضرت رحیم الدین شاہ قادری پرانا پل کی تعمیر کیلئے 3 لاکھ ، جامع مسجد عنبر پیٹ کی توسیع کیلئے 4 لاکھ ، عنبر پیٹ اسمبلی حلقہ میں مختلف عاشور خانوں کی نگہداشت کیلئے 4 لاکھ ، بارگاہ حضرت ابوالفضل عباس دیوان دیوڑھی کیلئے 3 لاکھ ، عاشور خانہ پنجہ شاہ کیلئے 3 لاکھ ، عاشور خانہ بارگاہ فاطمہ میر علم منڈی تین لاکھ اور عاشور خانہ علی اصغر سنکیشور بازار کیلئے 6 لاکھ 50 ہزار روپئے شامل ہیں۔

TOPPOPULARRECENT