Saturday , December 16 2017
Home / ہندوستان / او آر او پی تنازعہ :صدر سے مداخلت کی اپیل

او آر او پی تنازعہ :صدر سے مداخلت کی اپیل

سابق فوجیوں کے مطالبہ کی ہنوز کوئی یکسوئی نہ ہوسکی
نئی دہلی ۔ /29 اگست (سیاست ڈاٹ کام) حکومت نے آج رات کہا کہ اس نے احتجاجی سابق فوجیوں کے ساتھ اختلافات میں نمایاں طور پر کمی لائی ہے لیکن ’ ایک رتبہ ایک وظیفہ‘ کے بارے میں کوئی ٹھوس تیقنات نہیں دیئے ۔حالانکہ سابق فوجیوں نے اس پیچیدہ مسئلہ کی یکسوئی کیلئے صدرجمہوریہ پرنب مکرجی سے مداخلت چاہی ہے ۔ وزیر فینانس ارون جیٹلی نے کہا کہ میں سمجھتا ہوں کہ گزشتہ چند یوم کے دوران اختلاف میں نمایاں طور پر کمی آئی ہے ۔ جس اصول پر او آر او پی قائم ہے ہم اس کے پابند عہد ہیں لیکن یہ بعض اصولوں پر مبنی ہونا چاہئیے ۔ انہوں نے ایسے مطالبات کے خلاف متنبہ کیا جس کی معیشت متحمل نہیں ہوسکتی اور ادعا کیا کہ گزشتہ دوشنبہ کو جو کچھ ہوا شائد ہر ماہ ایسا ہوا کرے گا اگر ہم تمام اقتصادی قواعد اور مالیاتی سوجھ بوجھ سے قطع تعلق کرلیں ۔ دریں اثناء سابق فوجیوں نے اپنے 76 روزہ ایجی ٹیشن کو ایک قدم اور آگے بڑھاتے ہوئے پرنب مکرجی سے یہ پیچیدہ مسئلہ حل کرنے کی اپیل کی اور بیان کیا کہ اگر بھوک ہڑتال کرنے والوں کو کچھ نقصان ہوتا ہے یا کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش آتا ہے تو اس کے لئے وہ اور حکومت ہی ذمہ دار ہوں گے ۔صدرجمہوریہ کو جو مسلح افواج کے سپریم کمانڈر بھی ہیں ، موسومہ مکتوب میں سابق فوجیوں کے یونائیٹیڈ فرنٹ نے کہا کہ ایک سپاہی سے توقع رہتی ہے کہ وہ ملک کے لئے اپنی جان دیتے ہوئے دشمن کو ختم کرتا ہے لیکن آپ کے دور میں سپاہی کی زندگی داؤ پر لگی ہے اور اسے ضائع کیا جارہا ہے کیونکہ اسے اپنے واجبی بقایہ جات سے محروم کیا جارہا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT