Saturday , June 23 2018
Home / شہر کی خبریں / اُردو یونیورسٹی میں عالمی یومِ ماحولیات پر پوسٹر نمائش اور شجر کاری

اُردو یونیورسٹی میں عالمی یومِ ماحولیات پر پوسٹر نمائش اور شجر کاری

پانی کے تحفظ اور پلاسٹک کے استعمال کو کم کرنے پر مقررین کا زور
حیدرآباد، 6 ؍ جون (پریس نوٹ) نیشنل سروس اسکیم (این ایس ایس) سیل ،مولانا آزاد نیشنل اردو یونیورسٹی کی جانب سے کل عالمی یوم ماحولیات کے موقع پر اسکول آف ماس کمیونکیشن اینڈ جرنلزم میں پوسٹر نمائش کا اہتمام کیا گیا۔ اس نمائش میں این ایس ایس والینٹرس کے تیار کردہ پوسٹرس مشاہدے کے لیے رکھے گئے تھے جس میں بطور خاص پانی کے تحفظ پر توجہ دلائی گئی۔ پروفیسر شکیل احمد، پرو وائس چانسلر نے نمائش کے افتتاح کے این ایس ایس سیل کو مبارکباد دی اور کہا کہ ماحولیات کا تحفظ ہمارے لیے فرضِ عین ہے۔ ہمیں اپنے لیے اور اپنی آنے والی نسلوں کے لیے اس پر خصوصی توجہ دینی چاہیے۔ انہوں نے کہا کہ اس سال ہندوستان عالمی یومِ ماحولیات کا میزبان ہے اور اس کا موضوع ’’پلاسٹک آلودگی کا خاتمہ‘‘ ہے۔ اس لیے طلبہ کی ذمہ داری ہے کہ وہ پلاسٹک کی بجائے کھادی یا کاغذ کے بیگ استعمال کریں ۔ جناب انیس اعظمی نے اپنے بچپن کے واقعات سناتے ہوئے کہا کہ قبائل ماحولیات کا زیادہ خیال رکھتے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ انہوں نے ماحولیات پر نظمیں بھی لکھی ہیں تاکہ بچے ماحولیاتی تحفظ کی اہمیت سمجھ سکیںاور وہ اس جانب توجہ دیں۔ ڈاکٹر محمد فریاد نے طلبہ کی پوسٹر سازی کی ستائش کی ۔اس موقع پر نظامت فاصلاتی تعلیم کے ڈاکٹر فضیل ندوی نے کہا کہ مذہب اسلام میں پانی اور کھانے کے اسراف سے منع کیا گیا ہے۔ یہاں تک کہ بہتے دریا پر وضو کرتے وقت بھی پانی کم سے کم استعمال کرنے کی ہدایت دی گئی ہے۔ افسر الٰہی، ڈاکٹر حسین، جناب اکبر علی، خواجہ نجم الدین، عمران ،ڈاکٹر افسر علی راعینی کے علاوہ ڈاکٹر محمد شمس الدین، اسسٹنٹ ریجنل ڈائرکٹر، نظامت داخلہ؛ جناب حبیب احمد نے بھی خطاب کیا۔ جناب بی بھکشاپتی، پروگرام آفیسر، این ایس ایس نے شکریہ ادا کیا۔ کثیر تعداد میں طلبہ، اساتذہ اور غیر تدریسی عملے نے نمائش کا مشاہدہ کیا۔ اس موقع پرپروفیسر شکیل احمد نے شجر کاری بھی کی اور امید ظاہر کی کہ طلبہ یونیورسٹی اور اپنے گردونواح میں شجر کاری مہم کو فروغ دیں گے۔

TOPPOPULARRECENT