Tuesday , September 25 2018
Home / Top Stories / اُناؤ عصمت ریزی مقدمہ ، بی جے پی رکن اسمبلی کیخلاف ایف آئی آر

اُناؤ عصمت ریزی مقدمہ ، بی جے پی رکن اسمبلی کیخلاف ایف آئی آر

گرفتاری کا کوئی فیصلہ نہیں، ملازمین پولیس اور ڈاکٹروں کے خلاف کارروائی کا آغاز

لکھنؤ 12 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) یوپی پولیس نے آج بی جے پی رکن اسمبلی کلدیپ سنگھ سنگر کے خلاف مبینہ ایک نابالغ لڑکی کی اناؤ میں اجتماعی عصمت ریزی کے تعلق سے ایف آئی آر درج کرلیا۔ چند گھنٹے قبل حکومت نے کہا تھا کہ وہ تحقیقات سی بی آئی کے حوالے کردے گی۔ نامور تحقیقاتی محکمہ کے اِس ذمہ داری کو قبول کرنے تک مقامی پولیس تحقیقات جاری رکھے گی لیکن ملزم رکن اسمبلی کی گرفتاری سی بی آئی کی جانب سے کی جائے گی۔ پرنسپال سکریٹری (داخلہ) اروند کمار نے کہاکہ تحقیقات کا ایک مکتوب سی بی آئی کے حوالے کردیا گیا ہے اور مقدمہ میں مکمل شفافیت برتنے کی ہدایت دی گئی ہے۔ محکمہ داخلہ کو رپورٹ پیش کی جائے گی۔ ایک پریس کانفرنس میں انھوں نے کہاکہ قبل ازیں اُناؤ پولیس نے سنگر کے خلاف قانون تعزیرات ہند اور قانون انسداد جنسی جرائم برائے اطفال کی مختلف دفعات کے تحت مقدمہ درج کرلیا گیا ہے۔ ملزم کو اِن دفعات کے مطابق مقدمہ درج کرنے کے فوری بعد گرفتار کرلیا جانا چاہئے۔ پرنسپال سکریٹری (اطلاعات) اویناش اوستھی نے اپنے بیان میں رات دیر گئے کہاکہ مناسب دفعات کے تحت سنگر اور دیگر کے خلاف ازسرنو ایف آئی آر درج کیا جائے گا اور تحقیقات سی بی آئی کے سپرد کردی جائیں گی۔ سوالات کی بوچھار کے دوران کہ آیا سنگر کو گرفتار کیا جائے گا یا مقدمہ درج کیا جائے گا، اُنھوں نے کہاکہ فیصلہ سی بی آئی کرے گی۔ پرنسپال سکریٹری (داخلہ) اور ڈی جی پی او پی سنگھ نے کہاکہ رکن اسمبلی کا نام بیان میں درج نہیں کیا گیا ہے جو قبل ازیں مجسٹریٹ کی جانب سے جاری کیا گیا ہے کیوں کہ نابالغ نے کہاکہ اُسے اپنی جان کا خوف ہے۔ کمار نے اِن الزامات کو مسترد کردیا کہ پولیس رکن اسمبلی کو تحفظ فراہم کرنے کی کوشش کررہی ہے۔ حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ 17 سالہ لڑکی کے ارکان خاندان کو صیانت فراہم کی جائے۔ اُنھوں نے کہاکہ کسی کو بھی خاطی نہیں پایا گیا۔ خاطی کو بخشا نہیں جائے گا اور کارروائی پہلے ہی بعض ملازمین پولیس اور ڈاکٹروں کے خلاف لاپرواہی اور غفلت کے الزامات میں شروع کردی گئی ہے۔ دو ڈاکٹروں کو معطل کردیا گیا ہے اور تادیبی کارروائی کا دیگر کے خلاف آغاز کردیا گیا ہے۔ متاثرہ کے والد کی مناسب طبی دیکھ بھال اور علاج کیا گیا تھا۔ بعدازاں اُسے عدالت کی تحویل میں دے دیا گیا۔ وہ ضلع ہسپتال میں زیرعلاج تھا۔ صفی پور سرکل آفیسر کنور بہادر سنگھ کو بھی متاثرہ کی بار بار شکایتوں سے نمٹنے میں لاپرواہی کے الزام میں معطل کردیا گیا ہے۔

 

 

TOPPOPULARRECENT