Friday , November 24 2017
Home / شہر کی خبریں / آبپاشی پراجکٹس پر کانگریس کو اعزاز کے ڈر سے ڈیزائن میں تبدیلی

آبپاشی پراجکٹس پر کانگریس کو اعزاز کے ڈر سے ڈیزائن میں تبدیلی

کئی پراجکٹس التواء کا شکار، تلنگانہ پردیش کانگریس کا بیان
حیدرآباد /12 اگست (سیاست نیوز) تلنگانہ پردیش کانگریس نے کمیشن کی خاطر آبپاشی پراجکٹس کے ڈیزائن تبدیل کرنے اور کانگریس کو اعزاز ملنے کے ڈر سے کئی آبپاشی پراجکٹس کی تعمیر کو زیر التوا رکھنے کا ٹی آر ایس حکومت پر الزام عائد کیا۔ آج گاندھی بھون میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کانگریس ترجمان شرون کمار نے کہا کہ متحدہ آندھرا پردیش میں پانی، فنڈس اور تقررات میں تلنگانہ کے ساتھ ناانصافی ہونے پر تلنگانہ کے عوام نے علحدہ ریاست کی تحریک میں حصہ لیا، جس کی وجہ سے علحدہ تلنگانہ ریاست کا قیام عمل میں آیا۔ جب کہ کانگریس حکومت نے تلنگانہ میں بڑے پیمانے پر آبپاشی پراجکٹس تعمیر کئے اور اس پر کروڑہا روپئے خرچ کئے، جن میں سے کئی پراجکٹس تکمیل کے قریب ہیں اور بعض کی تعمیر ابھی نامکمل ہے، تاہم ٹی آر ایس حکومت ان آبپاشی پراجکٹس کی تعمیرات کے لئے سنجیدہ نہیں ہے۔ انھوں نے کہا کہ تلنگانہ حکومت ان پراجکٹس سے کمیشن وصول کرنے کے لئے ان کے ڈیزائن تبدیل کر رہی ہے یا ان کی تعمیر کو زیر التواء رکھ رہی ہے۔ انھوں نے کہا کہ ضلع کریم نگر میں تعمیر ہونے والے ذخیرہ آب کی تعمیر کو منسوخ کرنے ٹی آر ایس حکومت سازش کر رہی ہے اور اپنے حامی زمیندار کی 140 ایکڑ اراضی بچانے کے لئے غریب کسانوں کے ساتھ ناانصافی کر رہی ہے۔ انھوں نے کہا کہ کانگریس حکومت نے 2007ء کے دوران 2.20 لاکھ ایکڑ اراضی سیراب کرنے کے لئے یہ فیصلہ کیا تھا، تاہم ٹی آر ایس حکومت اپنے حامیوں کو فائدہ پہنچانے کے لئے غریب عوام کو نقصان پہنچا رہی ہے، جس کی کانگریس پارٹی سخت مذمت کرتی ہے۔ انھوں نے کہا کہ اس فیصلہ کے خلاف کانگریس نے آج احتجاج کیا ہے، جس میں صدر تلنگانہ پردیش کانگریس اتم کمار ریڈی نے بھی شرکت کی۔

TOPPOPULARRECENT