Tuesday , September 25 2018
Home / شہر کی خبریں / آندھرا پردیش کو خصوصی موقف دینے کا وعدہ پورا کرنے پر زور

آندھرا پردیش کو خصوصی موقف دینے کا وعدہ پورا کرنے پر زور

بی جے پی اور تلگودیشم پر اپوزیشن کی تنقید‘کانگریس اپنا کھویا ہوا وقار حاصل کرنے کوشاں

بی جے پی اور تلگودیشم پر اپوزیشن کی تنقید‘کانگریس اپنا کھویا ہوا وقار حاصل کرنے کوشاں
حیدرآباد 19 فبروری ( پی ٹی آئی) آندھرا پردیش کی تقسیم کے دوران گذشتہ سال خصوصی زمرے کا موقف دینے اور دیگر وعدے کئے گئے تھے ‘ان وعدوں کی عدم تکمیل پر اب یہ گرما گرم سیاسی مسئلہ بنا ہوا ہے کانگریس کے بشمول اپوزیشن پارٹیوں نے حکمران بی جے پی اور تلگودیشم اتحاد پر شدید تنقید کی ہے ۔ کانگریس جو لوک سبھا اور اسمبلی انتخابات میں بدترین ہزیمت کے بعد آندھرا پردیش میں اپنی قسمت کے احیاء کیلئے کوشاں ہیں آندھرا پردیش کو تقسیم سے جو نقصان ہوا ہے اس کی پابجائی کیلئے مرکز پر دباؤ ڈالنے دستخطی مہم شروع کی ہے ۔ پارٹی ذرائع نے کہا ہے کہ کانگریس دستخطی مہم کے ذریعہ مرکز پر دباؤ ڈالے گی اور آندھرا پردیش کو خصوصی زمرے کا موقف دینے کا مطالبہ کیا جائے گا ۔ آندھرا پردیش کانگریس کمیٹی صدر این رگھویرا ریڈی نے کل صدر کانگریس سونیا گاندھی اور سابق وزیر اعظم منموہن سنگھ سے ملاقات کی اور اس مسئلہ پر تبادلہ خیال کیا ۔ کانگریس نے پارلیمنٹ کے دونوںایوان میں اس مسئلہ کو اٹھانے کا فیصلہ کیا ہے ۔ آندھرا پردیش کو تقسیم کے بعد شدید خسارے کا سامنا ہے۔ تلنگانہ کی تشکیل کے بعد حیدرآباد سے محروم ہونے کے باعث آندھرا پردیش کو 16 ہزار کروڑ کا نقصان ہورہا ہے ۔مرکز نے خصوصی زمرے کے موقف کے تحت خصوصی ترقیاتی پیاکیج کا وعدہ کیا تھا اور صنعتکاروں کیلئے ٹیکس رعایتی دینے کا اعلان کیا تھالیکن ان میں سے کسی پر عمل نہیں کیا گیا ۔ کانگریس کی تنقید کا جواب دیتے ہوئے آندھرا پردیش بی جے پی ترجمان سوکھدیش رام بوتلا نے کہا کہ مرکز نے حال ہی میں ریاست کیلئے 850 کروڑ کے پیاکیج کا اعلان کیا ہے ۔ 10 قومی سطح کے اداروں کو قائم کرنے کا اعلان کیا گیا ہے ۔ وجئے واڑہ اور تروپتی کیلئے انٹر نیشنل ایر پورٹ بنانے کے علاوہ راجمندری ایر پورٹ میں لینڈنگ کی سہولتیں فراہم کی جائیں گی۔ انہوں نے کہا کہ کانگریس اور دیگر پارٹیوں کو سیاسی مسئلہ بنانے کی ضرورت نہیں ہے ۔

TOPPOPULARRECENT