Tuesday , December 19 2017
Home / مذہبی صفحہ / اپنے گھروں کو قبرستان مت بناؤ

اپنے گھروں کو قبرستان مت بناؤ

مرسل : ابوزہیر نظامی

رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ و سلم نے ارشاد فرمایا ہے کہ ’’ سورہ بقرہ پڑھا کرو کہ اس کا پڑھنا موجب برکت ہے اور اس کا چھوڑنا حسرت ہے اور جادوگر اس کے مقابلہ کی تاب نہیں لاسکتے‘‘( بروایت صحیح مسلم)۔
سورہ بقرہ کی فضیلت کے بارے میں ایک اور روایت میں آیا ہے کہ اﷲ تعالیٰ کا جو بندہ اس سورۃ کو ایک رکعت میں سجدہ سے قبل پڑھے گا اور اس کے بعد کوئی دعامانگے گا وہ ضرور قبول ہوگی یہ سورہ قریب ہے کہ کل قرآن کے شمار میں آجائے ۔ حضرت ابوہریرہؓ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ و آلہ و سلم نے ایک لشکر بھیجا جس میں گنتی کے لوگ تھے آپ نے ان سے قرآن پڑھوایا جتنا جس کو یاد تھا سب نے پڑھا تب آپ نے ایک ایسے شخص کی جانب جو ان سب میں نوعمر تھا متوجہ ہوکر فرمایا تم کو بھی کچھ قرآن یاد ہے انھوں نے عرض کی کہ جی ہاں فلاں فلاں سورتیں اور سورہ بقرہ یاد ہے ۔ آپ نے فرمایا ’’ واہ تم کو سورہ بقرہ بھی یاد ہے ‘‘۔ پھر آپ نے فرمایا ’’جاؤ تم اس لشکر کے سردار ہو اس لئے کہ یہ قریب تھا کہ کل دین کے شمار میں آجائے ‘‘۔
( ترمذی شریف )
حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ رسول اﷲ صلی اﷲ علیہ و آلہ و سلم نے فرمایا کہ ’’ تم لوگ اپنے گھروں کو قبرستان مت بناؤ ، اس گھر سے شیطان بھاگتا ہے جس میں سورہ بقرہ پڑھی جاتی ہو ‘‘ (مسلم و ترمذی)۔
حضرت ابن مسعود رضی اﷲ عنہ سے مروی ہے کہ حضور انور صلی اﷲ علیہ و آلہ و سلم  نے ارشاد فرمایا کہ ’’ جو شخص سورہ بقرہ کے آخر کی دو آیتیں رات کو پڑھے گا تو اس کو کافی ہیں ( یعنی شیطان کے فریب یا آفتوں سے محفوظ رہنے کے لئے کافی ہیں)۔ (صحاح ستہ )
حضرت نعمان بن بشیر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ فرمایا رسول اکرم صلی اﷲعلیہ و سلم نے ’’اﷲ تعالیٰ نے آسمان و زمین کے پیدا کرنے سے دو ہزار برس قبل ایک کتاب لکھی جس میں سے دو آیتیں نازل فرمائیں ( دو آیتوںسے مراد آیتہ الکرسی اور امن الرسول ہیں) جن کے ساتھ سورہ بقرہ کو ختم کیا کوئی مکان ایسا نہیں ہے کہ جس میں یہ دونوں آیتیں تین بار پڑھی جائیں اور شیطان اس کے نزدیک بھی آجائے ( یعنی شیطان ایسے گھر کے قریب ہی نہیں آسکتا ) (ترمذی)

TOPPOPULARRECENT