Sunday , September 23 2018
Home / شہر کی خبریں / اپوزیشن لیڈر کا تقرر اسپیکر لوک سبھا کے فیصلے پر منحصر

اپوزیشن لیڈر کا تقرر اسپیکر لوک سبھا کے فیصلے پر منحصر

کانگریس بدترین شکست کے باوجود شکست قبول کرنے کے قابل نہیں:وینکیا نائیڈو

کانگریس بدترین شکست کے باوجود شکست قبول کرنے کے قابل نہیں:وینکیا نائیڈو
حیدرآباد 6 جولائی ( پی ٹی آئی )مرکزی وزیر ایم وینکیا نائیڈو نے اپنے تاثر کا اظہار کیا ہے کہ قائد اپوزیشن کا موقف دینے کا مسئلہ اسپیکر کے زیر غور ہے اور ہر کسی کو اسپیکر کے فیصلہ کی پابندی کرنا چاہئے ۔ وینکیا نائیڈو نے کہا کہ ’’نہرو جی کے دور میں کوئی اپوزیشن لیڈر نہیںتھا اندرا گاندھی کے اقتدار کے دوران کوئی اپوزیشن لیڈر نہیں تھا حتی کہ راجیو گاندھی کی حکمرانی کے وقت بھی ایوان میں کوئی اپوزیشن لیڈر نہیں تھا‘‘۔ وینکیا نائیڈو نے آج یہاں بی جے پی کے دفتر میں جن سنگھ کے بانی شام پرشاد مکرجی کے یوم پیدائش کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’ بی جے پی نے اپنی حکمرانی کے دوران اپوزیشن لیڈر کا موقف دیا۔ لیکن وہ (کانگریس) کہتے ہیں کہ یہ عہدہ کیسے دیا نہیں جاسکتا جبکہ دستور اس کی اجازت نہیں دیتا۔ وہ (کانگریس) کہتے ہیں کہ حالات جب کچھ اور تھے اور آج کے حالات پہلے سے مختلف ہیں‘‘۔ مرکزی وزیر پارلیمانی امور وینکیا نائیڈو نے کہا کہ ’’وہ (کانگریس) کہتے ہیں کہ قائد اپوزیشن کا موقف دینے کے معاملہ میں ہمیں فراخدل ہونا چاہئے لیکن یہ عوامی فیصلہ ہے اور یہ مسئلہ دستور سے تعلق رکھتا ہے ۔ اسپیکر کے فیصلہ کی پابندی کی جانی چاہئے اور دیکھتے ہیں اسپیکر کیا فیصلہ کرتے ہیں ۔ اس کی چند روایات ہیں قواعد اور ضابطے ہیں ماضی کی مثالیں ہیں اور اسپیکر کی ہدایات ہیں۔ ہمارے سامنے یہ سب کچھ ہیں اور ہر کسی کو چاہئے کہ وہ ان باتوں کو ملحوظ رکھیں‘‘۔ کانگریس کے ایک سینئر لیڈر شکیل احمد کے مبینہ تبصروں کے کہ قائد اپوزیشن کا عہدہ ہمارا (کانگریس کا) حق ہے اور اگر کانگریس کو یہ عہدہ نہیں دیا جاتا ہے تو دیکھتے ہیں کہ پارلیمنٹ نہیں چل سکے گا۔ وینکیا نائیڈو نے الزام عائد کیا کہ کانگریس اپنی شکست قبول کرنے کے قابل نہیںرہی ہے ۔ وزیر پارلیمانی امور نے کہا ’’تو پھر ٹھیک ہے آپ دیکھئے ۔ ہم جانتے ہیں کہ ایوان کو کس طرح چلایا جاتا ہے ۔ اس مسئلہ پر عوامی بحث مباحثے کی کوئی ضرورت نہیں ہے ۔ کانگریس اپنی شکست قبول نہیں کرپارہی ہے ۔ وہ بدترین شکست کے باوجود بھی اپنی شکست قبول کرنے کے قابل نہیں رہے ہم یہ بات اب ان کی عقل و دانش پر چھوڑتے ہیں‘‘۔ بی جے پی کے سینئر لیڈر وینکیا نائیڈو نے کہا کہ ’’عوام نے جو کچھ فیصلہ کرنا تھا وہ فیصلہ کردیئے ہیں ہم امید کرتے ہیں کہ کانگریس اور ہم تمام مل جھل کر پارلیمنٹ چلائیں گے اور عوام کی بھلائی کیلئے کام کریں گے نیز ملک کی ترقی کی مساعی کی جائے گی‘‘۔

TOPPOPULARRECENT