Wednesday , December 13 2017
Home / شہر کی خبریں / اپوزیشن پارٹیاں کے سی آر سے خائف

اپوزیشن پارٹیاں کے سی آر سے خائف

مقابلہ کی ہمت نہیں ، سنگارینی کالریز ورکرس یونین انتخابات کے لیے متحد
حیدرآباد ۔ 19 ۔ ستمبر : ( سیاست نیوز ) : تلنگانہ راشٹرا سمیتی کے رکن پارلیمان مسٹر بی سمن نے سنگارینی کالریز ورکرس یونین انتخابات کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ چیف منسٹر تلنگانہ مسٹر کے چندر شیکھر راؤ سے مقابلہ کرنے کی ہمت نہ رکھتے ہوئے سنگارینی کالریز کمپنی ورکرس یونین انتخابات کے معاملہ میں صدر تلگو دیشم پارٹی و چیف منسٹر آندھرا پردیش مسٹر این چندرا بابو نائیڈو کی ایماء پر تلگو دیشم ، کانگریس اور بائیں بازو جماعتوں کا اتحاد ممکن ہوسکا اور اس اتحاد کے ذریعہ سنگارینی کالریز کمپنی ورکرس یونین کے انتخابات میں متحدہ جدوجہد کرتے ہوئے اندھا دھند رقومات خرچ کررہے ہیں ۔ مسٹر سمن نے اخباری نمائندوں سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ تینوں اتحادی جماعتوں نے انتخابات میں اپنی کامیابی کو یقینی بنانے کے لیے ورکروں کو مختلف طریقوں کے ذریعہ ترغیبات دینے کی کوشش کررہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ ان انتخابات کے لیے آندھرا پردیش سے حاصل ہونے والی بھاری رقومات کے ذریعہ مسٹر ریونت ریڈی سنگارینی کے علاقوں میں جلسے منعقد کر کے اے آئی ٹی یو سی کے حق میں ووٹ دینے کی انتخابی مہم چلا رہے ہیں اور ٹی بی جی کے ایس کو ناکام بناتے ہوئے ریاست میں تلنگانہ راشٹرا سمیتی کو کمزور بنانے کی سازشیں کرنے میں مصروف دکھائی دے رہے ہیں ۔ رکن پارلیمنٹ ٹی ار ایس نے کہا کہ سنگارینی کالریز انتخاب میں تینوں جماعتوں کے اتحاد سے کی جانے والی کوئی کوششیں بھی کامیاب نہیں ہوسکیں گی کیوں کہ سال 2014 میں منعقدہ انتخابات تلنگانہ راشٹرا سمیتی کی شاندار کامیابی کے بعد ٹی آر ایس کے ساتھ ٹکرانے میں کوئی بھی جماعت کے لیے ممکن نہیں ہوسکا ۔ جس کے پیش نظر اب اس انتخاب کے لیے تینوں جماعتوں کا اتحادی محاذ بناتے ہوئے اے آئی ٹی یو سی کی تائید میں انتخابی مہم چلا رہے ہیں لیکن یہ جماعتیں یہاں پر بھی اپنی ناکامی سے ہی دوچار ہوں گی ۔ مسٹر بی سمن نے سنگارینی کالریز کمپنی ورکرس سے اپیل کی کہ وہ کسی جماعت کے بہکاؤے میں نہ آتے ہوئے تلنگانہ راشٹرا سمیتی کی محاذی یونین کو اپنا ووٹ دے کر ٹی آر ایس کو مضبوط و مستحکم بنانے کی پر زور اپیل کی ۔۔

TOPPOPULARRECENT