Thursday , December 13 2018

اپٹکو کو اقلیتی مالیاتی کارپوریشن سے کروڑہا روپئے باقی

کارپوریشن کے عہدیداروں کی مداخلت ، حصہ داری کی عدم ادائیگی پر بل مسدود

کارپوریشن کے عہدیداروں کی مداخلت ، حصہ داری کی عدم ادائیگی پر بل مسدود
حیدرآباد 9 فبروری (سیاست نیوز) اقلیتی فینانس کارپوریشن کی جانب سے گذشتہ سال ٹریننگ اینڈ ایمپلائمنٹ اسکیم کے تحت مختلف پیشہ ورانہ کورسس میں ٹریننگ دی گئی لیکن ٹریننگ کی تکمیل کے چھ ماہ گذرنے کے باجود سرکاری ادارہ اپٹکو کو ابھی تک رقم ادا نہیں کی گئی۔ بتایا جاتا ہے کہ اس اسکیم کے تحت تلنگانہ میں 3731 اور آندھرا پردیش کے 13 اضلاع میں 10256 اقلیتی امیدواروں کو مختلف کورسس میں ٹریننگ دی گئی ۔ ٹریننگ کی تکمیل کے بعد اقلیتی فینانس کارپوریشن کو 4 کروڑ 21 لاکھ روپئے جاری کرنے تھے جو مشترکہ ریاست کے 23 اضلاع میں دی گئی ٹریننگ کے بقایا جات ہیں۔ بتایا جاتا ہے کہ اقلیتی فینانس کارپوریشن کے بورڈ آف ڈائرکٹرس نے رقم کی ادائیگی پر اعتراض کیا اور ٹریننگ کے بارے میں جانچ کرنے کا فیصلہ کیا۔ کارپوریشن کے فیصلہ کے مطابق بورڈ آف ڈائرکٹرس کو مختلف اضلاع میں جانچ کی ذمہ داری دی گئی ۔ بتایا جاتا ہے کہ تمام اضلاع سے ٹریننگ کے حق میں رپورٹ وصول ہوئی لیکن کارپوریشن کی جانب سے رقم کی اجرائی کے سلسلہ میں قرار داد منظور نہیں کی جاسکی۔ حکومت نے بورڈ آف ڈائرکٹرس کے اجلاس کے انعقاد کی اجازت نہیں دی جس کا خمیازہ سرکاری ادارہ اپٹکو کو بھگتنا پڑرہا ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ بورڈ آف ڈائرکٹرس کے بعض ارکان نے مبینہ طور پر اضلاع میں اپٹکو سے رقم میں حصہ داری کا مطالبہ کیا اور عدم اجرائی کی صورت میں رقم روکنے کی دھمکی دی۔ اب جبکہ اقلیتی فینانس کارپوریشن بقایہ جات کی اجرائی کیلئے تیار ہے لیکن حکومت اجازت دینے سے گریز کررہی ہے۔ کارپوریشن کی جانب سے اس سلسلہ میں حکومت سے بارہا نمائندگی کی گئی لیکن دونوں حکومتوں نے ابھی تک رقم جاری کرنے کی اجازت نہیں دی۔ اپٹکو کے عہدیدار رقم کی اجرائی کے سلسلہ میں کارپوریشن کے چکر کاٹ رہے ہیں۔ اقلیتی فینانس کارپوریشن جاریہ سال اس اسکیم کا آغاز نہیں کرسکتا کیونکہ اسکیم کے آغاز کیلئے درکار بجٹ موجود نہیں ہے۔ عہدیداروں کا کہنا ہے ٹریننگ اینڈ ایمپلائمنٹ اسکیم کے آغاز کیلئے کم از کم دو کروڑ روپئے درکار ہیں جبکہ کارپوریشن کے پاس صرف 45 لاکھ روپئے موجود ہے۔

TOPPOPULARRECENT