Thursday , July 19 2018
Home / ہندوستان / اگر این ڈی اے خالص ہندوخون ہے تو اسے ساورکر کو بھار ت رتن ایوارڈ دینا چاہیئے

اگر این ڈی اے خالص ہندوخون ہے تو اسے ساورکر کو بھار ت رتن ایوارڈ دینا چاہیئے

ممبئی ۔13مئی ( سیاست ڈاٹ کام ) بی جے پی کی حلیف پارٹی شیوسینا کے رکن پارلیمنٹ سنجے راوت نے آج کہا کہ اگر بی جے پی زیرقیادت این ڈی اے کا جو مرکز میں برسراقتدار ہے ’’خالص ہندو خون ‘‘ ہے تو اسے چاہیئے کہ ویرساورکر کو بھارت رتن کا اعزازعطا کرے ۔این ڈی اے حکومت نے بھارتیہ جن سنگھ کے بانی دین دیال اپادھیائے کی تصویریں اپنے تمام دفاتر اور عمارتوں میں ملک گیر سطح پر لگارکھی ہیں لیکن ان میں ساورکر کی تصویر نہیں ہے۔ شیوسینا کے قائد نے کہا کہ موجودہ حکومت کو بھارت رتن برائے ساورکر کا اعلان کرنا چاہیئے کہ وہ سیاست میں صرف ہندوتوا پر عمل پیرا تھے ۔ راوت نے کہا کہ اپنے مضمون ’’اتسو‘‘ میں جو سامنا کے اتوار کے اڈیشن میں سپلیمنٹ میں شائع ہوچکا ہے کہہ چکے ہیں کہ شیوسینا برسراقتدار قومی جمہوری اتحاد (این ڈی اے ) کی حلیف ہے ۔ راوت نے کہا کہ وہ مطالبہ کرتے ہیں کہ ساورکر کی تصویر چند تنظیموں کے دفتر سے ہٹادی جائے ۔ اس اقدام کے نتیجہ میں ایک تنازعہ اُٹھ کھڑا ہوگا جیسا کہ بانی پاکستانی محمد علی جناح کی تصویر علیگڑھ مسلم یونیورسٹی میں آویزاں ہونے پر اُٹھ کھڑا ہوا ہے اور یہ بجائے خود ہندو توا کے علمبردار کی بالواسطہ طور پر فتح ہوگی ۔ انہوں نے کہا کہ انہیں یہ سوچ کر صدمہ پہنچتا ہے کہ صرف جناح کی تصویر علیگڑھ مسلم یونیورسٹی کے ہال سے علحدہ کرنے کا مطالبہ چند مسلم تنظیموں کی جانب سے بھی ہورہا ہے لیکن ہندو تنظیمیں ساورکر کی تصویریں علحدہ کرنے کا مطالبہ نہیں کرتیں ‘ حالانکہ وہ ہندو توا پر عمل پیرا نہیں ہے لیکن ساورکر کی تصویر ان کے دفاتر میں آویزاں ہیں ۔ جناح کی تصویر کے مسئلہ پر تنازعہ کا حوالہ دیتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس کا مقصد 2019ء کے عام انتخابات کیلئے ووٹوں کی صف بندی کے سوا اور کچھ نہیں ہے ۔

TOPPOPULARRECENT