Wednesday , September 19 2018
Home / Top Stories / اگر ہے ہمت تو آگے آنے کا چیلنج : محمد علی شبیر

اگر ہے ہمت تو آگے آنے کا چیلنج : محمد علی شبیر

راج شیکھر ریڈی کے دور میں 2000 کروڑ سے ترقی ہوئی
چارمینار کے دامن میں رکشہ راں اب بھی رکشہ چلا رہا ہے
مجلس ‘تحفظات کی مخالف تھی
فرقہ پرست سیاست آپ کا وطیرہ
دارالسلام کانگریس نے دلایا
حیدرآباد ۔ 3 ۔ مارچ : ( سیاست نیوز ) : مجلس ہر وقت اچھا کام اپنے سر لیتی آئی ہے اور شاید یہی کہتے ہوئے اپنے رائے دہندوں کو بے وقوف بناتی رہے گی ۔ محمد علی شبیر نے آج کہا کہ مسلمانوں کی تحفظات سے بہتری ہونے کے امکانات کو بھی مجلس نے سبوتاج کرنے کی کوشش کی تھی تاہم جب کامیابی ملی تو سہرا اپنے سر باندھ رہے ہیں ۔ دراصل مجلس ہر وقت تحفظات کی مخالف رہی ہے میں دعوے کے ساتھ اس بات کا چیلنج کرتا ہوں اور اگر ہمت ہے تو اسد الدین اویسی یا اکبر اویسی ہو یا اور کوئی ہو چارمینار کے دامن میں یا اور کوئی عوامی جگہ پر کھلے مباحث کے لیے آگے آئیں ۔ 2000 کروڑ کا پیاکیج کس نے دیا؟ کانگریس دور میں پرانے شہر کی ترقی ہوئی اور اس کے نتائج بھی سامنے ہیں ۔ آج آپ لوگ جس آٹے سے اپنی روٹی گن رہے ہیں وہ آٹا کانگریس کے دور میں دیا گیا تھا ۔ پرانے شہر کی ترقی پر بھی میں آپ کو چیلنج کرتا ہوں ، ہے ہمت تو اس کو قبول کریں ! محمد علی شبیر نے کہا کہ صرف فرقہ پرستی اور مسلمانوں کو بی جے پی سے ڈرا کر یا پھر اسلام کو خطرہ میں بتایا کر ووٹ حاصل کرنے والے آج کانگریس کے سیکولر ہونے پر سوال کررہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ آج آپ پر بی جے پی کیلئے کام کرنے کا الزام ہے اور یہ صرف حیدرآباد یا تلنگانہ میں نہیں بلکہ سارے ملک میں اور تقریبا تمام سیاسی پارٹیاں یہ ہی کہہ رہی ہیں کہ آپ بی جے پی کے آلہ کار ہیں ۔ محمد علی شبیر نے سوال کیا کہ مرحوم صدر کو گھر اور دارالسلام کس نے دلایا یا جب کون سی حکومت ان کیلئے راستہ مہیا کی یاد کرنے کی قیادت سے خواہش کی۔ شبیر علی نے کہا کہ چارمینار پر مسجد ہے اس کا قائدین کو علم ہے یا نہیں یہ بھی دریافت کرنا پڑے گا اور 60 سال سے نسل در نسل نمائندگی کرنے والے کروڑوں کی گاڑیوں میں سفر کرتے ہیں جب کہ ووٹ ڈالنے والے آج بھی کسمپرسی کی زندگی گذار رہے ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT