Tuesday , December 11 2018

ایتھوپیائی وزیراعظم کی ریالی میں دھماکہ ، ایک ہلاک

وزیراعظم ابی احمد کے خطاب کے بعد افراتفری اور دہشت
دھماکہ کے ذمہ داروں کو بخشا نہیں جائے گا
83 افراد زخمی ، کسی ہلاکت کی توثیق نہیں ہوئی
عدیس ابابا ۔23 جون ۔(سیاست ڈاٹ کام) ایتھوپیا کے نئے وزیراعظم ابی احمد کی دارالحکومت میں ترتیب دی گئی پہلی ریالی کے دوران ہوئے ایک دھماکہ میں متعدد افراد کے ہلاک ہونے کا اندیشہ ہے ۔ اس ریالی میں ہزاروں افراد نے شرکت کی تھی ۔ میڈیا کی اطلاع کے مطابق ابی احمد نے اپنی تقریر کا اختتام کیا ہی تھا کہ اچانک سارا علاقہ دھماکے سے گونج اُٹھا جس کے بعد وہاں موجود افراد میں دہشت اور افراتفری پھیل گئی اور وہ شہ نشین کی جانب دوڑنے لگے جبکہ وزیراعظم وہاں سے انتہائی سرعت کے ساتھ بحفاظت روانہ ہوچکے تھے۔ دھماکہ کی وجوہات اور ہلاکتوں سے متعلق دیگر تفصیلات فوری طورپر دستیاب نہ ہوسکی ۔ یاد رہے کہ ماہ اپریل میں ملک کے جلیل القدر عہدہ پر فائز ہونے کے بعد ابی احمد کا یہ پہلا عوامی خطاب تھا حالانکہ قبل ازیں انھوں نے صوبائی علاقوں میں کئی خطابات کئے ۔ سرکاری ٹیلیویژن پر بعد ازاں انھوں نے کہا کہ دھماکے ایسے شرپسند عناصر نے کروائے ہیں جو اس تاریخی ریالی کو ناکام کرنا چاہتے تھے۔ ابی احمد نے البتہ اُن کے نام نہیں بتائے ۔ صرف اتنا کہا کہ ایسا کرنے والے دراصل امن کے دشمن ہیں۔ ان عناصر نے ماضی میں بھی تخریبی کارروائیاں انجام دی تھیں اور اپنے مقصد میں کامیاب نہیں ہوئے تھے اور آئندہ بھی وہ اپنے مقصد میں کامیاب نہیں ہوں گے ۔ پولیس اور ہاسپٹل ذرائع سے ملنے والی رپورٹ کے مطابق کم وبیش 83 افراد زخمی بتائے گئے ہیں۔ بہرحال وزیراعظم کے چیف آف اسٹاف فٹسم آریگا نے صرف ایک ہلاکت کی توثیق کی ہے ۔ 83 زخمیوں کے منجملہ چھ کی حالت تشویشناک بتائی گئی ہے ۔

وزیراعظم نے کہاکہ جس نے بھی یہ نفرت انگیز حرکت کی ہے اُن کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی ۔ میڈیا کی اطلاع کے مطابق دھماکہ وزیراعظم کی شہ نشین کی دائیں جانب ہوا اور وہاں تھوڑی دیر کیلئے سیاہ دھواں پھیل گیا ۔ اُسی دوران زائد از 100 افراد شہ نشین کی جانب بڑھے اور انھوں نے مختلف اشیاء پولیس کی جانب پھینکنی شروع کردیں اور ’’ووین مردہ باد‘‘ اور ’’ووین چور ہے ‘‘ کے نعرے لگائے گئے ۔ پولیس نے اُن مظاہرین کو منتشر کرنے آنسو گیس کا استعمال کیا جبکہ دو مرد اور دو خواتین کو دھماکہ میں ملوث ہونے کے شبہ میں گرفتار کیا گیا ۔ یہاں اس بات کا تذکرہ ضروری ہے کہ گزشتہ تین ماہ کے دوران ابی احمد نے ملک میں کافی تبدیلیاں کی ہیں جن میں سکیورٹی سرویسیس میں ضروری ترمیمات ، ناراض قائدین کی جیل سے رہائی ، ملک کی معیشت کو دوام بخشنا اور تقریباً دو دہوں سے جاری حریف ایری ٹریا کے ساتھ مفاہمت کے حالات پیدا کرنا شامل ہے۔ ابی احمد نے کہا کہ ایتھوپیا ایک بار پھر عروج پر ہوگا ۔ ہمارے عزائم کو سرد کرنے کی کوشش کرنے والے خود ’’سرد‘‘ ہوجائیں گے ۔ ہمارے ملک کے اہم اقدار میں محبت ، اخوت ، اتحاد اور سب کو ساتھ لیکر چلنا شامل ہے ۔ عوام کی اکثریت اپنے وزیراعظم سے یہی توقع کرتی ہے کہ وہ ملک کو خوشحالی اور امن کی جانب لے جائے لیکن ’’بھیڑوں کے ریوڑ میں چند بھیڑیے‘‘ بھی شامل ہیں جو اپنے ناپاک ارادوں سے باز نہیں آتے ۔ ایتھوپیا میں آج جتنی بڑی ریالی نکالی گئی وہ شاذ و نادر ہی نکالی جاتی ہے ۔

TOPPOPULARRECENT