Monday , June 18 2018
Home / کھیل کی خبریں / ایتھوپیا کے اڈولہ اور کینیا کی کپلاگت دہلی ہاف مراتھن فاتح

ایتھوپیا کے اڈولہ اور کینیا کی کپلاگت دہلی ہاف مراتھن فاتح

نئی دہلی 23 نومبر ( سیاست ڈاٹ کام ) ایتھوپیا کے گوئے اڈولہ نے دہلی ائرٹیل دہلی ہاف مراتھن جیت لی ہے جبکہ خواتین کے زمرہ میں کینیا کی فلورینس کپلاگت پہلی خاتون اتھیلیٹ بن گئیں جنہوں نے اپنے خطاب کا دفاع کیا ہے ۔ ہندوستانیوں میں مردوں کے زمرہ میں سریش کمار نے ایک گھنٹہ چار منٹ اور 38 سکنڈ میں یہ فاصلہ طئے جبکہ نتیندر سنگھ راوت نے ایک گھنٹ

نئی دہلی 23 نومبر ( سیاست ڈاٹ کام ) ایتھوپیا کے گوئے اڈولہ نے دہلی ائرٹیل دہلی ہاف مراتھن جیت لی ہے جبکہ خواتین کے زمرہ میں کینیا کی فلورینس کپلاگت پہلی خاتون اتھیلیٹ بن گئیں جنہوں نے اپنے خطاب کا دفاع کیا ہے ۔ ہندوستانیوں میں مردوں کے زمرہ میں سریش کمار نے ایک گھنٹہ چار منٹ اور 38 سکنڈ میں یہ فاصلہ طئے جبکہ نتیندر سنگھ راوت نے ایک گھنٹہ چار منٹ اور 54 سکنڈ میں یہ دوری طئے کرتے ہوئے دوسرا مقام حاصل کیا ۔ ایک گھنٹہ چار منٹ اور 56 سکنڈ کے ساتھ کھیتا رام تیسرے نمبر پر رہے ۔ ہندوستانی خواتین میں پریجا سریدھرن نے اپنے خطاب کا کامیاب دفاع کیا ۔ انہوں نے ایک گھنٹہ 19 منٹ اور 3 سکنڈ میں یہ دوری طئے کی اور پہلا مقام حاصل کیا جبکہ مونیکا اتھارے نے ایک گھنٹہ 19 منٹ اور 12 سکنڈ کے ساتھ دوسرا اور سدھا سنگھ نے ایک گھنٹہ 19 منٹ اور 21 سکنڈ کے ساتھ تیسرا مقام حاصل کیا ۔ گوئے اڈولہ نے دہلی ہاف مراتھن میں بہترین مظاہرہ کا ریکارڈ توڑ دیا اور خطاب اپنے نام کرلیا ۔ انہوں نے 59 منٹ اور 6 سکنڈ میں یہ دوری طئے کرتے ہوئے پہلا مقام حاصل کیا ۔

انہوں نے گذشتہ سال ایتھوپیا ہی کے اتھیلیٹ اٹسیڈو سیگائے کے 59 منٹ اور 12 سکنڈ کے ریکارڈ کو بہتر بنایا ۔ آج کی دوڑ میں کینیا کے جیوفری کموارور نے 59 منٹ اور 07 سکنڈ کے ساتھ دوسرا اور کینیا ہی کے موسی نیٹ گیریمیو نے 59 منٹ اور 11 سکنڈ کے ساتھ تیسرا قمام حاصل کیا ۔ کموارور نے عالمی چمپئن شپ کی کامیابی کے وقت میں ایک سکنڈ کی بہتری حاصل کی ۔ دہلی مراتھن اور ہاف مراتھن میں شرکت کیلئے شہرت رکھنے والے کینیائی اتھیلیٹ نے 2011 اور 2013 میں بھی رنر اپ کا مقام حاصل کیا تھا ۔ ایتھوپیا کے اڈولہ کوپن ہیگن کے عالمی مقابلوں میں تیسرا مقام حاصل کیا تھا ۔ آج کی دوڑ میں انہوں نے کینیائی ٹیم کی جانب سے خطاب حاصل کرنے کے خواب کو چکنا چور کردیا اور کامیاب دوڑ لگائی ۔ مردوں کی دوڑ تیز رفتاری سے شروع ہوئی تھی اور 17 کیلومیٹر کے فاصلے تک سارا گروپ تقریبا ایک ساتھ تھا

تاہم 19 کیلومیٹر فاصلے کے بعد سے اڈولہ نے سبقت بنانی شروع کردی تھی ۔ آخری 400 میٹر کے فاصلے تک بھی موسی نیٹ دوسرے نمبر پر تھے جس کے بعد کموارور تھے تاہم آخری چند میٹرس میں جیوفری نے موسی نیٹ کو پیچھے چھوڑتے ہوئے دوسرا مقام حاصل کرلیا ۔ دفاعی چمپئن کی حیثیت سے اس دوڑ میں شامل ہوتے ہوئے کپلاگٹ نے کہا کہ ان پر کوئی دباؤ نہیں تھا ۔ انہوں نے کہا کہ انہیں صرف اپنے آپ پر یقین رکھنا تھا کہ وہ یہ کام کرسکتی ہیں۔ اسی یقین کے ساتھ انہوں نے دوڑ لگائی اور کامیاب رہیں۔ خواتین کی دوڑ میں بھی ایک اور عالمی چمپئن کو خطاب سے محروم ہونا پڑا ۔

کینیا کی گلڈیز چیرونو کو ان کی ہی ساتھی کپلاگٹ نے دہلی ہاف مراتھن میں مسلسل دوسرے سال شکست دیدی ۔ کوپن ہیگن میں منعقدہ عالمی مقابلوں میں یہ فاصلہ 67 منٹ اور 29 سکنڈ میں پار کرنے والی چیرونو نے دہلی میں یہ فاصلہ 70 منٹ اور 5 سکنڈ میں پورا کیا ۔ مینس و وومنس دوڑ جیتنے والوں کو فی کس 27,000 ڈالرس کی رقم حاصل ہوئی جبکہ مدوں کے زمرہ میں کورس ریکارڈ جیک پاٹ کے طور پر 7500 ڈالرس بھی حاصل ہوئے ۔ ہاف مراتھن میں جملہ 32,500 اتھیلیٹس نے حصہ لیا تھا ۔ اس دوڑ میں جملہ 2,62,167 ڈالرس کی انعامی رقم رکھی گئی تھی ۔ ہندوستان کی پریجا نے ابتداء میں قدرے سست رفتاری سے دوڑ شروع کی تھی تاہم 17 کیلومیٹر کے بعد انہوں نے سب کو پیچھ چھوڑ نا شروع کیا ۔ انہوں نے کہا کہ صبح میں انہیں بہت سردی محسوس ہو رہی تھی ۔ چونکہ وہ ٹریونڈرم میں ٹریننگ کر رہی تھیں جہاں قدرے گرمی ہے تاہم انہیں خوشی ہے کہ انہوں نے اپنے خطاب کا دفاع کیا ہے ۔ پریجا نے اعلان کیا کہ وہ 2015 کے نیشنل گیمس کے بعد کھیلوں سے دو سال کا بریک لیں گی تاکہ اپنی خاندانی زندگی پر توجہ دے سکیں۔

TOPPOPULARRECENT