Thursday , July 19 2018
Home / دنیا / ایران میں جاسوسی کیلئے مغربی ممالک کی جانب سے چھپکلیوں کا استعمال

ایران میں جاسوسی کیلئے مغربی ممالک کی جانب سے چھپکلیوں کا استعمال

ماضی میں بھی ایران کے دفاعی تنصیبات کا پتہ چلانے کے مختلف حربے اختیار کئے گئے مگر ناکام، ایرانی عہدیدار کا بیان
تہران ۔ 14 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) ایران کی مسلح فورس کے سابق چیف آف اسٹاف نے کہا کہ مغربی ممالک کی جانب سے جاسوسی کے لئے چھپکلیوں کا استعمال کیا جارہا ہے۔ ان چھپکلیوں کی مدد سے یہ مغربی ممالک ایران کے اندر جاسوسی کرتے ہوئے اس سے ایٹمی لہروں کا پتہ چلا سکتے ہیں۔ ایران کے نیوکلیئر پروگرام پر جاسوسی کرنے کیلئے ان چھپکلیوں کا استعمال کیا جارہا ہے۔ ایران کے عظیم رہنما آیت اللہ علی خامنہ ای کے سینئر فوجی مشیر حسن فیروز عابدی نے مقامی میڈیا کے سوالات کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ حال ہی میں ماہرین ماحولیات کو گرفتار کیا گیا ہے جو ایران میں جاسوسی کی غرض سے داخل ہوئے تھے۔ انہوں نے کہا کہ وہ اس کیس کے بارے میں تفصیلات سے واقف نہیں ہیں لیکن مغرب کی جانب سے اکثر ایران میں جاسوسی کرنے کیلئے سیاحوں، سائنسدانوں اور ماہرین ماحولیات کو جاسوس بنا کر بھیجا جانا ہے۔ کئی سال قبل بعض افراد ایران آئے تھے تاکہ وہ فلسطین کیلئے امداد اکھٹا کرسکیں لیکن ہم کو ایران میں داخل ہونے کیلئے استعمال کردہ راستہ اور روٹ پر شبہ ہوا۔ انہیں گرفتار کرلیا گیا تو ان کے پاس سے صحرائی جانور برآمد ہوئے جس میں چھپکلی، گرگٹ وغیرہ شامل تھے۔ ہم کو اس چھپکلیوں اور دیگر جانوروں کی جلد پر ایٹمی لہروں کے اثرات کا پتہ چلا اور یہ اندازہ ہوگیا ہیکہ یہ نیوکلیئر جاسوس ہیں جو چاہتے ہیں کہ ہمارے ملک کے اندر ایٹمی سرگرمیاں کہاں چل رہی ہیں اور یورینیم کے ذخائر اور کان کس کس مقام پر پائے جاتے ہیں۔ ان کا یہ بیان ان خبروں کے بعد سامنے آیا کہ ایک سرکردہ ایرانی کناڈائی ماہر ماحولیات کاوس سیدامامی جیل میں فوت ہوئے ہیں انہیں گذشتہ ماہ ان کی وائیلڈ لائف این جی اوز کے ارکان کے ساتھ گرفتار کیا گیا تھا۔ تحفظ ماحولیات تنظیم کے نائب سربراہ خیومی مدنی کو بھی گذشتہ ہفتہ عارضی طور پر حراست میں لیا گیا تھا۔ فیروز عابدی نے کہا کہ ان مغربی جاسوسی ایجنسی کی کوشش کو ہر وقت ناکام بنایا جاتا رہا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایک اور جاسوسی کا کیس میں جرمنی سے تعلق رکھنے والا ایک جوڑا بھی شامل ہے جو دوبئی اور کوویت سے ماہی گیری کشتی پر سوار ہوکر خلیج فارس میں داخل ہوئے تھے تاکہ وہ ہمارے دفاعی نظام کی نشاندہی کرسکیں لیکن جب انہیں گرفتار کیا گیا تو ان لوگوں نے کہا کہ وہ مچھلیاں پکڑنے کیلئے یہاں آئے تھے وہ سیاح ہیں۔

TOPPOPULARRECENT