Sunday , September 23 2018
Home / ہندوستان / ایس جی پی سی کے کیلنڈر میں اندرا گاندھی کے قاتلوں کی برسی کا تذکرہ

ایس جی پی سی کے کیلنڈر میں اندرا گاندھی کے قاتلوں کی برسی کا تذکرہ

نئی دہلی ۔ 18 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس نے آج ننکا صاحب کے کیلنڈر میں سابق وزیراعظم اندرا گاندھی اور سابق فوجی سربراہ جنرل اے ایس ویدیہ کے قاتلوں کی برسی کا تذکرہ کرنے پر پارلیمنٹ میں پنجاب کی اکالی دل ۔ بی جے پی حکومت اور ایس جی پی سی کو تنقید کا نشانہ بنایا جبکہ شرومنی اکالی دل نے اس کیلنڈر سے لاتعلقی کا اظہار کرلیا ہے۔ پارلیمنٹ

نئی دہلی ۔ 18 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس نے آج ننکا صاحب کے کیلنڈر میں سابق وزیراعظم اندرا گاندھی اور سابق فوجی سربراہ جنرل اے ایس ویدیہ کے قاتلوں کی برسی کا تذکرہ کرنے پر پارلیمنٹ میں پنجاب کی اکالی دل ۔ بی جے پی حکومت اور ایس جی پی سی کو تنقید کا نشانہ بنایا جبکہ شرومنی اکالی دل نے اس کیلنڈر سے لاتعلقی کا اظہار کرلیا ہے۔ پارلیمنٹ کے دونوں ایوان میں یہ مسئلہ اٹھاتے ہوئے کانگریس ارکان نے وزیراعظم نریندر مودی سے مداخلت اور شرومنی گرودوارہ پربندھک کمیٹی کی جانب سے شائع کیلنڈر سے دستبرداری کیلئے ریاستی حکومت کو ہدایت دینے کی خواہش کی ہے ۔ تاہم حکومت نے کہا کہ اس اقدام کی منظوری نہیں دی گئی ہے

۔ راجیہ سبھا میں وقفہ صفر کے دوران یہ مسئلہ ا ٹھاتے ہوئے مسٹر اشوینی کمارا کانگریس نے کہا کہ ہمارے ملک میں اس سے بڑھ کر کوئی اور بدبختانہ واقعہ نہیں ہوسکتا کہ جن لوگوں نے دہشت گردی کے خلاف لڑتے ہوئے جانیں نچھاور کردیں ، ان کے قاتلوں کی برسی منائی جائے جوکہ پوری قوم کیلئے شرمناک ہے۔ لوک سبھا میں مسٹر رنویت سنگھ نے یہ مسئلہ اٹھاتے ہوئے حکومت سے مطالبہ کیا ۔ متنازعہ کیلنڈر کو غیر قانونی قرار دیا جائے ۔ انہوں نے بتایا کہ یہ کیلنڈر بی جے پی کے علم میں لائے بغیر شائع نہیں کیا گیا ہوگا جوکہ حکومت پنجاب کی حلیف جماعت نے اس قبضہ کو شرمناک قرار دیتے ہوئے مسٹر اشوینی کمار نے وزیراعظم سے مداخلت کا اصرار کیا اور کہا کہ وہ یہ بیان دیں کہ ہم اس طرح کے کیلنڈر کی سرپرستی یا قبول نہیں کرسکتے۔ انہوں نے ایوان بالا میں تمام جماعتوں سے اپیل کی کہ اس واقعہ کی مذمت کیلئے ایک قرارداد منظور کریں اور حکومت پنجاب کو ہدایت دی جائے کہ متنازعہ کیلنڈرس کو ضبط کرلیا جائے ۔

حکومت کی جانب سے جواب دیتے ہوئے مملکتی وزیر پارلیمانی امور مسٹر مختار عباس نقوی نے کہا کہ یہ ایک سنگین معاملہ ہے ۔ بی جے پی اور نہ ہی مرکزی حکومت نے کسی بھی طریقہ سے اس کی منظوری دی ہے اور ہم اس کے خلاف ہیں اور جس نے بھی یہ کام کیا ہے ، مرکزی حکومت یا پنجاب حکومت اس کی حوصلہ افزائی نہیںکریں گے۔ اکالی دل رکن سکھدیو سنگھ دھنسانے جب ریاست کے خلاف الزامات پر وضاحت کرنے کی کوشش کی تھی ، کانگریس اور حکمراں جماعت کے ارکان کے درمیان بحث و تکرار ہوگئی ۔ دھنسانے یہ دعویٰ کیا کہ کیلنڈر کا ہمارے سے کوئی تعلق نہیں ہے اور نہ ہی کسی کی سرپرستی کی جارہی ہے۔ سینئر کانگریس لیڈر امبیکا سونی اور دیگر ارکان نے شدید احتجاج کرتے ہوئے یہ الزام عائد کیا کہ ریاستی حکومت اس کیلنڈر کو شائع کرنے والولں کی حوصلہ افزائی کر رہی ہے جس پر ہنگامہ آرائی اور شور و غل کے مناظر دیکھے گئے۔ نائب صدرنشین پی جے کورین نے کہا کہ اس مسئلہ پر ایک وزیر نے وضاحت کردی ہے، لہذا یہ معاملہ ختم کردیا جائے۔

کشمیر اسمبلی میں سبرامنیم سوامی کے بیان کی مذمت
جموں ۔ 18 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) کانگریس ایم ایل اے مسٹر جی ایم سروری نے آج مساجد کے بارے میں بی جے پی لیڈر سبرامنیم سوامی کے متنازعہ ریمارکس کی مذمت کی ہے اور ان سے معذرت خواہی کا مطالبہ کیا ہے ۔ مفتی سعید حکومت کے پہلے بجٹ اجلاس کے آغاز پر مسٹر سروری اچانک اپنی نشست سے اٹھ کھڑے ہوگئے اور یہ مسئلہ اٹھایا ۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان جیسے ملک میں اس طرح کے بیان سے سماج میں تفرقہ پیدا ہوجائے گا ۔ انہوں نے ایوان میں متفقہ طور پر مذمت کی اپیل کی۔ سبرامنیم سوامی نے حال ہی میں یہ متنازعہ بیان دیا تھا کہ مساجد اور گرجا گھر صرف عمارتیں ہیں اور اسے مسمار کیا جاسکتا

TOPPOPULARRECENT