Monday , November 20 2017
Home / Top Stories / ایس پی کے دونوں گروپس میں زبردست سرگرمیاں

ایس پی کے دونوں گروپس میں زبردست سرگرمیاں

اکھیلیش کی رہائش گاہ پر ٹکٹ کے خواہشمندوں کا ہجوم، ملائم نے 38 امیدواروں کی فہرست تیارکرلی
لکھنؤ ۔ 18 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) اترپردیش میں حکمراں سماج وادی پارٹی میں اپنے امیدواروں کی فہرست کو قطعیت دینے اور ساتھ ہی ساتھ کانگریس کے ساتھ اتحاد یقینی بنانے کیلئے کافی سرگرمیاں دیکھی گئی جبکہ پہلے مرحلہ کی رائے دہی کیلئے پرچہ نامزدگی داخل کرنے کا سلسلہ شروع ہوچکا ہے۔ الیکشن کمیشن کی جانب سے انتخابی نشان کے بارے میں فیصلہ کے بعد سماج وادی پارٹی صدر اور چیف منسٹر اکھیلیش یادو نے پارٹی پر مکمل کنٹرول حاصل کرلیا ہے۔ اب وہ اپنے وفاداروں کو جنہیں ان کے چچا اور سابق ریاستی صدر شیوپال یادو نے برطرف کردیا تھا، واپس لانے کا کام بھی شروع کرچکے ہیں۔ پارٹی کے سینئر لیڈر نے کہا کہ ہم امیدواروں کی فہرست کو قطعیت دے رہے ہیں۔ اس کے ساتھ ساتھ ہمیں کانگریس کے ساتھ اتحاد کو بھی پیش نظر رکھنا ہوگا۔ حلیف جماعت کو اعتماد میں لینے کے بعد ہی قطعی فہرست جاری کی جائے گی۔ انہوں نے بتایا کہ اکھیلیش یادو نے ان یوتھ لیڈرس کو دوبارہ پارٹی میں شامل کرنے کا فیصلہ کیا ہے جنہیں شیوپال یادو نے خارج کردیا ہے۔ انہوں نے اپنی شناخت مخفی رکھنے کی شرط بتایا کہ ہم اکھیلیش کو دوبارہ چیف منسٹر کی حیثیت سے دیکھنا چاہتے ہیں۔ اس دوران سماج وادی پارٹی میں مصالحت کی امیدوں کے باوجود لوک دل کو ملائم سنگھ یادو سے توقعات وابستہ ہیں۔ لوک دل کے قومی صدر سنیل سنگھ نے بتایا کہ انہوں نے ملائم سنگھ یادو سے ملاقات کی جن کی ان کے بیٹے نے توہین کی ہے اور ان سے پارٹی چھین لی ہے۔ سنیل سنگھ نے کہا کہ انہوں نے ملائم سنگھ یادو کو پھر ایک بار پیشکش کی ہیکہ وہ پارٹی بیانر سے استفادہ کرسکتے ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ اپنے بیٹے کی ان حرکتوں کے سبب ملائم سنگھ تذبذب کا شکار ہے۔ انہوں نے کہا کہ اپنی ہی پارٹی کو چھوڑنا یقینا ایک مشکل فیصلہ ہوتا ہے۔ آج شدید ترین سردی کے باوجود چیف منسٹر اکھیلیش یادو کی رہائش گاہ پر ٹکٹ کے خواہشمندوں کا ہجوم تھا۔ سینئر وزیر اعظم خاں جنہوں نے ملائم سنگھ اور اکھیلیش کے مابین مصالحت کی کافی کوششیں کی، آج چیف منسٹر سے ان کی رہائش گاہ پر ملاقات کی۔ انہوں نے الیکشن کمیشن کے فیصلہ پر اطمینان کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یہ ان کیلئے مثبت علامت ہے۔ اعظم خاں نے کہاکہ ’’نا نیتا گئے، نا بیٹا۔ دونوں ہاتھ میں لڈو‘‘۔ دوسری طرف ملائم سنگھ کیمپ میں بھی کافی سرگرمیاں دیکھی گئیں۔ شیوپال کے بیٹے ادتیہ یادو نے ایک پوسٹر ٹوئیٹر پر پوسٹ کیا جس میں ملائم، اکھیلیش اور شیوپال کو دکھایا گیا۔ انہوں نے کیپشن لکھا کہ ریاست کی ترقی کیلئے سب کو مل کر اپنا رول ادا  کرنا چاہئے۔ ذرائع نے بتایا کہ ملائم سنگھ کیمپ نے 38 امیدواروں کی فہرست تیار کرلی ہے۔

راہول ’کرشنا ‘اور اکھیلیش ’ارجن‘
سماج وادی پارٹی اور کانگریس میں اتحاد کی اطلاعات کے دوران وارناسی میں کئی مقامات پر پوسٹرس آویزاں کئے گئے ہیں جن میں راہول گاندھی کو ’’کرشنا‘‘ اور اکھیلیش یادو کو ’’ارجن‘‘ دکھایا گیا جو رتھ پر سوار ہیں۔

TOPPOPULARRECENT