Wednesday , December 12 2018

ایم این ایس پر ادھو ٹھاکرے کی بی جے پی سے وضاحت طلبی

ممبئی۔/11مارچ،( سیاست ڈاٹ کام ) شیو سینا سربراہ ادھو ٹھاکرے نے آج جارحانہ تیور کا مظاہرہ کرتے ہوئے بی جے پی سے مطالبہ کیا کہ وہ راج ٹھاکرے کی قیادت والی ایم این ایس سے متعلق اپنے موقف کی وضاحت کرے۔ اپنے کزن راج ٹھاکرے کا نام لئے بغیر انہوں نے بی جے پی سے وضاحت طلب کی اور یہ بھی کہا کہ کچھ لوگ حصول اقتدار کیلئے کچھ بھی کرسکتے ہیں۔ حال ہی میں بی جے پی کے سابق صدر نتن گڈکری نے راج ٹھاکرے سے ملاقات کی تھی۔ اسی پس منظر میں ادھو ٹھاکرے نے کہا کہ بی جے پی پہلے یہ واضح کرے کہ مہاراشٹرا میں بی جے پی کو اپنے فیصلے خود کرنے کا اختیار کس نے دیا۔ پارٹی کے لوک سبھا امیدواروں اور دیگر دفتری ارکان سے ملاقات کے بعد شیوسینا ہیڈکوارٹر سینا بھون میں ادھو اخباری نمائندوں سے بات کررہے تھے۔

انہوں نے کہا کہ شیو سینا کے گوپی ناتھ منڈے اور ان کی ٹیم سے بھی اچھے روابط ہیں لیکن ایسا محسوس ہوتا ہے کہ کچھ لوگ سہرہ اپنے سر باندھنے کیلئے درمیان میں کود پڑے ہیں۔ انہوں نے بی جے پی سے یہ وضاحت بھی طلب کی کہ وہ یہ بتائے کہ کیا پارٹی اروند کجریوال کی عام آدمی پارٹی کی طرح حکومت تشکیل دینے کسی دیگر پارٹی کے ساتھ اتحاد کرسکتی ہے؟ انہوں نے اس سلسلہ میں کجریوال کے علاوہ سابق وزیر اعظم چندر شیکھر کا بھی حوالہ دیا جنہوں نے راجیو گاندھی کی تائید حاصل کی تھی۔کیا بی جے پی کانگریس سے اتحاد کرنے بھی تیار ہے؟ یہ دو سوالات ہیں جو ادھو ٹھاکرے نے بی جے پی سے کئے۔ تاہم خود ہی اس کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ اگر بی جے پی کانگریس کے ساتھ بھی سیاسی مفاہمت کرسکتی ہے تو پھر کجریوال اور ہمارے درمیان کیا فرق ہے؟ ہم نے ( شیوسینا ۔ بی جے پی) ایک دوسرے سے سیاسی اتحاد ہندوتوا کے نام پر کیا تھا اور ہم ان ( ہندوؤں) کے ساتھ اسوقت بھی تھے جب وہ بحران کا شکار تھے لیکن اب حالات میں کچھ بہتری پیدا ہورہی ہے۔

TOPPOPULARRECENT