Sunday , May 27 2018
Home / Top Stories / این ٹی پی سی حادثہ کے مقام کا راہول گاندھی نے دورہ کیا

این ٹی پی سی حادثہ کے مقام کا راہول گاندھی نے دورہ کیا

زخمیوں سے ملاقات ‘ عدالتی تحقیقات کا مطالبہ ‘ مرکزی وزیر آر کے سنگھ کیساتھ راہول کا آمنا سامنا
نئی دہلی،2نومبر(سیاست ڈاٹ کام)کانگریس کے نائب صدر راہل گاندھی نے اترپردیش کے رائے بریلی میں نیشنل تھرمل پاور کارپوریشن (این ٹی پی سی)کے ایک پلانٹ میں بائلر پھٹنے سے ہلاک ہونے والوں کے ارکان خاندان کو سرکاریملازمت اور بہتر معاوضہ دینے کامطالبہ کیا ہے ۔گجرات اسمبلی انتخابات کے لئے اپنے سہ روزہ پروگرام کوترک کرتے ہوئے راہول گاندھی آج متاثرین کے خاندان سے ملنے رائے بریلی پہنچے ۔انہوں نے اس حادثے پر شدید افسوس کااظہار کیا۔انہوں نے رائے بریلی کے فرصت گنج ہوائی اڈے پر افسروں اور ان کے استقبال کے لئے موجود لوگوں سے بھی تفصیلات معلوم کی ۔کانگریس نائب صدر نے بعد میں ٹویٹ کیا کہ ” این ٹی پی سی حادثے کے متاثرین کا درد دیکھ کر بہت دکھ ہوا ۔ ان کے خاندانوں کو بہتر معاوضہ اور سرکاری نوکری اور زخمیوں کو ہر ممکن مدد ملنی چاہئے ۔” انہوں نے لکھا کہ مزدوروں کا مطالبہ ہے کہ لاپرواہی کی وجہ سے ہوئے اس حادثے کی قانونی جانچ ہونی چاہئے اور قصورواروں کو سخت سزا ملنی چاہئے ۔ قابل ذکر ہے کہ این ٹی پی سی کے پلانٹ میں کل بائلر پھٹنے سے یہ حادثہ ہوا تھا جس میں اب تک 30لوگوں کی موت ہوچکی ہے اور آٹھ دیگر کی حالت نازک ہے ۔

حادثے میں 100سے زیادہ لوگ شدید طور پر جھلس گئے تھے ۔وزیر اعظم نریندر مودی نے ہر ایک متاثرین کے خاندان کو دو لاکھ روپے اور ہر ایک زخمی کو 50ہزار روپے کی مالی مدد دینے کا اعلان کیا ہے ۔اترپردیش کے وزیراعلی یوگی آدتیہ ناتھ نے بھی ہلاک شدگان کے خاندانوں کو دو دو لاکھ روپے اور شدید طورپر زخمیوں کو 50ہزار روپے فی کس مدد دینے کا اعلان کیا ہے ۔ معمولی طورپر زخمی کو 25ہزار روپے فی کس مدد دی جائے گی۔راہول گاندھی نے اس دھماکہ میں زخمی ورکرس سے بھی ملاقات کی اور کانگریس پارٹی نے واقعہ کی عدالتی تحقیقات کا مطالبہ کیا ۔ انہوں نے ایک اور ٹوئیٹ میں لکھا کہ مزدوروں نے انہیں بتایا ہے کہ یہ حادثہ لاپرواہی کی وجہ سے پیش آیا لہذا اس کی عدالتی تحقیقات ہونی چاہیئے ۔ کانگریس کے سینئر لیڈر غلام نبی آزاد اور اترپردیش کانگریس صدر راج ببر بھی راہول گاندھی کے ہمراہ تھے ۔ انہوں نے این ٹی پی سی یونٹ پر عہدیداروں سے یہ پوچھا کہ حادثہ کے وقت کتنے ورکرس کام کررہے تھے ؟ ۔ اس دورہ کے موقع پر کانگریس نائب صدر کا مرکزی وزیر توانائی آر کے سنگھ سے آمنا سامنا بھی ہوا ۔ غلام نبی آزآد نے کہا کہ اس حادثہ کی عدالتی تحقیقات ضروری ہے کیونکہ سرکاری تحقیقات کی صورت میں حقائق کو مخفی رکھا جاسکتا ہے ۔

 

TOPPOPULARRECENT