Thursday , September 20 2018
Home / ہندوستان / ایوان میں خلل اندازی کا خاتمہ ، پُرسکون کارروائی ضروری

ایوان میں خلل اندازی کا خاتمہ ، پُرسکون کارروائی ضروری

پارلیمنٹ جمہوریت کا مقدس مندر، وقار کی برقراری ارکان کی اخلاقی ذمہ داری

نئی دہلی 10 جولائی (سیاست ڈاٹ کام) اگر ارکان پارلیمنٹ میں ماضی میں دیگر پارٹیوں کے طرز عمل کا تذکرہ کرتے ہوئے خلل اندازی میں شدت پیدا کریں تو پارلیمنٹ میں خلل اندازی کا دور جاری رہے گا۔ اسپیکر لوک سبھا سمترا مہاجن نے آئندہ ہفتہ شروع ہونے والے پارلیمنٹ کے مانسون سیشن سے قبل پالیمنٹرینس کو روانہ کئے گئے ایک جذباتی مکتوب میں یہ بات کہی۔ ارکان پارلیمنٹ کو ان کی اخلاقی ذمہ داری یاد دلاتے ہوئے مہاجن نے ان پر زور دیا کہ وہ ایوان پارلیمنٹ کی کارروائی کو بہتر انداز میں چلانے میں تعاون کریں اور اسے یقینی بنائیں اور کہاکہ اب ہمارے لئے وقت آگیا ہے کہ ہم اپنا محاسبہ کریں اور فیصلہ کریں کہ ہماری پارلیمنٹ اور جمہوریت کے لئے ہمیں کس راستہ کو اختیار کرنا ہے اور ہمارا آئیڈیل امیج کیا ہونا چاہئے۔ دو صفحات کے اس مکتوب میں انھوں نے کہاکہ پارلیمنٹ کے وقار اور اس کے تقدس کو برقرار رکھنا اس کے اجتماعی ذمہ داری ہوتی ہے۔ سمترا مہاجن نے جو، اب تک آٹھ مرتبہ لوک سبھا کیلئے منتخب ہوچکی ہیں، مزید کہاکہ ’’میرے تجربات کیر وشنی میں مَیں یہ کہہ سکتی ہوں کہ عوام ان کے منتخب کردہ نمائندوں کی کارکردگی اور ان کے رول کو بہت دلچسپی سے دیکھتے ہیں اور میڈیا بھی پارلیمنٹ میں ان کے کام کی تفصیلی رپورٹ عوام کو پیش کرتا ہے۔ انھوں نے کہاکہ اس باوقار ایوان کا رکن ہونا ایک اعزاز ہے۔ انھوں نے ارکان پارلیمنٹ کو بتایا کہ عوام ان سے بڑی توقعات رکھتے ہیں اور ان پر بھروسہ کرکے انھیں منتخب کیا ہے۔ جس پر آپ کی بھی یہ خواہش ہوتی ہوگی کہ نہ صرف آپ کے حلقہ کے عوام کی توقعات کو پورا کرنے کی کوشش کریں بلکہ ملک کی ترقی اور جمہوریت کے استحکام میں بھی اپنا حصہ ادا کریں۔

TOPPOPULARRECENT