Sunday , January 21 2018
Home / شہر کی خبریں / ایوان کی کارروائی میں رکاوٹ ناقابل برداشت

ایوان کی کارروائی میں رکاوٹ ناقابل برداشت

ایوان کی کارروائی میں رکاوٹ ناقابل برداشت تلگودیشم ارکان اسمبلی کے رویہ پر چیف منسٹر چندرشیکھر راؤ کی سخت برہمی

ایوان کی کارروائی میں رکاوٹ ناقابل برداشت
تلگودیشم ارکان اسمبلی کے رویہ پر چیف منسٹر چندرشیکھر راؤ کی سخت برہمی
حیدرآباد ۔ 9 ۔ مارچ (سیاست نیوز) چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے اسمبلی میں تلگو دیشم ارکان کے رویہ پر سخت برہمی کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ ایوان کی کارروائی میں رکاوٹ کو ہرگز برداشت نہیں کیا جائے گا اور حکومت سخت کارروائی کرے گی۔ ایوان سے تلگو دیشم ارکان کی معطلی کے بعد اپوزیشن کی جانب سے معطلی کی مدت میں کمی کی سفارش پر مداخلت کرتے ہوئے چیف منسٹر نے کہا کہ انہوں نے اپنے 40 سالہ سیاسی کیریئر میں ایوان میں اس طرح کی صورتحال نہیں دیکھا ہے۔ انہوں نے کہا کہ نئی ریاست تلنگانہ کے قیام کے بعد جب پہلی مرتبہ اسمبلی اجلاس شروع ہوا اور نئے ارکان حلف لے رہے تھے، اس وقت بھی تلگو دیشم ارکان نعرے لگاتے ہوئے ایوان میں داخل ہوئے۔ چیف منسٹر نے الزام عائد کیا کہ تلگو دیشم ارکان منصوبہ بند طریقہ سے ایوان کی کارروائی میں رکاوٹ پیدا کرنے واحد ایجنڈہ کے ساتھ اسمبلی آئے ہیں۔ انہوں نے ریمارک کیا کہ تلگو دیشم ارکان ایوان کی کارروائی میں رکاوٹ کا اعلان کر رہے ہیں جبکہ حکومت ایوان کی کارروائی چلاکر دکھائے گی۔ اسمبلی اجلاس کس طرح چلایا جائے حکومت اچھی طرح جانتی ہے اور اس کیلئے قواعد بھی موجود ہیں۔ چیف منسٹر نے ایوان کی کارروائی میں رکاوٹ پیدا کرنے سے متعلق تلگو دیشم ارکان کے ریمارک پر برہمی ظاہر کی۔ انہوں نے کہا کہ حکومت چاہتی ہے کہ عوامی مسائل پر مباحث ہوں اس کیلئے اسمبلی کے ایام میں توسیع کیلئے بھی حکومت تیار ہے۔ چیف منسٹر نے کہا کہ حکومت عوامی مسائل پر اپوزیشن کی تعمیری تجاویز کو قبول کرنے تیار ہے۔ انہوں نے کہا کہ تلگو دیشم ارکان اگر اپنے رویے میں تبدیلی نہیں لائیں گے تو ان کے خلاف سخت کارروائی ناگزیر ہوگی۔ آج ان کے خلاف کی گئی کارروائی معمولی ہے۔ انہوں نے جو کام کیا ہے، اس کیلئے سخت سزا دی جاسکتی ہے۔ انہوں نے جاریہ سیشن کے اختتام تک معطلی کے فیصلہ کو جائز قرار دیا اور کہا کہ کم از کم آئندہ سیشن میں تلگو دیشم ارکان قواعد کی پابندی کریں گے۔ چیف منسٹر نے وضاحت کی کہ ایوان میں قومی ترانہ کی توہین کے مرتکب ارکان کو غیر مشروط معذرت خواہی کرنی چاہئے، چاہے ان ارکان کا تعلق برسر اقتدار پارٹی سے کیوں نہ ہو۔ کے سی آر نے کہا کہ ساری دنیا میں گورنر کے خطبہ کے موقع پر ہوئی ہنگامہ آرائی کو دیکھا ہے اور تلنگانہ ریاست کو بدنامی سے بچانے کیلئے یہ کارروائی کی گئی۔
انہوں نے اپوزیشن ارکان سے کہا کہ وہ معطلی کے مسئلہ پر کچھ دن کیلئے خاموش رہیں۔ چیف منسٹر نے کہا کہ مزید تین چار دن تک انتظار کریں گے، اس کے بعد معطلی کے مسئلہ پر غور کیا جاسکتا ہے۔ چیف منسٹر نے کہا کہ قومی ترانہ کی توہین اور گورنر پر کاغذات پھینکنا انتہائی افسوسناک ہے۔ انہوں نے کہا کہ تمام جماعتوں کی تجاویز اور تعاون کے ذریعہ ہی تلنگانہ ریاست کو ترقی کی سمت گامزن کیا جائے گا۔

TOPPOPULARRECENT