Wednesday , December 13 2017
Home / Top Stories / ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر کیلئے ہندو پابند عہد: موہن بھاگوت

ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر کیلئے ہندو پابند عہد: موہن بھاگوت

UDUPI, NOV 24 (UNI):- RSS chief Mohan Bhagwat, Dharmadhikari D Veerendra Heggade, Sri Vishwesha Theertha Swamiji, Paryaya Pejavara Mutt, His Holiness Jagadguru Sri Shivarathri Deshikendra Mahaswamiji along with sadhus attending the Dharma Sansad organized by the Vishwa Hindu Parishad (VHP) at the Royal Gardens, kalsnka, in Udupi on Friday. UNI PHOTO-61U

بھگوان رام کی جائے پیدائش پر صرف مندر ہی بن سکتا ہے کوئی اور چیز نہیں، ہندو سنتوں سے آر ایس ایس سربراہ کا خطاب
اُڑپی۔ 24 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کے سربراہ موہن بھاگوت نے آج ایودھیا میں متنازعہ مقام پر رام مندر کی تعمیر کو ہندوئوں کا عہد قرار دیا اور کہا کہ اس مندر کی تعمیر کے لیے ہندو پابند عہد ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس مقام پر صرف مندر ہی بنے گا اس سے ہٹ کر کوئی عمارت تعمیر نہیں ہوسکتی۔ واضح رہے کہ 25 سال قبل 6 ڈسمبر 1992ء کو کارسیوکوں نے تاریخی مسجد بابری مسجد کو شہید کردیا تھا۔ اس وقت کی مرکزی نرسمہا رائو زیر قیادت کانگریس حکومت نے بابری مسجد شہادت کے فوری بعد اسی مقام پر مسجد تعمیر کرنے کا وعدہ کیا تھا۔ لیکن گزشتہ 25 سال کے دوران مسجد کی تعمیر کے بجائے یہاں رام مندر کی تعمیر کے لیے سرگرمیاں تیز کردی گئی ہیں۔ آر ایس ایس اس سرگرمی کا اول دستہ گروپ ہے۔ اڑپی میں 2000 ہندو سنتوں، مٹھ کے سربراہوں اور ملک بھر سے جمع ہوئے وی ایچ پی کے قائدین کے جلسے دھرم سنسد سے خطاب کرتے ہوئے آر ایس ایس سربراہ نے کہا کہ ایودھیا میں رام مندر کی تعمیر کے مسئلہ پر کوئی سمجھوتہ نہیں ہوگا۔ رام مندر کا وجود ہی ہندوئوں کی شان ہے۔ ہم اس پر ہرگز پیچھے نہیں ہٹیں گے۔ ہم مندر بناکر ہی رہیں گے۔ یہ کوئی مقبول عام اعلامیہ نہیں ہے بلکہ ہمارے عقیدت کا معاملہ ہے۔ ہم اپنے عقیدت کو ہرگز تبدیل نہیں کریں گے۔ راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کے سربراہ نے مزید کہا کہ برسوں کی کوششوں اور قربانیوں کے بعد رام مندر کی تعمیر اب ممکن نظر آرہی ہے۔ جبکہ عدالت میں اس کا معاملہ زیر دوران ہے جو کوئی اہمیت نہیں رکھتا۔ اس متنازعہ مقام پر صرف رام مندر ہی تعمیر ہوگی، کوئی اور چیز نہیں بنے گی۔ بھگوان رام کے جائے پیدائش پر ہم تمام کا مضبوط ایقان ہے۔ انہوں نے کہا کہ رام مندر کو پوری شان و شوکت سے بنایا جائے گا جیسا کہ یہاں اس سے قبل مندر موجود تھا۔ مندر کی تعمیر کے لیے وہی پتھر استعمال کیے جائیں گے۔ گزشتہ 25 سال سے رام جنم بھومی تحریک کا پرچم لے کر چلنے والوں کی نگرانی میں ہی یہ مندر بنے گا۔ لیکن اس مندر کی تعمیر سے پہلے ہم عوام میں ضروری شعوری بیداری مہم چلائیں گے۔ جیسا کہ اس سے پہلے بھی ہم نے عوامی تحریک کو عام کیا تھا۔ہم اپنے مقاصد کو حاصل کرنے کے بالکل قریب پہنچ گئے ہیں۔ فی الحال موجودہ حالات میں ہمیں پہلے سے زیادہ محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔ رام مندر کی تعمیر مذہبی تبدیلی کے عمل کو روکنا اور گائو تحفظ ہی ہمارے اہم مسائل ہیں۔ ان تمام امور پر وی ایچ پی کے تین روزہ دھرم سنسد میں غور و خوص کیا جائے گا۔ اس دھرم سنسد میں ذات، پات اور جنس کی بنیاد پر امتیازی سلوک کے مسائل کو بھی زیر بحث لایا جائے گا۔ ہندو سماج میں یکجہتی کو یقینی بنانے کے لیے کام کیا جائے گا۔ دھرم سنسد کے منتظمین نے کہا کہ ملک بھر میں ہندو سماج کو متحدہ کرنے کی مہم شروع کی جائے گی۔ بہت جلد رام مندر تعمیر کے لیے شروعات کی جائے گی۔

TOPPOPULARRECENT