ایودھیا میں رام مندر ہی بنے گا ‘ بھیاجی جوشی

اتفاق رائے پیدا کرنا آسان نہیں ۔ آر ایس ایس جنرل سکریٹری
ناگپور 11 مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) آر ایس ایس نے کہا کہ ایودھیا تنازعہ پر اتفاق رائے پیدا کرنا آسان نہیں ہے تاہم اس نے کہا ہے کہ اترپردیش کے شہر میں سوائے رام مندر کے کچھ اور تعمیر نہیں کیا جائیگا ۔ آر ایس ایس جنرل سکریٹری بھیا جی جوشی نے کہا کہ وہ اس پر مزید تبصرہ نہیں کرینگے کیونکہ یہ مسئلہ عدالت میں زیر دوران ہے ۔ جوشی نے آر ایس ایس کی اہمیت کی حامل اکھل بھارتیہ پرتی ندھی سبھا کے اجلاس کے موقع پر میڈیا سے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ یہ یقینی ہے کہ ایودھیا میں ( بابری مسجد کے مقام پر ) رام مندر ہی تعمیر کی جائیگی اور وہاںکچھ تعمیر نہیںہوگا ۔ یہ بھی طئے شدہ بات ہے ۔ جوشی نے اس یقین کا اظہار کیا کہ اس مسئلہ پر سپریم کورٹ سے ان کے حق میں فیصلہ آئیگا ۔ انہوں نے کہا کہ عدالتی فیصلے کے بعد مندر کی تعمیر کا آغاز ہوگا اور مندر کی تعمیر حق ملکیت مقدمہ میں سپریم کورٹ فیصلے کی بنیاد پر ہوگی ۔ ہندو رہنما سری سری روی شنکر کی جانب سے اس مسئلہ پر اتفاق رائے پیدا کرنے کی کوششوں کے تعلق سے سوال پر انہوں نے کہا کہ اس تنازعہ پر اتفاق رائے پیدا کرنا آسان نہیں ہے ۔ جوشی نے کہا کہ ہم نے ہمیشہ ہی کہا ہے کہ یہاں باہمی رضامندی سے مندر تعمیر ہونا چاہئے لیکن ہمارا تجربہ کہتا ہے کہ اس مسئلہ پر اتفاق رائے پیدا کرنا آسان نہیں ہوگا ۔ انہوں نے کہا کہ وہ روی شنکر کی کوششوں کا خیر مقدم کرتے ہیں لیکن یہ بھی حقیقت ہے کہ سماج میں مختلف موقف رکھنے والے گروپس موجود ہیں اور اس طرح کی کوششوں کا کامیاب ہونا آسان نہیں ہے ۔ کرناٹک میں لنگایت برادری کیلئے اقلیتی مذۃبی موقف کے مطالبہ پر بھیاجی جوشی نے کہا کہ ہم اس مطالبہ کی تائید نہیں کرتے ۔

TOPPOPULARRECENT