Saturday , May 26 2018
Home / ہندوستان / ’ایک قوم ، ایک نصاب‘سے متعلق عرضی مسترد

’ایک قوم ، ایک نصاب‘سے متعلق عرضی مسترد

نئی دہلی،8دسمبر (سیاست ڈاٹ کام) سپریم کورٹ نے ایک قوم ایک نصاب کے تحت چھ سے چودہ سال کے بچوں کو یکساں نصاب دستیاب کرانے سے متعلق عرضی آج مسترد کردی۔چیف جسٹس دیپک مشرا ، جسٹس اے ایم کھانولکر اور جسٹس ڈی وی چندر چوڑ کی بنچ نے کہا کہ وہ ایک قوم ایک نصاب کا حکم کیسے دے سکتی ہے ۔جسٹس مشرا نے غازی آباد کے پرائمری اسکول میں اسسٹنٹ ٹیچر نیتا اپادھیائے کی عرضی پر سماعت کرتے ہوئے کہا کہ ہم اس موضوع پر کیا کہہ سکتے ہیں، سب کچھ عدالت ہی تو نہیں کرسکتی۔ یہ ممکن نہیں ہے ۔عرضی گذار نے حکومت کو چھ سے چودہ سال کے تمام بچوں کو یکساں نصاب سے تعلیم دلانے کی ہدایت دینے کا مطالبہ کیا تھا۔ اس عرضی میں مرکز کوچھ سے چودہ سال کے بچوں کیلئے ماحولیات، صحت اور سلامتی نیز سوشلزم ، سیکولرزم اور قومی پرستی کے مضامین پر مصدقہ کتابیں دستیاب کرانے کی ہدایت دینے کی درخواست کی گئی تھی۔

TOPPOPULARRECENT