Saturday , June 23 2018
Home / شہر کی خبریں / اے پی حکومت اقلیتی اداروں پر جلد تقررات کے حق میں

اے پی حکومت اقلیتی اداروں پر جلد تقررات کے حق میں

حیدرآباد ۔ 4 ۔ فروری(سیاست نیوز) آندھراپردیش حکومت نے اقلیتی اداروں کی تقسیم کے بارے میں تلنگانہ حکومت سے تفصیلات طلب کی ہیں۔ آندھراپردیش حکومت اقلیتی اداروں پر جلد تقررات کے حق میں ہے اور اس سلسلہ میں اداروں کی تقسیم کا عمل تیز کرنے کیلئے تلنگانہ حکومت سے نمائندگی کی گئی ۔ بتایا جاتا ہے کہ چیف منسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے وزیر اق

حیدرآباد ۔ 4 ۔ فروری(سیاست نیوز) آندھراپردیش حکومت نے اقلیتی اداروں کی تقسیم کے بارے میں تلنگانہ حکومت سے تفصیلات طلب کی ہیں۔ آندھراپردیش حکومت اقلیتی اداروں پر جلد تقررات کے حق میں ہے اور اس سلسلہ میں اداروں کی تقسیم کا عمل تیز کرنے کیلئے تلنگانہ حکومت سے نمائندگی کی گئی ۔ بتایا جاتا ہے کہ چیف منسٹر این چندرا بابو نائیڈو نے وزیر اقلیتی بہبود ڈاکٹر پلے رگھوناتھ ریڈی کو ہدایت دی کہ وہ تلنگانہ حکومت کے ساتھ تال میل کے ذریعہ اقلیتی اداروں کی جلد تقسیم کو یقینی بنائیں تاکہ ان اداروں پر تقررات کئے جاسکیں۔ اقلیتی فینانس کارپوریشن اردو اکیڈیمی ، حج کمیٹی ، اقلیتی کمیشن اور وقف بورڈ کی تشکیل کے سلسلہ میں آندھراپردیش حکومت کی جانب سے سرگرمیوں کا آغاز ہوچکا ہے ۔ وزیر اقلیتی بہبود نے ان اداروں کے عہدیداروں سے تقسیم سے متعلق فائل اور اس کے موقف کے بارے میں معلومات حاصل کی ہیں۔ حکومت نے انچارج سکریٹری اقلیتی بہبود آندھراپردیش شیخ محمد اقبال کو مشورہ دیا کہ وہ اسپیشل سکریٹری تلنگانہ سید عمر جلیل سے ربط پیدا کرتے ہوئے اقلیتی اداروں کی عاجلانہ تقسیم کو یقینی بنائے۔ واضح رہے کہ حج کمیٹی کی تقسیم کا عمل مکمل ہوچکا ہے جبکہ دیگر اداروں کی تقسیم ابھی باقی ہے۔

آندھراپردیش حکومت حج سیزن کے آغاز سے قبل نئی حج کمیٹی تشکیل دینے پر غور کر رہی ہے۔ تاہم حج 2015 ء کیلئے آندھراپردیش کے عازمین کے انتظامات تلنگانہ حج کمیٹی انجام دے گی۔ اس سلسلہ میں یادداشت مفاہمت پر دستخط کئے جائیں گے ۔ بتایا جاتا ہے کہ آندھراپردیش کے تلگو دیشم سے تعلق رکھنے والے اقلیتی قائدین اقلیتی اداروں پر تقررات کیلئے حکومت سے مسلسل نمائندگی کر رہے ہیں۔ اقلیتی فینانس کارپوریشن اردو اکیڈیمی اور وقف بورڈ کی تقسیم سے متعلق فائلیں حکومت کے پاس زیر التواء ہیں۔ ان کی جلد یکسوئی کیلئے کوشش کی جارہی ہے تاکہ ان اداروں پر پارٹی سے تعلق رکھنے والے افراد کو نامزد کیا جاسکے۔ وقف بورڈ کی تقسیم کیلئے سنٹرل وقف کونسل کی منظوری ضروری ہے اور دونوں ریاستوں کے عہدیدار اس سلسلہ میں مرکز سے نمائندگی کریںگے۔ بتایا جاتا ہے کہ تقسیم کا عمل مکمل ہوتے ہی آندھراپردیش حکومت اقلیتی فینانس کارپوریشن کے صدرنشین اور بورڈ آف ڈائرکٹرس کو نامزد کرے گی۔

TOPPOPULARRECENT