Monday , September 24 2018
Home / شہر کی خبریں / بابری مسجد کو رام جنم بھومی میں تبدیل کرنے کی سازش

بابری مسجد کو رام جنم بھومی میں تبدیل کرنے کی سازش

مجلس بچاؤ تحریک کا احتجاجی جلسہ عام ، ڈاکٹر قائم خاں ، طارق قادری و دیگر کا خطاب

مجلس بچاؤ تحریک کا احتجاجی جلسہ عام ، ڈاکٹر قائم خاں ، طارق قادری و دیگر کا خطاب
حیدرآباد ۔ 4 ۔ دسمبر : ( پریس نوٹ ) : مسلمان فسطائی طاقتوں کو شکست فاش دینے کے لیے کھل کر مظاہرہ کریں پرامن طور پر 6 دسمبر کے دن یوم سیاہ اور بند میں حصہ لیتے ہوئے قومی یکجہتی کا ثبوت فراہم کریں ۔ بابری مسجد کی دوبارہ اسی مقام پر تعمیر تک مجلس بچاؤ تحریک اپنا احتجاج جاری رکھے گی ۔ جب ایک مرتبہ زمین پر مسجد تعمیر ہوجاتی ہے تو وہ قیامت تک مسجد رہتی ہے ۔ ان خیالات کا اظہار صدر مجلس بچاؤ تحریک ڈاکٹر قائم خاں نے کل شام مجلس بچاؤ تحریک کے زیر اہتمام اعظم فنکشن ہال مغل پورہ میں بابری مسجد کی شہادت کے ضمن میں احتجاجی جلسہ عام کی صدارت کے دوران کیا ۔ انہوں نے کہا کہ اگر بابری مسجد کی شہادت کا مکمل جائزہ لیا جائے تو یہ واضح ہوجائے گا کہ نام نہاد مسلم قیادت اور سنگھ پریوار نے آپس میں گٹھ جوڑ کرتے ہوئے ساڑھے چار سو سالہ قدیم بابری مسجد کو شہید کروادیا ۔ 1992 میں مرحوم صدر غازی ملت نے صدائے حق بلند کیا اور رابطہ کمیٹی کی دراڑ اور ایکشن کمیٹی کے قیام پر تنقید کی تھی ۔ بعد ازاں ایکشن کمیٹی اپنے ایکشن کے ذریعہ مسجد کو شہیدکروادیا ۔ جب مرحوم صدر تحریک غازی ملت نے اس کے خلاف احتجاج کیا تو جماعت سے انہیں معطل کیا گیا ۔ کیا یہ ثبوت کافی نہیں ۔ ڈاکٹر قائم خاں نے بابری مسجد کی شہادت کی تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ راجیو گاندھی کے دور اقتدار میں شیلا نیاس کروائی گئی ۔ اور نرسمہا راؤ کے دور اقتدار میں مسجد کو شہید کردیا گیا ۔ ڈاکٹر قائم خاں نے کہا کہ ایودھیا میں 18 ایسے منادر ہیں جس کے پجاریوں کا یہ دعویٰ ہے کہ رام کی پیدائش ان کی مندر میں ہوئی ۔ مولانا سید طارق قادری ایڈوکیٹ جنرل سکریٹری صوفی اکیڈیمی نے کہا کہ فسطائی طاقتیں اس ملک کے قانون اور عدالت العالیہ کے احکامات سے انکار کرتے ہوئے ملک کے قانون کا مذاق اڑایا ہے ۔ مولانا طارق قادری نے کہا کہ یہ جدوجہد ظالم اور مظلوم کے درمیان ہے ۔ جناب مجید اللہ خاں فرحت نے کہا کہ 6 دسمبر 1992 ہندوستان کی تاریخ کا وہ سیاہ باب ہے کہ اس دن ملک کے دشمن طاقتوں کے اہلکار دہشت گرد فاشست اور سنگھ پریوار نے اس ملک کی عدالت العالیہ کے احکامات کی پامالی کی اور سیکولرازم کا قتل کرتے ہوئے ملک کو خانہ جنگی کے ماحول میں جھونکنے کی سازش کے تحت ساڑھے چار سو سالہ قدیم بابری مسجد کو شہید کردیا ۔ انہوں نے کہا کہ مجلس بچاؤ تحریک کے پیش نظر مفادات نہیں مقاصد ہیں ۔ جناب فرحت خان نے کہا کہ اس ملک کا وزیر اعظم نریندر مودی گجرات میں 25 ہزار مسلمانوں کے قتل عام کا ذمہ دار ہے ۔ یہ جنگ انصاف اور نا انصافی کی جنگ ہے ۔ اس ملک کا مسلمان بابری مسجد کی شہادت کو بھولا نہیں ہے ۔ جناب امجد اللہ خاں خالد کارپوریٹر ایم بی ٹی نے مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ہندوستان میں جتنے بھی اسکینڈل ہوئے ان سب کو سزا دی گئی لیکن بابری مسجد کی شہادت کے ذمہ داروں کو آج تک کیفرکردار تک پہونچایا نہیں گیا ۔ جناب امجد اللہ خاں نے کہا کہ اقتدار رکھتے ہوئے اپنے اقتدار کا استعمال قوم و ملت کے مفاد میں نہیں کیا گیا تو اللہ کے سامنے جواب دینا پڑے گا ۔ انہوں نے کہا کہ اپنی طاقت کو اگر اپنوں کے خلاف ہی استعمال کیا گیا تو اس کا انجام انتہائی بھیانک ہوگا ۔ جناب خالد نے اپنے خطاب میں کہا کہ مجلس بچاؤ تحریک پرانے شہر کے مظلوم مسلمانوں کی طاقت ہے ۔ انہوں نے رکن اسمبلی راجہ سنگھ کے بیان اور مسلم قیادت کا دعوی کرنے والوں کے کالے کارناموں کا تفصیلی ریکارڈ پیش کیا ۔ اس جلسہ عام کو جناب الطاف نصیب خان ، جناب راشد ہاشمی ، الحاج سید طاہر سینئیر قائد کے علاوہ دیگر نے مخاطب کیا ۔ حافظ و قاری محمد نیازی کی قرات کلام پاک سے جلسہ کا آغاز ہوا ۔ حافظ و قاری نوال الرحمن نے نعت شریف پیش کی ۔ جلسہ کی کارروائی سکندر مرزا نے چلائی ۔ اس موقع پرعوام کی کثیر تعداد موجود تھی ۔۔

TOPPOPULARRECENT