Monday , December 18 2017
Home / شہر کی خبریں / بارش سے کسان اور صارفین کو نقصان

بارش سے کسان اور صارفین کو نقصان

حیدرآباد ۔ 18 ۔ اکٹوبر : ( سیاست نیوز ) : حالیہ بارش کے بعد کسان اور ترکاریوں کے خریدار دونوں مالی خسارہ کا شکار ہوگئے ہیں ۔ کپاس ، مکئی ، سویابین ، مونگ ، ماش جیسی فصلوں میں بارش کی وجہ سے خرابی پیدا ہونے پر مارکٹ تاجرین کسانوں کو قابل لحاظ قیمتیں ادا نہیں کررہے ہیں تو دوسری جانب بارش سے متاثرہ ترکاریوں میں 100 فیصد اضافہ ہونے سے عوام کافی پریشان ہیں ۔ شہر کی ترکاری منڈیوں ( رعیتو بازار ) میں ٹماٹر 60 روپئے فی کلو فروخت کیا جارہا ہے جب کہ خانگی مارکٹس میں ٹماٹر 70 ۔ 80 روپئے فی کلو فروخت کیا جارہا ہے ۔ اس کے علاوہ دیگر ترکاریوں کی قیمتیں بھی آسمان کو چھو رہی ہیں ۔ رعیتو بازاروں میں ہی بنیس 88 روپئے فی کلو فروخت ہورہی ہے ۔ اضلاع ، رنگاریڈی ، سنگاریڈی ، سدی پیٹ ، یادادری ، میں ایک ہی دن میں کئی گھنٹے لگاتار بارش کی وجہ سے ترکاری کے باغات پر بہت برا اثر پڑا ہے اور موسم میں رطوبت زیادہ ہونے کی وجہ سے ترکاری کے پودوں میں کیڑے آرہے ہیں اور ان کیڑوں کو ختم کرنے کے لیے زہریلی ادویہ کا چھڑکاؤ کیا جارہا ہے اور کسان ادویہ چھڑکاؤ کے بعد شام میں ہی ترکاری حاصل کر کے دوسرے تیسرے دن مارکٹ میں فروخت کے لیے لا رہے ہیں ۔ حالانکہ ادویہ چھڑکاؤ کے بعد ایک ہفتہ تک ترکاری حاصل نہیں کرنی چاہئے مگر کسانوں کا کہنا ہے کہ روزانہ بارش کی وجہ سے ترکاریوں پر داغ دھبے اور کیڑوں کی زیادتی کی وجہ سے ترکاریاں خراب ہورہی ہیں اور خراب ترکاریوں کو کوئی بھی نہیں خریدے گا ۔ علاوہ دیگر ریاستوں میں بھی بارش کی زیادتی کی وجہ سے ترکاری کی فصلوں کو کافی نقصان ہوا ہے اور ان ریاستوں سے ترکاری درآمدی میں کمی کی وجہ سے بھی ترکاری کی قیمتوں میں اضافہ ہوا ہے ۔۔

TOPPOPULARRECENT