Wednesday , November 21 2018
Home / دنیا / بالی ووڈ کے مداح بحرینی شاہی خاندان کے رکن کو برطانوی عدالت میں مقدمہ کا سامنا

بالی ووڈ کے مداح بحرینی شاہی خاندان کے رکن کو برطانوی عدالت میں مقدمہ کا سامنا

لندن ۔ 7 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) مصر کے ایک بزنس مین نے بحرین کے شاہی خاندان کے ایک رکن اور بالی ووڈ کے مداح کے خلاف 42.5 ملین امریکی ڈالر کے ہرجانہ کا دعویٰ کیا ہے۔ برطانوی ہائیکورٹ میں اس مقدمہ کی سماعت آئندہ ہفتہ سے شروع ہوگی۔ مصر کے بزنس مین احمد عادل عبداللہ احمد نے شیخ حمد عیسیٰ علی الخلیفہ پر 2015ء میں کئے گئے ایک زبانی سمجھوتہ کی خلاف ورزی کا الزام عائد کرتے ہوئے یہ مقدمہ دائر کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ شیخ حمد نے جو بحرین کے شاہ کے چچازاد بھائی بھی ہیں، احمد کے دعویٰ کے مطابق ایک سمجھوتہ کے تحت ان (احمد) کے ادارہ سی بی ایس سی ایونٹس سے قانونی طور پر کنٹراکٹ کیا تھا تاکہ ان کی طرف سے تیار کردہ فہرست کے مطابق بالی ووڈ کی 26 شخصیات سے نجی طور پر ملاقاتوں کا اہتمام کیا جاسکے۔ تاہم شیخ حمد نے چار بالی ووڈ ستاروں سلمان خاں، شاہ رخ خاں، رنویر سنگھ اور آدتیہ رائے کپور سے دبئی اور ممبئی میں ملاقاتوں کے بعد اس سمجھوتہ سے منحرف ہوگئے۔ احمد نے نقصانات پر ہرجانہ کے اپنے قانونی ادعا میں کہا ہیکہ شیخ حمد نے مزید طے شدہ ملاقاتوں سے انکار کردیا جس کے نتیجہ میں انہیں مالی نقصانات کا سامنا کرنا پڑا۔ شیخ حمد نے بعد میں اکشے کمار اور عامر خاں سے ملاقات کرنے سے معذرت کا اظہار کیا تھا۔ اس مقدمہ میں احمد کی وکالت کرنے والے لندن کے قانونی ادارہ زئی واال کمپنی کے منیجنگ پارٹنر پوانی ریڈی نے کہا کہ ’’یہ بڑا دلچسپ مقدمہ ہے جو بالی ووڈ اداکار ان سے ملاقاتوں کے اہتمام کیلئے مشرق وسطیٰ سے تعلق رکھنے والے دو فریقوں کے مابین لندن میں طے شدہ سمجھوتہ سے متعلق ہے‘‘۔ اس مقدمہ کے کسی بھی فریق نے بطور گواہ بالی ووڈ کے کسی ستارہ کو پیش کرنے کا فیصلہ نہیں کیا ہے کیونکہ شیخ حمد اور احمد کے درمیان طئے شدہ مبینہ سمجھوتہ سے ان کا کوئی تعلق نہیں تھا۔ شیخ حمد نے اپنی دفاع میں استدلال پیش کیا کہ وہ اس سمجھوتہ کو محض اس لئے ترک کرچکے تھے کہ احمد ان پر غیرمنصفانہ دباؤ ڈال رہے تھے اور بھاری رقومات کیلئے غیرضروری و ناجائز مطالبہ کررہے تھے۔ برطانوی عدالتوں میں زبانی سمجھوتوں کو بھی قابل اطلاق سمجھا جاتا ہے۔ اس مقدمہ میں اب جج اس بات کا پتہ چلانے کی کوشش کریں گے کہ آیا درحقیقت اس معاہدہ کی خلاف ورزی بھی ہوئی ہے۔

TOPPOPULARRECENT