Saturday , November 25 2017
Home / شہر کی خبریں / بانسواڑہ کی وقف اراضی پر مندر تعمیر کا وقف سروے میں ثبوت

بانسواڑہ کی وقف اراضی پر مندر تعمیر کا وقف سروے میں ثبوت

وقف انسپکٹر اور مقامی مسلمانوں کو خاموش رہنے کا دباؤ ، وزیر اور ان کے حامیوں کی ہراسانی
حیدرآباد۔ 11۔ اپریل ( سیاست نیوز) نظام آباد کے بانسواڑہ اسمبلی حلقہ میں گزشتہ دنوں تعمیر کی گئی تلنگانہ تروملا دیوستھانم کی اراضی میں اوقافی اراضی کو بھی شامل کرلیا گیا۔ اس کا ثبوت وقف سروے میں حاصل ہوچکا ہے۔ ضلع سے تعلق رکھنے والے وزیر پوچارم سرینواس ریڈی کی دلچسپی سے بانسواڑہ کے بیرکور منڈل کے موضع تماپور میں وسیع و عریض مندر تعمیر کیا گیا جس میں 2 اپریل کو چیف منسٹر کے چندر شیکھر راؤ نے خصوصی پوجا کی۔ مندر کی تعمیر کیلئے اوقافی اراضی کا استعمال کیا گیا جو درگاہ حضرت مولا علیؒ کے تحت ہے۔ چیف اگزیکیٹیو آفیسر وقف بورڈ محمد اسد اللہ نے مقامی مسلمانوں کی جانب سے نمائندگی پر متعلقہ وقف انسپکٹر عبدالقادر معائنہ کی ہدایت دی۔ وقف انسپکٹر نے اراضی کا معائنہ کیا اور اس بات کی تصدیق کی کہ مسجد کی تعمیر کیلئے جو اراضی حاصل کی گئی ہے، اس میں اوقافی زمین بھی شامل ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ وقف انسپکٹر اور مقامی مسلمانوں کو اس مسئلہ پر لب کشائی سے روکنے کیلئے زبردست دباؤ ڈالا جارہا ہے ۔ وقف انسپکٹر نے سروے کے بعد وقف بورڈ کو حقائق کے بارے میں اطلاع دیں۔ بتایا جاتاہے کہ انسپکٹر کی رپورٹ جلد ہی سی ای او کو حاصل ہوجائے گی۔ وقف بورڈ کے ریکارڈ کے مطابق گزٹ میں اس درگاہ کے تحت 85 گز اراضی ہے جس میں سے کچھ حصہ مندر کی تعمیر کیلئے استعمال کرلیا گیا۔ اگر مندر کے اطراف توسیعی کام انجام دیا جائے تو مکمل وقف اراضی مندر کے تحت ہوجائے گی۔ اس سلسلہ میں مقامی مسلمانوں میں کافی بے چینی پائی جاتی ہے ۔ چیف منسٹر نے مندر کی توسیع کیلئے 390 ایکر اراضی اور 10 کروڑ روپئے کی فراہمی کا اعلان کیا ہے ۔ بتایا جاتا ہے کہ ریاستی وزیر کے حامیوں کی جانب سے وقف انسپکٹر اور مقامی مسلمانوں کو ہراساں کیا جارہا ہے۔ مسلمانوں کا کہنا ہے کہ وقف اراضی کا ایک گز بھی کیوں نہ ہو اسے مندر کیلئے استعمال کی اجازت نہیں دی جاسکتی۔ اوقافی جائیدادوں کے تحفظ کا دعویٰ کرنے والی سیاسی قیادت کی خاموشی معنیٰ خیز ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ پوچارم سرینواس ریڈی وقف بورڈ کو یہ تیقن دیں گے کہ حاصل کردہ اراضی کی قیمت ادا کردی جائے گی۔ چیف اگزیکیٹیو آفیسر وقف بورڈ نے بتایا کہ انسپکٹر کی رپورٹ ملنے کے بعد ضروری کارروائی کی جائے گی۔

TOPPOPULARRECENT