Friday , January 19 2018
Home / ہندوستان / بدایوں مقدمہ میں دو بہنوں نے خودکشی کی : سی بی آئی

بدایوں مقدمہ میں دو بہنوں نے خودکشی کی : سی بی آئی

نئی دہلی؍ بدایوں۔ 27 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) بدایوں مقدمہ کو سنسنی خیز موڑ دیتے ہوئے سی بی آئی نے آج اترپردیش پولیس کے عصمت ریزی و قتل پہلو کو مسترد کردیا اور کہا کہ دونوں جواں سال لڑکیوں نے درخت سے لٹک کر خودکشی کی ہے۔ سی بی آئی نے اس واقعہ کی جون میں تحقیقات شروع کی تھی، وہ آئندہ ہفتہ ٹرائل کورٹ میں قطعی رپورٹ پیش کرے گی۔ سی بی آئی ذرائع

نئی دہلی؍ بدایوں۔ 27 نومبر (سیاست ڈاٹ کام) بدایوں مقدمہ کو سنسنی خیز موڑ دیتے ہوئے سی بی آئی نے آج اترپردیش پولیس کے عصمت ریزی و قتل پہلو کو مسترد کردیا اور کہا کہ دونوں جواں سال لڑکیوں نے درخت سے لٹک کر خودکشی کی ہے۔ سی بی آئی نے اس واقعہ کی جون میں تحقیقات شروع کی تھی، وہ آئندہ ہفتہ ٹرائل کورٹ میں قطعی رپورٹ پیش کرے گی۔ سی بی آئی ذرائع نے بتایا کہ قطعی رپورٹ میں لڑکی کے والد ، چچا اور کلیدی گواہ نظرو کے جو دور کا رشتہ دار ہے ، کردار کے بارے میں بھی سوالات اٹھائے جائیں گے اور فیصلہ عدالت پر چھوڑ دیا جائے گا۔ ان دو لڑکیوں کے ارکان خاندان نے بدایوں میں سی بی آئی کی رپورٹ کو مسترد کردیا ہے ۔ یہ دونوں لڑکیاں چچا زاد بہنیں تھیں۔ ان کے ارکان خاندان نے آزادانہ اور غیرجانبدارانہ تحقیقات یقینی بنانے وزیراعظم نریندر مودی سے مداخلت کی درخواست کی ہے۔ ایک لڑکی کے والد نے کہا کہ سی بی آئی نے یہ وضاحت نہیں کی کہ انہوں نے خودکشی کیوں کی ،

اگر ہمارے ساتھ انصاف نہ کیا جائے تو ہم خود کو ہلاک کرلیں گے۔ یہ واقعہ جاریہ سال 28 مئی کو منظر عام پر آیا تھا جہاں 14 اور 15 سال کی دو لڑکیاں گمشدگی کے دوسرے ہی دن آم کے درخت سے لٹکتی ہوئی پائی گئی تھیں۔ لڑکی کے والد نے کہا کہ آخر یہ کس طرح ممکن ہے کہ دونوں مل کر ایک بلند درخت سے خودکشی کرسکتی ہیں۔سی بی آئی کا کہنا ہے کہ تقریباً 40 سائنٹفک رپورٹس کی بنیاد پر وہ اس نتیجہ پر پہنچی کہ دونوں لڑکیوں کی عصمت ریزی اور قتل نہیں کیا گیا جیسا کہ ایف آئی آر میں درج کیا گیا ہے۔ سی بی آئی کے ترجمان کنچن پرساد نے بتایا کہ ایجنسی کی یہ رائے ہے کہ دونوں لڑکیوں نے انتہائی اقدام اس وقت کیا جب نظرو نے بڑی بہن کو کلیدی ملزم پپو یادو کے ساتھ قابل اعتراض حالت میں دیکھ لیا اور اس وقت چھوٹی بہن باہر چوکسی اختیار کئے ہوئے تھی۔ ذرائع کا کہنا ہے کہ ان لڑکیوں کو خوف و اندیشہ لاحق ہوگیا چنانچہ ممکن ہے کہ انہوں نے سماج کے ڈر سے خودکشی کرلی۔ اس دوران دونوں بہنوں کے ارکان خاندان نے سپریم کورٹ سے رجوع ہونے کا اعلان کیا ہے۔ چیف منسٹر اترپردیش اکھلیش یادو نے میڈیا پر شدید تنقید کی اور کہا کہ حکومت کی چھوٹی سی غلطی کو ضرورت سے زیادہ اچھالا گیا ہے۔

TOPPOPULARRECENT