Saturday , December 15 2018

بدعنوانی کے مجرموں کے خلاف کارروائی‘خامنہ ای کا مطالبہ

دبئی، 12 اگست (سیاست ڈاٹ کام ) ایران کے سپریم مذہبی رہنما آیت اللہ علی خامنہ ای نے ملک میں مالی بدعنوانی کے قصورواروں کے خلاف فوری قانونی کارروائی کرنے کا اعلان کیا ہے ۔ ایران کے سرکاری ٹیلی ویژن چینل نے ہفتہ کو اس بات کی اطلاع دی۔مسٹر خامنہ ای نے کہا کہ عدالتوں کا مقصد مالی بدعنوانی کے قصورواروں کو جلد سے جلد سخت سزا دینا ہونا چاہئے ۔ایرانی عدلیہ کے سربراہ آیت اللہ صادق امولي لاریجانی نے مسٹر خامنہ ای کو ایک خط لکھ کر کہا کہ ملک میں اقتصادی جنگ جیسے حالات ہیں۔بڑھتی ہوئی ہوئی قیمتوں اور مبینہ مالی بدعنوانی کو لے کر عوام کے درمیان اشتعال اور ناراضگی کے پیش نظر ایران کے سپریم مذہبی رہنما کا یہ بیان کافی اہم مانا جا رہا ہے ۔مسٹر لاریجانی نے اپنے خط میں کہا کہ ایران کی موجودہ مالی حالت اقتصادی جنگ جیسے حالات کی طرح ہے ۔ بدعنوانی کے مقدمات سے جلد سے جلد نمٹا جائے اس کے لئے انہوں نے مسٹرخامنہ ای سے خصوصی عدالتوں کے قیام کرنے کا بھی مطالبہ کیا ہے ۔ امریکی پابندیوں کی وجہ سے ایرانی کرنسی ریال میں اپریل ماہ سے ہی مسلسل گراوٹ دیکھی جا رہی ہے ۔ اپنی بچت کی حفاظت کے لئے ایرانی عوام کے درمیان ڈالر کی مانگ کافی بڑھ گئی ہے ۔ بڑھی ہوئی قیمتوں کے علاوہ منافع اور بدعنوانی کے خلاف لوگ حکومت کے خلاف احتجاج و مظاہرہ نعرے بازی کر رہے ہیں۔ایران کے مرکزی بینک اور عدلیہ نے کرنسی کی قدرمیں مسلسل گراوٹ کے لئے مبینہ دشمنوں کو ذمہ دار ٹھہرایا ہے ۔ عدلیہ کے مطابق کرپشن کے الزام میں مرکزی بینک کے ایک سابق افسر سمیت 40 سے زائد افراد کو گرفتار کیا گیا ہے ۔عدلیہ نے ملک میں بڑھتی ہوئی ہوئی بدامنی کو فروغ دینے کے لئے امریکہ اور اسرائیل کے علاوہ اپنے روایتی حریف سعودی عرب کو ذمہ دار ٹھہرایا ہے ۔امریکہ کے ایران جوہری معاہدہ سے الگ ہونے کے بعد دونوں ممالک کے درمیان تعلقات کافی تلخ ہوئے ہیں۔ مئی میں مسٹر ٹرمپ نے اس بین الاقوامی جوہری معاہدے سے امریکہ کے الگ ہونے کا اعلان کیا تھا۔امریکی وزارت خارجہ کے مطابق ایران پر حالیہ پابندی لگائے جانے کی وجہ سے اس کا سونے اور دیگر اہم معدنیات کے علاوہ گریفائٹ، ایلومینیم، اسٹیل اور کوئلے سے متعلق کاروبار بھی متاثر ہوں گے ۔امریکی پابندیوں کا اثر ایران کی صنعت میں کام آنے والے سافٹ ویئر پر بھی ہوگا۔

TOPPOPULARRECENT