Monday , January 22 2018
Home / جرائم و حادثات / بدنام منگوڑ بستی پر پولیس کا اچانک دھاوا

بدنام منگوڑ بستی پر پولیس کا اچانک دھاوا

حیدرآباد /23 ستمبر ( سیاست نیوز ) سائبرآباد پولیس کی طرز پر سٹی پولیس نے بھی بستیوں میں دھاوے کرنے کا آغاز کردیا ہے ۔ جرائم پر قابو پانے اور مجرمین کی تلاش اور ان کے رہائشی ٹھکانوں کو بے نقاب کرنا اس مہم کا اہم مقصد بتایا جارہا ہے ۔ ویسٹ زون میں اس مہم کا کل رات حبیب نگر کے افضل ساگر علاقہ سے آغاز ہوا ۔ رات دیر گئے پولیس نے منگوڑ بستی کو ا

حیدرآباد /23 ستمبر ( سیاست نیوز ) سائبرآباد پولیس کی طرز پر سٹی پولیس نے بھی بستیوں میں دھاوے کرنے کا آغاز کردیا ہے ۔ جرائم پر قابو پانے اور مجرمین کی تلاش اور ان کے رہائشی ٹھکانوں کو بے نقاب کرنا اس مہم کا اہم مقصد بتایا جارہا ہے ۔ ویسٹ زون میں اس مہم کا کل رات حبیب نگر کے افضل ساگر علاقہ سے آغاز ہوا ۔ رات دیر گئے پولیس نے منگوڑ بستی کو اپنے گھیرے میں لیتے ہوئے مجرمین کے مکانات کی تلاشی لی ۔ ڈپٹی کمشنر ویسٹ زون مسٹر ستیہ نارائنا کی قیادت میں انجام دی گئی اس کارروائی کے دوران پولیس نے 45 افراد بشمول 13 خاتون مشتبہ مجرمین کو اپنی حراست میں لے لیا ۔ اس کے علاوہ حالیہ دنوں نامپلی حدود میں پیش آئے قتل کے دو واقعات کو بھی حل کرلیا اور قاتلوں کو گرفتار کرلیا ۔ جو فٹ پاتھ پر موجودہ افراد کو پتھر ڈالکر قتل کردیا کرتے تھے ۔ منگوڑ بستی ملے پلی کی بدنام زمانہ بستی تصور کی جاتی ہے ۔ تقریباً 2 کیلومیٹر کے احاطہ پر محیط اس بستی میں 5000 آبادی پائی جاتی ہے اور عادی سارقین رہزنوں ، خاتون رہزنوں اور مجرمین کی پناہ گاہ تصور کی جاتی ہے ۔ سابق میں جب بھی کبھی پولیس نے اس علاقہ میں دھاوا کرنے یا کسی ملزم کو گرفتار کرنے کی کارروائی انجام دی تو منگوڑ بستی میں پولیس کو پتھراؤ کا سامنا کرنا پڑا تھا ۔ اس بستی میں سوائے ٹوہیلرس کے کوئی بھی گاڑی نہیں جاسکتی ۔ سابقہ تجربات کو دیکھتے ہوئے پولیس نے مکمل تیاری کرلی تھی اور رات دیر گئے بستی پر اچانک دھاوا کردیا اور مجرمین کو گھروں سے نکلنے اور فرار ہونے کا موقع نہیں دیا ۔ اس بستی میں داخل ہونے کے بعد راستے میں پولیس نے ان راستوں کی ناکہ بندی کردی اور بھاری جمعیت کے ساتھ منگوڑ بستی میں داخل ہوگئی ۔ پولیس کے منگوڑ بستی میں داخلہ کے بعد منگوڑ طبقہ نے اپنے طور پر آواز چیخ پکار اور اوچھی حرکتیں شروع کردیں ۔ کسی نے اقدام خودکشی کی کوشش کی تو کسی نے اپنے بچوں کو فرش پر پٹک کر ہلاک کردینے کی پولیس کو دھمکی دی اور کسی نے اپنے آپ کو ہلاک کرنے کی پولیس کو دھمکی دی تاہم ڈی ایس پی کی دور اندیشی اور کونسلنگ سے یہ شرپسند افراد خاموش ہوگئے ۔ تاہم ڈی ایس پی انہیں اس بات کی بھی دھمکی دی تھی کہ اگر وہ مجرمین کی گرفتاریوں اور پولیس کے کام میں رکاوٹ بن کر حائل ہوں گے انہیں سخت قانونی کارروائی کا سامنا کرنا ہوگا ۔ بعد ازاں ڈی سی پی ویسٹ زون نے بتایا کہ منگوڑ بستی کے ویسٹ زون کے علاقہ میں شروعات کی گئی جبکہ آئندہ پولیس کی کارروائی دیگر علاقہ میں جاری رہے گی ۔ انہوں نے اشارہ دیتے ہوئے کہا کہ آئندہ دھول پیٹ اور بورا بنڈہ ، کرشنا نگر میں دھاوے انجام دئے جائیں گے ۔ ڈی سی پی ویسٹ زون نے بتایا کہ رات دیر گئے سے صبح کے آغاز تک منگوڑ بستی میں دھاوے جاری رہے ۔ اس دوران 15 بدنام زمانہ ٹولیوں کے افراد بشمول خاتون رہزنوں کو بے نقاب کردیا گیا ۔ انہوں نے بتایا کہ ویسٹزون پولیس کے علاوہ اس دھاوے میں سی سی ایس کوئیک ایکشن ٹیم اور ٹاسک فورس کے علاوہ تلنگانہ اسپیشل پولیس بشمول خاتون پولیس عملہ بھی موجود تھا ۔ انہوں نے بتایا کہ گڑمبہ ، گانجہ ، شراب کے علاوہ 61 ہزار نقد رقم روڈی شیٹرس کو بھی حراست میں لے لیا گیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ کئی مقدمات کی یکسوئی عمل میں آئی اور عادی سارقین رہزنوں کو گرفتار کرلیاگیا ۔ اس دھاوے میں چار اسسٹنٹ کمشنر آف پولیس 25 انسپکٹرس 50 سب انسپکٹرس 150 پولیس کانسٹیبلز اور سی سی ایس کی 5 خصوصی ٹیمیں ۔ آرمس فورس 3 ، 2 خواتین پولیس کے پلاٹونس اسپیشل پولیس اور ہوم گارڈ کا پلاٹونس موجود تھا ۔ ڈی سی پی نے بتایا کہ حراست میں لئے گئے افراد کی انگلیوں کے نشانات کے نمونوں کو اسٹیٹ کرائم ریکارڈ بیورو کو روانہ کیا جاچکا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT