Saturday , November 25 2017
Home / مذہبی صفحہ / بد شگونی اور ماہ صفر

بد شگونی اور ماہ صفر

حضرت نبی اکرم سیدنا محمد رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم کی بعثت مبارکہ جس ماحول و معاشرہ میں ہوئی، وہ با لکل کفر و شرک کی تاریکیوں میں ڈوبا ہو ا اور توہمات و باطل افکار و اعتقادات کی اسیری میں جکڑا ہو ا تھا، عقیدۂ توحید سے محرومی نے اس کو بد شگونی کے عمیق غاروں میں ڈھکیل دیا تھا، اپنے خالق ومالک کو بھولے ہوئے اس کے در سے ٹوٹے ہوئے انسان در در کی ٹھوکریں کھا رہے تھے، خوف خدا و خوف آخرت سے بے نیازی نے ان کو ہر چھوٹی بڑی حقیر سے حقیر ترین شئی سے ڈر و خوف میں مبتلاء کر دیا تھا، اسی ڈر و خوف کے زیر اثر مشرکین عرب ماہ صفر اور ماہ شوال کو منحوس سمجھتے تھے، اور ان مہینوں میں اسی بد اعتقادی کی وجہہ نکاح و شادی کر نے سے سخت احتراز کرتے، کسی نئے کام کے آغاز یا کسی مہم کے سر انجام دینے سے باز رہتے تھے ان کا یہ عقیدہ تھا کہ ان مہینوں کے نحس ہو نے کی وجہہ ان مہینوں میں کیا جانے والا کوئی کام کامیابی سے ہمکنار نہیں ہو سکتا، اس رسم بد کی بیخ کنی کیلئے اسلام نے ماہ شوال کو مکرم اور ماہ صفر کو مظفر کی صفت سے متصف کیا ۔ دل و دماغ سے اس بد اعتقادی کے جراثیم کوکرید کر نکال باہر کر نے کیلئے مـزید عملی اقدامات کئے۔چنانچہ حضرت نبی مکرم سید عالم سیدنا محمد رسول اللہ ﷺنے حضرت عائشہ صدیقہ رضی اللہ عنہا (اُم المومنین) سے ماہ شوال المکرم میں نکاح فر ما یا، اُم المومنین رضی اللہ عنہا فر ما تی ہیں کہ مجھ سے زیادہ اور کو ن خوش نصیب ہو سکتا ہے۔ یعنی کسی دن یا مہینہ میں کوئی نحوست ہو تی تو پھر مجھ کو یہ مقام بلندکس طرح مل سکتا تھا اور یہ مرتبت رفیعہ کس طرح میرے حصّہ میں آ سکتی تھی۔ معاشرہ سے اس بد شگونی و بد اعتقادی کے آثار کابالکلیہ خاتمہ کرنے کیلئے     اُم المومنین رضی اللہ عنہا اپنے خاندان کی لڑکیوں کے نکاح کیلئے ماہ شوال المکرم کا انتخاب فر ماتیں چونکہ دور جاہلیت کے بے بنیاد اعتقادات و توہمات میں سے ایک ’’ماہ صفر‘‘ کا نحس ہونا بھی تھا اس لئے ماہ صفر کے بارے میں دریافت کیا گیا کہ مشرکین عرب ماہ صفر کو منحوس سمجھتے ہیں توآپ ﷺ نے ایک مختصر اور بلیغ جملہ ’’لا صفر‘‘ یعنی ماہ صفر میں کوئی نحوست نہیں ارشاد فر ما کر فکر و فہم کو جلا بخشی ہے اور اس بد شگونی و بد اعتقادی کے جال میں محبوس معاشرہ کو چھٹکارا دلایا ہے۔
ماہ صفر المظفر کو تیرہ تیزی کا مہینہ بھی کہتے ہیں، بعض ضعیف الاعتقاد اس ترقی یافتہ دور میں آج بھی اس مہینہ کو مصائب و آلام ، حوادث و آفات کے نزول کا مہینہ مانتے ہیں اور اس ماہ کے نحس ہو نے کا اعتقاد رکھتے ہیں، بعضوں نے من گھڑت روایات کے حوالے سے جو بعض غیرمستند کتب میں منقول ہیں اس بد عقیدگی کو مضبوط و مستحکم کر نے کی کوشش کی ہے۔ ان میں سے ایک مو ضوع روایت ،فکر صحیح و صحت اعتقاد سے محروم افراد بیا ن کر تے ہیں کہ ’’سال تمام میں جتنی بلائیں نازل ہو تی ہیں اُتنی ماہ صفر میں نازل ہو تی ہیں اور ماہ صفر میں نازل ہو نے والی ساری بلائیں صرف تیرہ تیزی یعنی تیرہ صفرالمظفر کے دن نازل ہو تی ہیں،،۔
وور جاہلیت میں بعض عربوں کا ماننا تھا کہ صفر سے مراد وہ سانپ ہے جو ہر ایک انسان کے  بطن میں ہو تا ہے اور شدید بھوک کے وقت ڈستا ہے اور ایذاء پہونچاتا ہے، بعضوں کا خیا ل تھا کہ صفر سے مراد بطن کے وہ جراثیم ہیں جو بوقت بھوک کاٹتے ہیں، اس کی وجہہ آدمی کا رنگ زرد ہو سکتا ہے اس سے ہلاکت بھی ہو سکتی ہے، اور اس کے اثرات بد دوسروں میں سرایت کر سکتے ہیں، اس لئے بھی وہ’’صفر‘‘ کو منحوس جانتے تھے۔

حضرت نبی مکرم سید نا محمد رسولﷺ کا یہ مبارک مختصر و جامع ارشاد ’’لاصفر‘‘ (ماہ صفر میں کوئی نحوست نہیں) نے اس طرح کی من گھڑت روایات اور اس کے نتیجہ میں پیدا شدہ بد اعتقاد ی و بد شگونی کے جاہلانہ افکار پر خط تنسیخ پھیر دیا ہے۔ پیغمبر انسانیت رحمۃ للعالمین سیدنا محمد رسولﷺ نے حجۃ الوداع کے موقع پر جو خصوصی پیغام قیامت تک آنے والی ساری انسانیت کیلئے دیا ہے وہ ایک عظیم منشور ہے جس کی عظمت کو غیر مسلم مفکرین نے بھی تسلیم کیا، اور مستشرقین نے بھی اس سے روشنی حاصل کی ہے، اقوام متحدہ کے دستور میں بھی اس سے بھر پور استفادہ کیا گیا ہے۔اس خطبہ ٔبلیغہ میں بد شگونی و بد اعتقادی کے جاہلانہ رسوم و عادات کے بارے میں ارشاد فرما یا کہ’’اے لو گو جہالت کے جتنے رسوم تھے ان سب کو اپنے قدموں تلے روندتا ہوں، تمہارے درمیان دو چیزیں ایک قرآن پاک دوسری میری سنت چھوڑے جا رہا ہوں جب تک تم ان دونوں کو تھامے رہوگے کبھی گمراہ نہ ہوگے تم سب ایک اللہ کے بندے اور ایک باپ یعنی آدم علیہ السلام کی اولا د ہو۔
ما ہ و سا ل یا دنو ں میں نحو ست کو ما ننا گو یا زما نے کو بر ا کہناہے  چو نکہ زما نے کو بر ا کہنا اللہ سبحا نہ کو بر ا کہنے اور اسکی قدرت و سلطنت میںنقص ثا بت کرنے کے مترا دف ہے۔ کیو نکہ زما نہ کو ئی اور شئی نہیں بلکہ وہ تو اللہ سبحا نہ کا بنا یا ہو ا ہے حدیث قدسی میں ار شا د ہے

’’لا تسبو ا الدھر ا نا الدھر‘‘
ایما ن کی نعمت سے مشرف وہ خو ش نصیب بھی ہیں کہ کلمہ اسلام نے انکے اندر اللہ سبحا نہ کی وحدا نیت‘ اسکی ربو بیت اور اسکے حا کم مطلق ہو نے کا عقیدہ را سخ کر دیا ہے۔ اس کلمہ کازبان سے اقرار اور دل کی گہرا ئیوں سے اس تصدیق کے بعد وہ کسی اور میں نفع و نقصا ن کی طا قت کو ہر گز تسلیم نہیںکرتے قر آ ن پا ک کے اس ار شا د پر وہ کا مل یقین رکھتے ہیں ’’ اور اگر اللہ تم کو کو ئی تکلیف پہو نچا ئے اور مصیبت میں مبتلا ء کر دے تو بجز اس کے اسکو رد کرنے والا  اورتم سے اسکے فضل کو دور کرنے والا کوئی نہیں وہ اپنا فضل اپنے بندوںمیں سے جس پر چا ہے نچھا ور کردے اور وہ بڑی مغفرت اور بڑی رحمت و ا لا ہے۔( یو نس؍۱۰۷)
اللہ کے نبی سیدنا محمدرسو ل اللہ  ﷺ کی کئی ایک جا مع دعا ئیں ہیں جو ایمان و ا لوں کے حرز جان ہیں جو عبدیت و بندگی کے پاکیزہ جذبات  اور اسکی عظمت وہ قدرت کے اعتراف و اظہا رسے لبریز ہیںان میں سے ایک دعا ء کے کلما ت یہ ہیں  ’’ ما شاء اﷲ کا ن ومالم یشاء لم یکن‘‘  اللہ سبحا نہ جو چا ہے وہی ہو تا ہے اور جو نہ چا ہے نہیں ہو تا۔ ان جیسے کما ل ایمان سے متصف اللہ کے نیک بندے ہر آن اللہ کے حضور رجو ع رہتے ہیں‘ حو ا دث و آ لا م ضرر و نقصا ن ہر حا ل میں اسی سے لو لگا ئے رہتے ہیں ‘حق کے سو ا کسی اور کی طرف انکی نظر اٹھنے نہیں پا تی‘ اللہ پر تو کل و اعتما د انکو  را ہ حق سے بھٹکنے نہیں دیتا‘ نعمتوں پر شکر گزا ری مصیبت و پریشا نی میں صبر و بند گی انکی زند گی کی پہچا ن ہو تی ہے۔ البتہ وہ مسلمان جو مومن و مسلم ہو نے کے باوجود کتاب و سنت سے دوری ،علم صحیح و تربیت اسلامی سے محرومی کی وجہہ جاہلانہ اوہام و خرافات کاشکا ر ہیں ماہ صفر کے حوالے سے جن جاہلانہ تصورات و اعمال اور فرسودہ افکار و اعتقادات و توہمات کے اسیر ہیں ان کیلئے قرآن کا پیغام یہ ہے۔ ’’ اے ایمان والو اسلام میں پورے پورے داخل ہو جاؤ اور شیطان کے قدم بقدم نہ چلو وہ تو تمہارا کھلا دشمن ہے۔ (البقرہ / ۲۰۸)
موجودہ مسلم سماج اگر اس آیت پاک کو سرمہ بصیرت بنالے تو پھر سماج سے فر سودہ رواجات، بدعات و خرافات دور ہو سکتے ہیںاور جاہلانہ افکار کی اسیری سے وہ رہائی پا سکتے ہیں۔ ایمان والوں کا فرض ہے کہ وہ اسلامی اعتقادات و اعمال کا عملی پیکر بنیں، اور فر سودہ رسوم و رواجات، بیجا اوہام و خرفات ، خلاف اسلام عادات وبدعات کے شکنجہ میں جکڑی ہو ئی انسانیت کو عملی پاکیزہ اسلامی فطری راہ دکھا کر اس سے اس کو رہائی دلائیں۔

TOPPOPULARRECENT