Monday , November 20 2017
Home / دنیا / برطانیہ میں باحجاب مسلم خواتین سے امتیاز

برطانیہ میں باحجاب مسلم خواتین سے امتیاز

ملازمت کے معاملہ میں نظرانداز کئے جانے کا رجحان
لندن ۔ 11 اگست (سیاست ڈاٹ کام) برطانیہ میں حجاب والی مسلم خواتین کو نوکریوں کے معاملہ میں بالعموم نظرانداز کیا جارہا ہے جس کی وجہ سے سفیدفام عیسائی خواتین کے مقابلہ میں اس برادری کی 71 فیصد خواتین بیروزگار ہوجانے کا خدشہ ہے، برطانوی ایم پیز کی ایک نئی رپورٹ میں آج یہ انتباہ دیا گیا۔ دارالعوام کی خواتین اور مساوات کمیٹی نے یہ نتیجہ اخذ کیا ہیکہ مسلم خواتین برطانوی سماج میں سب سے زیادہ محروم گروپ ہے اور سال کے ختم سے قبل عدم مساوات سے نمٹنے کیلئے کوئی نیا حکومتی منصوبہ درکار ہے۔ مختلف پارٹیوں کی نمائندگی والی کمیٹی نے کہا کہ برطانیہ میں مسلم خواتین کو تین قسم کی پریشانیوں سے گذرنا پڑ رہا ہے۔ انہیں سب سے پہلے صنف نازک ہونے کی وجہ سے کچھ پریشانی ہوتی ہے پھر نسلی اقلیت سے تعلق رکھنے اور مزید یہ کہ مسلم ہونے پر بھی نظرانداز کیا جارہا ہے۔ رپورٹ میں کہا گیا کہ مسلم خواتین پر اسلاموفوبیا کے اثر کو کم تر نہیں سمجھا جانا چاہئے کیونکہ اس کے نتیجہ میں مسلم خواتین میں بیروزگاری کی شرح بڑھے گی حالانکہ وہ تعلیم اور زبان کے ہنر کے معاملہ میں سفیدفام عیسائی خواتین سے کچھ کم نہیں ہے۔ برطانوی خواتین نے 69 فیصد ملازمت کی شرح پائی جاتی ہے جبکہ مسلم خواتین میں یہ شرح 35 فیصد ہے۔ قومی سطح پر دیکھا جائے تو 5 فیصد خواتین بیروزگار ہیں اور کام کی متلاشی ہیں لیکن مسلم خواتین میں یہ شرح 16 فیصد ہوجاتی ہے۔ عمومیت سے خواتین پر نظر ڈالی جائے تو 27 فیصد خواتین معاشی طور پر بے عمل یا بیروزگار ہے اور گذشتہ سال کام کی تلاش بھی نہیں کی۔ تاہم یہی تعداد مسلم خواتین میں 58 فیصد ہے۔

TOPPOPULARRECENT