Sunday , December 17 2017
Home / دنیا / برطانیہ کی ٹیوب ٹرین میںدھماکے ‘ دوسرا ملزم گرفتار

برطانیہ کی ٹیوب ٹرین میںدھماکے ‘ دوسرا ملزم گرفتار

صدرامریکہ کو وزیراعظم برطانیہ کی جھڑکی بالکل درست ‘ معتمد داخلہ کا بیان

لندن ۔ 17ستمبر ( سیاست ڈاٹ کام ) برطانیہ کی پولیس نے ایک دوسرے شخص کو لندن کی زیرزمین ٹرین میں بم دھماکوں کے سلسلہ میں گرفتار کرلیا ۔ جن میں 30 افراد زخمی ہوئے تھے ‘ معتمد داخلہ نے کہاکہ نئی گرفتاری سے پتہ چلتا ہے کہ حملہ آور ’’ تنہا ‘‘ نہیں تھا ۔ اسکاٹ لینڈ یارڈ کے انسداد دہشت گردی کمان تحقیقاتی شعبہ نے کہا کہ جمعہ کے حملہ کی ذمہ داری دولت اسلامیہ گروپ نے قبول کی ہے ۔ ایک 21سالہ شخص کو ہومسلو ( مغربی لندن ) سے کل رات دیر گئے گرفتار کیا گیا ہے ۔ قبل ازیں کل 18سالہ شخص کو ساحلی علاقہ ڈاور میں گرفتار کیا گیاتھا ۔ کسی بھی مشتبہ شخص کا نام ظاہر نہیں کیا گیا ۔ دونوں مشتبہ افراد برطانیہ کے قانون دہشت گردی کے تحت زیر حراست ہیں اور جنوبی لندن پولیس اسٹیشن میںان سے تفتیش کی جارہی ہے ۔ معتمد داخلہ ایمبرروڈ نے بی بی سی سے کہا کہ دوسری گرفتاری سے پتہ چلتا ہے کہ حملہ آور اکیلا نہیں تھا بلکہ جیسے جیسے انکشافات ہوتے جارہے ہیں اور ہماری تحقیقات جاری ہیں ‘ ہم اس بات کو یقینی بنائیں گے کہ یہ بنیاد پرستی کیسے پیدا ہوئی ۔ وزیر داخلہ نے صدر امریکہ ڈونالڈ ٹرمپ کے اس تبصرے کو بھی مسترد کردیا کہ صیانتی معلومات کا افشاء ہواہے ۔ انہوں نے دہشت گردی کے بارے میں اپنے ٹوئیٹر پر یہ تبصرہ تحریر کیا تھا ۔ روڈ نے مزید کہا کہ وزیراعظم برطانیہ تھریسامے کی جانب سے اس معاملہ میں ٹرمپ کی سرزنش کی گئی ہے ۔ ایسے تبصرے اور قیاس آرائیاں کارروائی کے دوران مددگار ثابت نہیں ہوتیں اور صدر امریکہ کا تبصرہ بھی قیاس آرائی ہی تھا ۔ یہ مکمل طور پر قیاس آرائی تھی ۔ دو کروڑ 40لاکھ پاؤنڈ نئی حکومت کی رقم انسداد دہشت گردی کارروائیوں پر ملک گیر سطح پر صرف ہورہی ہے ۔ حملہ میں 30 افراد زخمی ہوئے جن میں سے بعض افراد ترقی یافتہ دھماکو آلہ کے زیر زمین ریلوے میں پھٹ پڑنے سے زخمی ہوئے ۔ یہ واقعہ مصروف اوقات میں زیرزمین ریلوے اسٹیشن پارسنس گرین پر پیش آیاتھا ۔ ملک گیر سطح پر پولیس اس بزدلانہ حملہ کے ذمہ داروں کو تلاش کررہی ہے ۔ انسداد دہشت گردی کے ماہرین اور آتش اسلحہ کے ماہرین نے سن بیری ‘ سرے اور جنوب مشرقی انگلستان میں رہائشی علاقوں کا احتیاطی اقدام کے طور پر تخلیہ کروا دیا تھا لیکن دھمکی ہنوز سنگین برقرار ہے ۔

TOPPOPULARRECENT