برطانیہ کے دفتر داخلہ کو وجے مالیا کی ہندوستان حوالگی کا حکم نامہ موصول

LONDON, Dec. 12, 2018 (Xinhua) -- Demonstrators stand outside the Houses of Parliament in London, Britain, on Dec. 11, 2018. British Prime Minister Theresa May launched her mission Tuesday to attempt to rescue her Brexit deal with a round of meetings with European Union (EU) member leaders. Xinhua/UNI PHOTO-4F

٭ قطعی فیصلہ سینئر کابینی وزیر ساجد جاوید اندرون دو ماہ کریں گے
٭ وجے مالیا کا بھی متعدد متبادلوں پر غور
٭ ممبئی کے آرتھر روڈ جیل کی کوٹھری نمبر 12 وجے مالیا کی منتظر

لندن۔ 12 ڈسمبر (سیاست ڈاٹ کام) برطانیہ کے دفتر داخلہ نے آج وجے مالیا کی ہندوستان حوالگی سے متعلق ویسٹ منسٹر مجسٹریٹ کی عدالت کے حکم نامہ کی وصولیابی کی توثیق کی۔ یاد رہے کہ چیف مجسٹریٹ جج ایماء اربھوتناٹ نے یہ فیصلہ سنایا تھا کہ شراب کے تاجر وجے مالیا ہندوستان کی عدالتوں میں بھی ان پر عائد کئے گئے 9,000 کروڑ روپئے کی دھوکہ دہی اور غیرقانونی رقمی لین دین سے متعلق جوابدہ ہیں لہذا اب قطعی فیصلہ معتمد داخلہ ساجد جاوید کے ہاتھ میں ہے جنہیں اب وجے مالیا کی ہندوستان حوالگی کا حکم صادر کرنا ہے۔ ساجد جاوید برطانوی کابینہ کے سب سے زیادہ سینئر برطانوی۔ پاکستانی وزیر ہیں اور اب ان کے پاس اس قطعی فیصلہ پر عمل آوری کے لئے مزید دو ماہ کا وقت ہے تاہم یہ اندیشے بھی موجود ہیں کہ وجے مالیا کی تمام اپیلوں کے مراحل کو اگر شامل کیا گیا تو حوالگی کا مرحلہ مزید طویل ہوسکتا ہے۔ یہاں اس بات کا تذکرہ ایک بار پھر کیا گیا ہے کہ دفتر داخلہ نے ویسٹ منسٹر مجسٹریٹ کے فیصلہ کی نقل وصول ہونے کی توثیق کی ہے جس کے تحت مالیا کی ہندوستان کو حوالگی تقریباً یقینی ہے۔ دریں اثناء کراؤن پراسیکیوشن سرویس (CPS) کے ترجمان جنہوں نے حکومت ہند کی جانب سے جرح کی تھی، نے بتایا کہ معتمد داخلہ اگر اس کیس پر غوروخوض کررہے ہیں تو جس تاریخ کو یہ کیس ان سے رجوع کیا گیا تھا، اس تاریخ سے اندرون دو ماہ انہیں وجے مالیا کی ہندوستان حوالگی کا حکم جاری کردینا چاہئے۔ انہوں نے یہ بھی کہا کہ فیصلہ چاہے کچھ بھی ہو لیکن جو پارٹی کیس ہار چکی ہے (وجے مالیا)، ان کے پاس ایک اور اپیل داخل کرنے کے لئے صرف 14 دنوں کا ہی وقت ہے۔ دوسری طرف خود وجے مالیا نے عدالت کے باہر اخباری نمائندوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ وہ تمام متبادلوں پر غور کررہے ہیں اور اس کے بعد ہی کوئی قطعی فیصلہ کریں گے جبکہ مسٹر آنند دوبے جو یو کے کی بوٹیک لا ایل ایل پی کے شراکت دار ہیں اور مالیا کے ہندوستان حوالگی معاملہ میں ان کے سالیسیٹر ہیں، نے بھی یہی بات کہی کہ مالیا بھی عدالت کے فیصلہ کا انتہائی محتاط انداز میں جائزہ لے رہے ہیں لہذا اس وقت اس کیس سے متعلق مزید کوئی تبصرہ کرنا مناسب نہیں ہوگا۔ بہرحال پیر کے روز وجئے مالیا کی ہندوستان کو حوالگی سے متعلق جو فیصلہ سامنے آیا ہے، وہ یقینا اس کیس کا ایک اہم موڑ ہے جس کا نقطہ آغاز وہ زمانہ تھا جب غیرکارکرد ہوچکی کنگ فشر ایرلائینز کے مالک وجے مالیا نے ہندوستان کے کئی قومی بینکوں سے خطیر رقمی قرضے حاصل کئے تھے۔ سی پی ایس کا یہ استدلال ہے کہ وجے مالیا نے وہ قرضے دھوکہ دہی کی نیت سے ہی حاصل کئے تھے اور بعدازاں ان کا بیجا استعمال بھی کیا گیا۔ چیف مجسٹریٹ نے واضح طور پر اپنے فیصلہ میں کہا کہ بادی النظر میں یہ معاملہ دھوکہ دہی، سازش اور غیرقانونی رقمی لین دین کا ہے۔ 62 سالہ وجے مالیا کے لئے ممبئی کی آرتھر روڈ جیل کی کوٹھری نمبر 12 کو بھی تیار رکھا گیا ہے جس کی ویڈیو پہلے ہی برطانیہ بھیجی جاچکی ہے اور جس پر برطانوی عدالت نے بھی اطمینان کا اظہار کیا تھا۔ حکومت ہند نے بھی یہ تیقن دیا تھا کہ وجے مالیا کو جیل میں ہر ممکنہ طبی سہولیات فراہم کی جائیں گی۔

TOPPOPULARRECENT