Monday , April 23 2018
Home / Top Stories / بشارالاسد ’’جانور ‘‘ زہریلی گیاس کے استعمال کی بھاری قیمت چکانی پڑے گی :ٹرمپ

بشارالاسد ’’جانور ‘‘ زہریلی گیاس کے استعمال کی بھاری قیمت چکانی پڑے گی :ٹرمپ

شام کے معصوم افراد کے خلاف دوما میں پھر ایک بار کیمیائی ہتھیاروںکا استعمال ، سینکڑوں ہلاک ، سعودی عرب ، ترکی ، اقوام متحدہ اور امریکہ کا اظہار مذمت

واشنگٹن ۔ /8 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) صدر امریکہ ڈونالڈ ٹرمپ نے آج صدر شام بشارالاسد کو سخت الفاظ میں انتباہ دیا کہ شام میں جنگ زدہ ٹاؤن میں کیمیائی حملوں کی بھاری قیمت چکانی پڑے گی ۔ شام کے علاقہ ڈوما میں کیمیائی حملوں سے درجنوں شامی شہری ہلاک ہوئے ہیں ۔ ڈونالڈ ٹرمپ نے بشارالاسد کو ’’جانور‘‘ قرار دیا اور روس و ایران پر الزام عائد کیا کہ دونوں ممالک بشارالاسد کی سرپرستی کررہے ہیں ۔ صدر امریکہ ڈونالڈ ٹرمپ کے علاوہ سعودی عرب ، اقوام متحدہ ، ترکی نے بھی شام میں کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کی شدید مذمت کی ۔ ٹرمپ نے آج ٹوئٹر پر اپنے سلسلے وار پیامات پوسٹ کرتے ہوئے لکھا کہ شام کی فوج کی جانب سے محاصرہ کرتے ہوئے اس علاقے میں حیوانیت اور بربریت کا ننگا ناچ کیا گیا اور کیمیائی حملے کرتے ہوئے خواتین اور بچوں کے بشمول کئی افراد کو موت کی نیند سلایا گیا ۔ تصویروں سے پتہ چلتا ہے کہ کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال سے کئی خاندان اپنے گھروں میں ہی دم توڑ دیئے ۔ بشارالاسد کی حکومت اس پورے علاقے تک دنیا بھر کے عوام کی رسائی کو ناقابل یقین بنادیا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ روس کے صدر پوٹین اور ایران اس حیوان بشارالاسد کی سرپرستی کرنے کیلئے ذمہ دار ہیں اور انہیں بھاری قیمت چکانی پڑے گی ۔ انہوں نے اپنے روسی ہم منصب ولادیمیر پوٹین اور ایران کو خبردار کیا کہ آمریت پسند حکمراں اسد کی حمایت کیلئے انہیں سنگین نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا ۔ ٹرمپ نے شام کی تباہی کیلئے سابق صدر امریکہ بارک اوباما پر بھی الزام عائد کیا اور کہا کہ ان کے پیشرو کی کارروائیاں اس جانور اسد کی حرکتوں کو روک سکتی تھیں اگر صدر اوباما ریت پر کھینچی گئی اپنی سرخ لائین کو عبور کرلیتے تو شام میں یہ تباہی بہت پہلے ہی روکی جاسکتی تھی اور حیوان اسد تاریخ کا حصہ بن چکا ہوتا ۔ کل رات سے شام کے غوطہ علاقے میں واقع دوما میں کئے گئے کیمیائی حملوں سے کم از کم 80 شہری ہلاک ہوئے ہیں ۔ یہاں سے ملنے والی تصاویر ہولناک ہیں ۔ اقوام متحدہ کے سربراہ نے کیمیائی ہتھیاروں کے مبینہ استعمال کو تشویشناک قرار دیا اور کہا کہ اس حملے کے دوران بچاؤ کاری میں مصروف ورکرس بھی ہلاک ہوئے ہیں ۔ سکریٹری جنرل اقوام متحدہ انٹینو گیوٹیرس نے ایک بیان میں کہا کہ شہر دوما میں شامی حکومت کے تشدد سے متعلق اطلاعات سن کر انہیں گہری تشویش ہورہی ہے ۔ رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ شامی فوج شہریوں پر بمباری کرتے ہوئے شلباری بھی کررہی ہے ۔ کئی عمارتیں تباہ ہوچکی ہیں اور دواخانے بھی مسمار کردیئے گئے ہیں ۔ حکومت سعودی عرب نے بشارالاسد حکومت کو انتباہ دیا کہ وہ اپنی حرکتوں سے باز آجائیں ۔ ترکی نے بھی شام کے شہر دوما میں کیمیائی ہتھیاروں کے استعمال کی شدید مذمت کی ہے اور اس کے لئے صدر بشارالاسد حکومت کو ذمہ دار قرار دیا ہے ۔ ترکی کے وزارت خارجہ نے ایک بیان میں کہا کہ ہم اس حملے کی شدید مذمت کرتے ہیں اور یہ حملے بلاشبہ بشارالاسد حکومت نے ہی کروائے ہیں ۔ بچاؤ کاری ورکرس نے کہا کہ کلورین گیاس حملے میں درجنوں شہری ہلاک ہوئے ہیں ۔ جبکہ اسد حکومت اور کے حلیف ملک روس نے ان الزامات کو مسترد کرتے ہوئے گیاس حملوں کی تردید کی ہے ۔ گزشتہ ہفتہ صدر ترکی رجب طیب اردغان نے شام کی صورتحال پر غور وخوص کرنے کیلئے ایک چوٹی کانفرنس کا اہتمام کیا تھا جس میں صدر روس ولادیمیر پوٹین اور صدر ایران حسن روحانی نے بھی شرکت کی تھی ۔ وہ 7 سال سے جاری اس خانہ جنگی کو ختم کرنے کی ہرممکنہ کوشش کررہے ہیں ۔ایران نے کہا کہ شام میں کیمیائی حملوں کے الزامات سازش کا حصہ ہیں ۔

TOPPOPULARRECENT