Sunday , December 17 2017
Home / ہندوستان / بعض روہنگیا آئی ایس آئی اور دولت اسلامیہ سے مربوط:حکومت

بعض روہنگیا آئی ایس آئی اور دولت اسلامیہ سے مربوط:حکومت

2014 ء تک روہنگیا صیانتی خطرہ نہیں تھے : عمرعبداﷲ ، انسانی مسئلہ : بنگلہ دیشی وزیر

نئی دہلی ۔18 ستمبر۔( سیاست ڈاٹ کام) بعض روہنگیاؤں کے پاکستان کی آئی ایس آئی اور دہشت گرد گروپ دولت اسلامیہ سے روابط کا انکشاف ہوا ہے ۔ یہ لوگ قانون کے مطابق غیرقانونی تارکین وطن ہیںاور حکومت ہند ان کے خلاف کارروائی کی پابند ہے ۔ مرکزی وزارت داخلہ کے ترجمان نے اپنے ایک بیان میں اس کا انکشاف کیا ۔ سرینگر سے موصولہ اطلاع کے بموجب سابق چیف منسٹر جموں و کشمیر عمر عبداﷲ نے آج کہاکہ محکمۂ سراغ رسانی کی جانب سے ایسی کوئی اطلاع نہیں دی گئی کہ روہنگیا تارکین وطن ریاست جموں و کشمیر میں 2014 ء تک صیانتی خطرہ تھے ۔ نیشنل کانفرنس کے قائد مرکز کی جانب سے سپریم کورٹ میں ملک میں روہنگیا مسلم تارکین وطن کے بارے میں داخل کردہ حلفنامہ پر ردعمل ظاہر کررہے تھے ۔ انھوں نے اپنے ٹوئٹر پر تحریر کیا کہ 2014 ء سے قبل روہنگیا تارکین وطن ہندوستان کی صیانت کیلئے خطرہ نہیں تھے ۔ متحدہ ہیڈکوارٹرس جو فوج ، نیم فوجی فورسیس ، پولیس ، ریاستی اور مرکزی سراغ رسانی محکموں پر مشتمل ہے اور چیف منسٹر جموں و کشمیر اس کی صدرنشین ہیں انھوں نے روہنگیا تارکین وطن کو غیرقانونی تارکین وطن قرار دیا ہے ، جبکہ مرکزی حکومت نے سپریم کورٹ سے کہاکہ اُن کے پاکستان کی آئی ایس آئی اور دہشت گرد گروپس دولت اسلامیہ سے روابط کا انکشاف ہوا ہے ۔ کولکتہ سے موصولہ اطلاع کے بموجب بنگلہ دیش کے وزیر برائے نفاذ قانون محکمہ جات و مقامی انتظامیہ شہریار عالم نے کہاکہ روہنگیا تارکین وطن کا مسئلہ ایک انسانی بحران کا مسئلہ ہے ۔ انھوں نے کہاکہ ہم نے نفاذ قانون محکموں اور مقامی انتظامیہ کو اس بات کو یقینی بنانے کی ہدایت دی ہے کہ روہنگیا تارکین وطن اُن کے لئے مقررہ علاقوں کو منتقل کردیئے جائیں ۔ انھوں نے میانمار کی فوج کے روہنگیا مسلمانوں پر مظالم کی شدت سے مذمت کی ۔

TOPPOPULARRECENT