Sunday , November 19 2017
Home / دنیا / بعض ریپبلکنس کا ٹرمپ پر کلنٹن کی فوقیت پرغور

بعض ریپبلکنس کا ٹرمپ پر کلنٹن کی فوقیت پرغور

ریپبلکن پارٹی کیلئے رقم جمع کرنے والی کھرب پتی وٹ مین کے انحراف سے پارٹی میں ہلچل
واشنگٹن ۔ 3 اگست (سیاست ڈاٹ کام) امریکہ کے ریپبلکنس ڈیموکریٹک پارٹی کی صدارتی امیدوار ہلاری کلنٹن کو ووٹ دینے پر غور کررہے ہیں۔ پارٹی کے بعض اہم افراد نے ڈونالڈ ٹرمپ کو مسترد کردیا ہے کیونکہ ان کی انتخابی مہم میں انہوں نے کئی گہرے تنازعہ پیدا کرلئے ہیں۔ ڈونالڈ ٹرمپ کے خلاف رائے دینے پر ریپبلکن پارٹی کے امیدوار غور کررہے ہیں۔ قبل ازیں 2012ء میں ریپبلکن پارٹی کے نامزد امیدوار مٹ رومنی نے پریشانی ظاہر کی تھی جبکہ جاریہ سال کے اوائل میں ڈونالڈ ٹرمپ کی امیدواری پر ریپبلکن پارٹی غور کررہی تھی۔ یہ واضح نہیں ہوسکا کہ ہلاری کلنٹن کی تائید کرنے والے ریپبلکن پارٹی سے انحراف کرکے ڈیموکریٹک پارٹی میں شامل ہوجائیں گے لیکن پریشان حال ریپبلکن پارٹی کے نامزد امیدوار ڈونالڈ ٹرمپ نے انتخابی تنازعہ کا سلسلہ روکنے سے انکار کردیا۔ ایک مسلم امریکی فوجی کے والدین نے ایوان کے اسپیکر پال ریان کو دوبارہ منتخب کرنے سے انکار کردیا اور ٹرمپ کے بارے میں اپنے اندیشوں کا کھل کر اظہار کیا۔ نامور ٹیکنیکل ایگزیکیٹیو نٹ وٹ مین تازہ ترین اعلیٰ سطحی قدامت پسند شخصیت بن گئے ہیں جنہوں نے ٹرمپ کو ایک بددیانت شخصیت قرار دیتے ہوئے ہلاری کلنٹن کی تائید کا اعلان کردیا ہے۔ انہوں نے کل امریکی روزنامہ نیویارک ٹائمس سے کہا کہ ہلاری کلنٹن کی انتخابی مہم میں ان کا ٹھوس حصہ ہے۔ وٹ مین جو خود بھی کھرب پتی ہیں اور ریپبلکن پارٹی کیلئے رقومات حاصل کرنے والی ایک نامور شخصیت ہیں۔ ہیولیٹ پکارڈ انٹرپرائز کی چیف ایگزیکیٹیو ہیں اور ای بے کی سی ای او رہ چکی ہیں۔ انہوں نے 14 کروڑ ڈالر کی شخصی رقم گورنر کیلیفورنیا کے انتخابی عہدہ کیلئے مقابلہ کے دوران 2010ء میں خرچ کی تھیں۔ ان کے انحراف سے ظاہر ہوتا ہیکہ ٹرمپ کے بارے میں ریپبلکن پارٹی کے اہم افراد کو کتنے اندیشے ہیں۔

TOPPOPULARRECENT