Thursday , December 14 2017
Home / ہندوستان / بعض قائدین میں عوام سے ربط کا اخلاقی حوصلہ نہ رہا

بعض قائدین میں عوام سے ربط کا اخلاقی حوصلہ نہ رہا

فیس بُک اور ٹوئٹر جیسے غیر معتبر ذرائع ابلاغ پر انحصار۔ گجرات ودیا پیٹھ کے کانوکیشن سے پٹروڈا کا خطاب
احمدآباد 19 اکٹوبر (سیاست ڈاٹ کام) بعض قائدین کے پاس ’’اخلاقی تانے بانے‘‘ کا فقدان ہوتا ہے اور یہی وجہ ہے کہ وہ عوام سے رابطے کے لئے ’’غیر معتبر ذرائع‘‘ جیسے فیس بُک اور ٹوئٹر پر انحصار کرتے ہیں، ٹیلی کام کی جانی مانی شخصیت سام پٹروڈا نے یہ بات کہی۔ اُنھوں نے یہ بھی کہاکہ انفارمیشن ٹیکنالوجی رام راجیہ یا نہایت سازگار حالات کے گاندھیائی نظریہ کو فروغ دینے میں مددگار ہوسکتی ہے۔ پٹروڈا نے کہاکہ گاندھی کی توجہ سچائی، بھروسہ، سادگی، تمام طبقات کی ترقی پر مرکوز تھی۔ بدبختی سے آج میں دیکھ رہا ہوں کہ ہم ہماری روز مرہ کی زندگی میں کئی طرح سے گاندھی کو کھو چکے ہیں۔ اداروں پر قبضہ ہوگیا ہے اور آج ہندوستان اور امریکہ میں لوگ بڑی حد تک اُلجھن میں ہیں کہ ہمارا طویل میعادی ویژن کیا ہو؟ پٹروڈا گزشتہ روز گجرات ودیا پیٹھ کے 64 ویں کانوکیشن میں مخاطب تھے۔ یہ ادارہ 1920 ء میں گاندھی جی نے قائم کیا تھا۔ پٹروڈا نے کہاکہ لوگ آج کل انتقامانہ ذہنیت والے ہوچلے ہیں، شخصی حملے، لغو باتیں، جھوٹے وعدے اور میڈیا نے سچائی پر مبنی پیام کو ماند کردیا ہے۔ 75 سالہ ٹیلی کام انٹرپرینر نے رضاکار تنظیموں کے نمائندوں کے گروپ جس نے گزشتہ روز اُن سے ملاقات کی، اُس سے بتایا کہ آج وہ لوگ محض اس لئے خائف ہیں کیونکہ اُن کے کاموں کو حملوں کا نشانہ بنایا جارہا ہے۔ اس طرح کے حالات ہندوستان میں قابل قبول نہیں ہیں۔ پٹروڈا نے تقریباً 50 سال انفارمیشن اینڈ کمیونکیشنس ٹیکنالوجی (آئی سی ٹی) اور متعلقہ عالمی و قومی تبدیلیوں سے واپسی میں گزارے ہیں۔ اُنھوں نے اسٹوڈنٹس کو تاکید کی کہ گاندھی جی کے ہندوستان کو شرمندۂ تعبیر کرنے کے لئے جُٹ جائیں اور ٹیکنالوجی کا بھرپور استعمال کریں جس نے آج موبائیل فونوں کے ذریعہ 1.2 بلین ہندوستانیوں کو مربوط کر رکھا ہے۔

TOPPOPULARRECENT