Friday , November 24 2017
Home / دنیا / بلجیم میں پولیس دھاوا، الجیریا کا مشتبہ شخص ہلاک

بلجیم میں پولیس دھاوا، الجیریا کا مشتبہ شخص ہلاک

بروسلز ۔ 16 ۔ مارچ (سیاست ڈاٹ کام) بلجیم پولیس نے کہا ہے کہ دارالحکومت بروسلز میں مخالف دہشت گردی مہم کے تحت ایک دھاوے میںہلاک ہونے والے الجیریائی شخص کی نعش کے قریب دہشت گرد تنظیم آئی ایس (داعش) کا پرچم دستیاب ہوا ہے ۔ استغاثہ نے کہا ہے کہ دھاوے کے دوران فرار ہونے میں کامیاب دیگر دو مشتبہ عسکریت پسندوں کی تلاش جاری ہے ۔ مہلوک شخص کی شناخت ایک 35 سالہ الجیریائی شہری محمد بالکعید کی حیثیت سے کی گئی ہے جو بلجیم میں  غیر قانونی طور پر مقیم تھا ۔ واضح رہے کہ نومبر میں پیرس پر ہوئے دہشت گرد حملے کی تحقیقات کے ضمن میں بلجیم اور فرانس کی پولیس نے دو دن قبل یہ دھاوا کیا تھا ۔ نومبر کے پیرس قتل عام کی ذمہ داری داعش نے قبول کی تھی ۔ اس حملہ میں 130 افراد ہلاک ہوگئے تھے ۔ بلجیم کے وزیراعظم چارلس مچیل نے کہا کہ تحقیقات جاری ہیں اور تازہ ترین واقعہ کے بعد دہشت گردی کے خلاف چوکسی کی سطح پر فیصلہ کیلئے قومی سلامتی کونسل کا اجلاس منعقد ہوگا۔ استغاثہ نے کہا ہے کہ خاموش اور پرسکون مقام پر ایک مکان کی تلاشی کے دوران دو مشتبہ افراد نے دروازہ کھولتے ہی وہاں موجود پولیس پر فائرنگ کی تھی جس کے نتیجہ میں بشمول ایک خاتون تین ملازمین پولیس زخمی ہوگئے۔ بعد ازاں فائرنگ کے تبادلہ میں چوتھا پولیس افسر زخمی ہوا۔ تاہم اسپیشل فورسس کے ایک خفیہ نشانہ باز نے ایک حملہ آور کو اپنے قابو میں لے لیا جب وہ فلیٹ کی کھڑکی سے پولیس پر فائرنگ کی کوشش کر رہا تھا ۔ پولیس ترجمان تھیری وائس نے کہاکہ ایک حملہ آور کو گولی ماردی گئی، اس کی نعش کے قریب ایک کلا شینکوف بندوق ، سلفی تھانہ پر ایک کتاب اور داعش کا پرچم دستیاب ہوا۔ انہوں نے کہا کہ مہلوک بالکعید 2014 ء میں سرقہ کے ایک کیس میں ماخوذ تھا ۔ پولیس اس کے بارے میں اس کیس کے سواء اور کچھ نہیں جانتی تھی۔

TOPPOPULARRECENT