بلدی ملازمین مطالبات منوانے میں کامیاب لیکن کچرے کی نکاسی میں ناکام

حیدرآباد 16 فبروری (سیاست نیوز) دونوں شہروں میں بلدی ملازمین کی ہڑتال ختم ہوئے تین یوم گزر چکے ہیں لیکن ابھی تک بھی کئی علاقوں میں کچرے کے انبار لگے ہوئے ہیں جس کے سبب تعفن پھیل رہا ہے۔ پرانے شہر کے کئی علاقوں میں جہاں زائداز ایک ہفتہ سے کچرا نہیں ہٹایا گیا ہے وہاں پر تعفن اور بدبو کے باعث عوام کا چلنا پھرنا دشوار بنا ہوا ہے۔ بتایا جا

حیدرآباد 16 فبروری (سیاست نیوز) دونوں شہروں میں بلدی ملازمین کی ہڑتال ختم ہوئے تین یوم گزر چکے ہیں لیکن ابھی تک بھی کئی علاقوں میں کچرے کے انبار لگے ہوئے ہیں جس کے سبب تعفن پھیل رہا ہے۔ پرانے شہر کے کئی علاقوں میں جہاں زائداز ایک ہفتہ سے کچرا نہیں ہٹایا گیا ہے وہاں پر تعفن اور بدبو کے باعث عوام کا چلنا پھرنا دشوار بنا ہوا ہے۔ بتایا جاتا ہے کہ خانگی کنٹراکٹرس کے ذریعہ بلدیہ کی جانب سے کچرے کی نکاسی کے اقدامات کئے جارہے ہیں لیکن اِس کے باوجود عملہ کی کمی کے باعث کچرے کی فوری نکاسی ممکن نہیں ہوپارہی ہے۔ پرانے شہر کے کئی علاقوں میں جہاں صفائی عملہ کام کاج پر واپس آچکا ہے وہ بھی کچرے کے انبار کی نکاسی سے قاصر ہے چونکہ کچرے کے انبار ہٹانے کے لئے نہ صرف بڑے ٹرک کی ضرورت ہے بلکہ جے سی بی مشینیں بھی درکار ہیں۔ مجلس بلدیہ عظیم تر حیدرآباد کی جانب سے جے سی بی مشینوں کے استعمال کی حتی الامکان کوشش کی جارہی ہے لیکن اِس کے باوجود بھی رات کے اوقات میں کچرے کی نکاسی کو محدود رکھنے کے باعث شہر کے بیشتر علاقوں سے کچرا ابھی تک ہٹایا نہیں جاسکا ہے۔ پرانے شہر کے گنجان آبادی والے علاقوں میں کچرے کی نکاسی میں عدم دلچسپی کے سبب کئی وبائی بیماریوں کے پھیلنے کا خدشہ ہے۔ چونکہ محلہ جات سے کچرے کی نکاسی سے پہلے اہم سڑکوں پر موجود انبار ہٹائے جارہے ہیں۔ بلدی عہدیداروں کے بموجب آئندہ دو یوم میں دونوں شہروں کے تقریباً تمام محلہ جات میں موجود کچرے کے انبار کی نکاسی کو یقینی بنایا جائے گا۔

پرانے شہر کے بیشتر علاقوں کے عوام اِس بات کی شکایت کررہے ہیں کہ متعدد مرتبہ توجہ دہانی کے باوجود کچرے کی عدم نکاسی کے سبب محلوں میں تعفن پھیل رہا ہے۔ بلدی عہدیداروں کا کہنا ہے کہ اِس مسئلہ سے صرف پرانے شہر کے عوام دشواریوں کا سامنا نہیں کررہے ہیں بلکہ شہر کے کئی پاش علاقوں کی بھی ہڑتال کے سبب یہی صورتحال ہے۔ لیکن بلدی عملہ جہاں تک ہوسکے اِس بات کی کوشش میں مصروف ہے کہ جلد از جلد کچرے کی نکاسی کو یقینی بنایا جائے۔ بعض علاقوں میں عوام کچرے کے انبار کو جلارہے ہیں وہ بھی فضائی آلودگی کا سبب بن رہا ہے۔ بلدی عہدیداروں نے عوام کو مشورہ دیا ہے کہ وہ کچرے کو نہ جلائیں چونکہ اِس سے فضائی آلودگی اور تعفن پھیلتا ہے۔ بلدی عملہ اِس بات کی ممکنہ کوشش کررہا ہے کہ آئندہ دو دنوں میں شہر سے کچرے کی مکمل نکاسی کو یقینی بنادیا جائے گا اور اِس کے لئے ضرورت پڑنے پر اضافی جے سی بی اور بڑے ٹرکس حاصل کئے جائیں گے۔

TOPPOPULARRECENT