Monday , November 20 2017
Home / دنیا / بلوچ قوم پرستوں کا وہائٹ ہائوز کے روبرو احتجاج

بلوچ قوم پرستوں کا وہائٹ ہائوز کے روبرو احتجاج

بلوچستان کی آزادی کا مطالبہ، پاکستان پر قبضہ اور نسل کشی کا الزام
واشنگٹن۔13 فروری (سیاست ڈاٹ کام) لوچستان پر پاکستان کے زبردستی غاصبانہ جنگ کے خاتمہ کا مطالبہ کرتے ہوئے بلوچ نژاد امریکیوں اور اس شورش زدہ صوبہ سے تعلق رکھنے والے ہزاروں افراد نے واشنگٹن میں آج قصر صدارت وہائٹ ہائوز کے روبرو پرامن احتجاجی مظاہرہ کیا۔ انہوں نے اس ضمن میں امریکہ کی مداخلت اور صوبہ میں ناٹو فوج کی تعیناتی کا مطالبہ بھی کیا۔ لوچی تنظیم ’’صوائے گمشدگان مردمان بلوچ‘‘ کے نائب صدر قدیر بلوچ نے وہائٹ ہائوز کے روبرو اس احتجاجی مظاہرہ میں حصہ لینے سے قبل 2013 ء میں کوئٹہ تا اسلام آباد 3 ہزار کیلو میٹر طویل مارچ منظم کرتے ہوئے اس صوبہ میں پاکستانی فوج اور حکومت کی جانب سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے ارتکاب پر احتجاج بھی کیا تھا۔ عبدالقدیر بلوچ نے وہائٹ ہائوز کے روبرو بلوچیوں کے بڑے احتجاج سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ ’’35 ہزار بلوچ شہری لاپتہ ہیں۔ یہ بلوچی عوام کے انسانی حقوق کی بدترین خلاف ورزی ہے۔ یہ سب کچھ پاکستانی فوج اور جاسوس ادارہ آئی ایس آئی کی سرپرستی میں کیا گیا ہے۔ پرامن مظاہرین نے ایک ایسے آزاد بلوچستان کے قیام کا مطالبہ کیا جو پاکستانی فوج کی طرف سے چلائی جانے والی مذہبی انتہاپسندی اور دہشت گردی سے متاثرہ علاقہ میں امن و استحکام کی ضمانت دے سکتا ہے۔ مظاہرین نے الزام عائد کیا کہ پاکستانی فوج فی الحال مقامی بلوچ آبادی کے قتل عام اور نسلی صفائے کی خونریز مہم میں مصروف ہے۔ بلوچ صوبائی اسمبلی کے سابق اسپیکر وحید بلوچ نے کہا کہ ’’ہم امریکی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ پاکستان کو دی جانے والی فوجی امداد بند کی جائے کیوں کہ بلوچ عوام کے قتل عام کے لئے پاکستانی فوج کی جانب سے امریکی اسلحہ بھی استعمال کئے جارہے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ منان بلوچ کا محض اس لئے قتل کیا گیا کہ وہ بلوچی سرزمین، بندرگاہ گوادر کے سمندری علاقوں، قدرتی وسائل، قدرتی گیس، معدنیات، تانبہ اور سونے کی کانوں پر پاکستان کے غاصبانہ قبضہ اور انسانی حقوق کی پامالی کے خلاف پامردی اور ثابت قدمی کے ساتھ لامتناعی جدوجہد کررہے تھے۔ گلگت۔بلنستان انسٹی ٹیوٹ کے صدر سینجی سہرنگ نے اپنے خطاب کے دوران بلوچستان کی آزادی کے لئے جاری جدوجہد کی تائید اور بلوچیوں کے قتل عام کی سخت مذمت بھی کی۔

TOPPOPULARRECENT