Sunday , April 22 2018
Home / ہندوستان / بلیٹ ٹرین پراجیکٹ ہندوستان کے ترقیاتی منصوبہ کا حصہ

بلیٹ ٹرین پراجیکٹ ہندوستان کے ترقیاتی منصوبہ کا حصہ

ٹکنالوجی کے استعمال کی ابتداء میں مزاحمت ہوتی ہے ۔ وزیر ریلوے پیوش گوئل

نئی دہلی 14 نومبر ( سیاست ڈاٹ کام ) وزیر ریلوے مسٹر پیوش گوئل نے مرکزی حکومت کی جانب سے بلیٹ ٹرین پراجیکٹ شروع کرنے کی مدافعت کی اور کہا کہ یہ ملک کے ترقیاتی منصوبوں کا حصہ ہے ۔ پیوش گوئل یہاں ایک ویب سائیٹ کے سوال جواب سشن میں حصہ لے رہے تھے جہاں صارفین نے سوالات کئے اور ان کے آن لائین جوابات دئے جا رہے تھے ۔ یہاں صارفین نے سوال کیا تھا کہ آیا ہندوستان کو واقعی بلیٹ ٹرین کی ضرورت ہے ؟ ۔ پیوش گوئل اکثر سوشیل میڈیا پر سرگرم رہتے ہیں۔ انہوں نے ممبئی ۔ احمد آباد ہائی اسپیڈ ریل کی مادفعت میں 884 الفاظ پر مشتمل جواب دیا ۔ یہ در اصل بلیٹ ٹرین پراجیکٹ ہے ۔ انہوں نے اپنے نقطہ نظر کو واضح کرنے کیلئے وزیر اعظم نریندر مودی کی کئی تصاویر اور کچھ گرافکس بھی پیش کئے ۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان تیزی سے ترقی کرتی ہوئی معیشت ہے اور اس کی کئی ترقیاتی ضروریات ہیں۔ ہندوستان کے ترقیاتی منصوبہ کا ایک بڑا جز اس کے موجودہ ریل نیٹ ورکس کو اپ گریڈ کرنا اور پھر نئی تیز رفتار ٹرین راہداریاں قائم کرنا بھی ہے جسے بلیٹ ٹرین کہا جاتا ہے ۔ پیوش گوئل نے کہا کہ ممبئی ۔ احمد آباد ہائی اسپیڈ ریل پراجیکٹ این ڈی اے حکومت کا ایک اہم ویژن والا پراجیکٹ ہے جس سے سیفٹی ‘ رفتار اور عوام کی خدمت کے ایک نئے دور کا آغاز ہوگا اور اس سے ہندوستانی ریلویز کو رفتار اور صلاحیتوں کے معاملہ میں بین الاقوامی لیڈر بننے کا موقع دستیاب ہوگا ۔

انہوں نے کہا کہ حالانکہ کسی ٹکنالوجی کے استعمال کے وقت اس کی مزاحمت ہوتی ہے لیکن بالآخر اس کے نتیجہ میں تبدیلی رونما ہوتی ہے ۔ انہوں نے کہا کہ نئی ٹکنالوجی کو کبھی آسانی سے قبول نہیں کیا جاتا اور بیشتر وقتوں میں اس کی مزاحمت ہوتی ہے تاہم تاریخ ہمیں بتاتی ہے کہ نئی ٹکنالوجی اور ترقی ملک کیلئے کافی نفع بخش ہوتی ہے ۔ وزیر ریلوے نے راجدھانی ٹرینس کے 1968 میں آغاز کی مثال پیش کی اور کہا کہ اس وقت بھی ان ٹرینوں کو متعارف کروائے جانے کی ریلوے بورڈ کے صدر نشین کے سمیت کئی گوشوں نے مخالفت کی تھی ۔ وزیر ریلوے نے کہا کہ اس طرح کی چیزیں ہندوستان کو پسماندہ رکھتی ہیں لیکن آج ہی وہ ٹرینیں ہیں جن پر ہر کوئی سفر کرنا چاہتا ہے ۔ ایک اور مثال پیش کرتے ہوئے پیوش گوئل نے دلیل دی کہ کئی لوگوں کی سوچ تھی کہ ہندوستان موبائیل فونس جیسی نئی ٹکنالوجی کیلئے بھی تیار نہیں ہے لیکن آج ہندوستان اس طرح کے فونوں کی دوسری سب سے بڑی مارکٹ ہے اور تقریبا ہر ہندوستان کے پاس موبائیل فون موجود ہے ۔ اسی طرح بلیٹ ٹرین پراجیکٹ سے ریلویز کو ہر مسافر کے سفر میں انقلاب لانے میں مدد ملے گی ۔

TOPPOPULARRECENT