Sunday , November 19 2017
Home / ہندوستان / بنگال میں ممتا کا اقتدار برقرار رہیگا ‘ آسام میں بی جے پی کا عروج

بنگال میں ممتا کا اقتدار برقرار رہیگا ‘ آسام میں بی جے پی کا عروج

ٹاملناڈو میں کروناندھی کی اقتدار پر واپسی کا امکان ۔ کیرالا میں یو ڈی ایف کا پلڑا بھاری ۔ ایگزٹ پولس کے اندازے
نئی دہلی ۔16 مئی ( سیاست ڈاٹ کام ) مغربی بنگال میں ممتابنرجی اپنا اقتدار برقرار رکھ سکتی ہیں جبکہ ٹاملناڈو میں کروناندھی کی ڈی ایم کے اقتدار پر واپسی کرسکتی ہے اور آسام میں بی جے پی کو اس کی توقعات کے مطابق کامیابی مل سکتی ہے ۔ آج کیرالا ‘ ٹاملناڈو اور پڈوچیری میں ہوئی رائے دہی کے بعد جاری کردہ ایگزٹ پولس میں یہ اشارے ملے ہیں۔ تینوں ریاستوں میں آج صبح سات بجے سے پولنگ کا آغاز ہوا تھا اور ابتدائی وقت سے ہی رائے دہی کا عمل تیز رفتار سے آگے بڑھتا رہا ۔ دو پہر تک خاصی پولنگ ہوچکی تھی ۔ تمام سیاسی جماعتوں کے اعلی قائدین اور خود چیف منسٹری کے دعویداروں نے بھی اولین وقتوں میں اپنے حق رائے دہی کا استعمال کیا تھا اور انہوں نے رائے دہندوں سے بھی کثیر تعداد میں رائے دہی کی اپیل کی تھی ۔ رائے دہندوں نے ابتداء سے ہی طویل قطار میں ٹہر کر اپنے ووٹ کا استعمال کیا ۔ بعض مقامات پر بارش بھی ہوئی لیکن رائے دہندوں کا جوش و خروش برقرار رہا تھا ۔ رائے دہی کی تکمیل کے بعد جو ایگزٹ پولس سامنے آئے ہیں ان کے بموجب مغربی بنگال میں ممتابنرجی اپنا اقتدار برقرار رکھ سکتی ہیں۔ انہیں 165 کے آس پاس نشستیں ملنے کی امید ہے جبکہ کانگریس ۔ بائیں بازو اتحاد کو یہاں 125 سے زائد نشستیں مل سکتی ہیں۔ کمیونسٹ جماعتیں یہاں اپنا اقتدار ممتابنرجی سے واپس لینے میں ناکام رہی ہیں۔ بی جے پی کو یہاں محض ایک نشست مل سکتی ہے ۔ بنگال میں کانگریس۔ بائیں بازؤ کا اتحاد ممتابنرجی کو کامیابی سے روک نہیں سکا ہے جبکہ بی جے پی بھی یہاں پوری کوشش کے بعد رائے دہندوں پر اثر انداز نہیں ہوسکی ہے ۔ آسام میں ایگزٹ پولیس کے بموجب بی جے پی اقتدار حاصل کرسکتی ہے ۔ مختلف سروے کے مطابق یہاں بی جے پی اور اس کی حلیف جماعتوں کو 70 کے آس پاس نشستیں مل سکتی ہیں۔ کانگریس کو 35 سے زیادہ نشستیں مل سکتی ہیں۔ یہاں بدر الدین اجمل کے آل انڈیا یونائیٹیڈ ڈیموکریٹک فرنٹ کو 10 کے آس پاس نشستیں مل سکتی ہیں۔ ٹاملناڈو میں ایم کرونا ندھی کی ڈی ایم کے کو اقتدار واپس مل رہا ہے ۔ یہاں ہر بار حکومت بدلنے کی روایت ایسا لگتا ہے کہ برقرار رہیگی ۔ یہاں کانگریس ۔ ڈی ایم کے اتحاد کو 130 کے آس  پاس نشستیں مل سکتی ہیں۔ جئے للیتا کی آل انڈیا انا ڈی ایم کے اپنا اقتدار بچانے میں ناکام ہوسکتی ہے ۔ بی جے پی یہاں بھی اپنے وجود کا احساس دلانے میں ناکام رہی ہے ۔ کیرالا میں کانگریس کو نقصان ہوسکتا ہے اور یہاں اس کا اقتدار بائیں بازو اتحاد کے ہاتھ جاسکتا ہے ۔ ابھی یہاں نشستوں کی تعداد کے تعلق سے کوئی پیش قیاسی نہیں ہوسکی ہے ۔ کیرالا میں بھی بی جے پی نے شدت کی مہم چلائی تھی تاہم اس کو یہاں بھی کوئی کامیابی ملتی نظر نہیں آتی ۔ پڈوچیری میں تاہم کانگریس کا اقتدار آسکتا ہے ۔

TOPPOPULARRECENT