Tuesday , November 21 2017
Home / Top Stories / بنگلور بمقابلہ حیدرآباد ، آج آئی پی ایل2016 ء کا فائنل

بنگلور بمقابلہ حیدرآباد ، آج آئی پی ایل2016 ء کا فائنل

بنگلور۔28 مئی (سیاست ڈاٹ کام )ڈیویڈ وارنر اور ویراٹ کوہلی کی زیر قیادت ٹیموں سن رائزرس حیدرآباد اور رائل چیلنجرس بنگلور کے درمیان کل یہاں ایم چناسوامی اسٹڈیم میں آئی پی ایل 2016 کا فائنل کھیلا جائے گا جو کہ ایک مسابقتی ٹکراؤ ہوسکتا ہے کیونکہ رواں سیزن بنگلور نے خود کو ٹورنمنٹ کی سب سے طاقتور بیٹنگ کی ٹیم ثابت کیا ہے تو دوسری جانب حیدرآباد نے خود کو سب سے طاقتور بولنگ کی حامل ٹیم کے طور پر منوایاہے۔ بنگلور کے لئے اس کے کپتان ویراٹ کوہلی ٹورنمنٹ میں سب سے زیادہ رنز اسکور کرتے ہوئے اپنی ٹیم کو پہلے مرحلے سے باہر ہونے کے خدشات سے محفوظ رکھتے  ہوئے پھر ایک مرتبہ خطاب کے قریب کردیا ہے۔دوسری جانب حیدرآبادی ٹیم کے لئے اس کے کپتان ڈیویڈ وارنر کے مظاہرے بھی مثالی ہیں جنہوں نے سیزن میں سب سے زیادہ رنز اسکور کرنے والے بیٹسمینوں میں دوسرا مقام حاصل کرتے ہوئے ٹیم کو خطاب سے ایک قدم دور لا کھڑا کیا ہے۔کل کھیلے جانے والے فائنل میں بنگلور کو کسی قدر اپنی طاقتور بیٹنگ سے سبقت حاصل رہے گی کیونکہ کوہلی اپنے کرئیر کے شاندار فام میں موجود ہیں جبکہ ان کے ہمراہ دنیا کے سب سے خطرناک تصور کئے جانے والے بیٹسمین اے بی ڈی ویلئرس ‘جارحانہ اوپنر کریس گیل اور آسٹریلیائی ٹیم کی نمائندگی کرچکے آل راؤنڈر شین واٹسن ہیں جن کی موجودگی میں ٹیم کو 200 سے زیادہ کا تعاقت کرنا یا پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے ہمالیائی اسکور بنانا کافی آسان دکھائی دے رہی ہے۔بنگلور نے اہم وقت اپنے ردھم کو حاصل کرتے ہوئے یکے بعد دیگرے گجرات‘کولکتہ‘پنجاب اور دہلی کے بعد کوالیفائر میں گجرات کو شکست دیتے ہوئے مسلسل 5 فتوحات درج کی ہیں جبکہ سن رائزرس حیدرآباد نے اہم موقع پر پہلے کولکتہ اور پھر گجرات کو یکے بعد دیگرے الیمینٹرس میں شکست دیکر فائنل میں رسائی حاصل کی ہے اور گذشتہ رات گجرات کے خلاف وارنر نے93 رنز کی ناقابل شکست اننگز کھیلی ہے۔

 

کوہلی جہاں 919 رنز کے ذریعہ سرفہرست ہیں تو وارنر بھی779 رنز اسکور کرچکے ہیں۔ بولنگ شعبہ میں بنگورکے لئے یوزیندر چہل جنہوں نے 12 مقابلوں میں 20 وکٹیں حاصل کی ہیں ان کے ہمراہ کریس جارڈن کی شمولیت بھی فائدہ مند ہورہی ہے اور خاص کر اننگز کے آخری اوورس میں جارڈن کی موجودگی نے بنگلور کے بولنگ مسائل کو کم کیا ہے۔حیدرآباد کے لئے بنگلہ دیشی بولر مستفیض الرحمن کی واپسی اہم ہوگی جو کہ زخمی ہونے کی وجہ سے گذشتہ مقابلے میں شرکت نہیں کرپائے تھے۔ رائل چیلنجرس بنگلور کے کپتان ویراٹ کوہلی نے کہا ہے کہ آئی پی ایل فائنل میں حریف کوئی بھی ٹیم ہو اس کا زیادہ فرق نہیں پڑتا کیونکہ ہم  حریف کو شکست دیکر ٹورنمنٹ کی تاریخ میں پہلی مرتبہ ٹرافی اپنے نام کریں گے۔ کپتان نے کہا کہ ان کی ٹیم مکمل طور پر فٹ اور بھر پور فارم میں ہے اور فائنل کھیلنے کیلئے بے تاب ہے۔ یادرہے کہ اس سے قبل رائل چیلنجرس بنگلور کی ٹیم آئی پی ایل میں دو مرتبہ فائنل کھیل چکی ہے اور دونوں مرتبہ وہ رنرزاپ رہی ہے۔ رائل چیلنجرز بنگلور نے پہلی مرتبہ آئی پی ایل 2009ء کے فائنل میں رسائی حاصل کیا تھا تاہم اسے فائنل میں حیدر آباد دکن چارجرس کے خلاف چھ رنز سے شکست کا سامنا کرنا پڑا تھا۔ دوسری مرتبہ آئی پی ایل 2011ء میں رائل چیلنجرز بنگلور نے فائنل کے لئے کوالیفائی کیاتاہم  اسے چینائی سوپر کنگز کے خلاف 58 رنز سے شکست ہوئی تھی۔

TOPPOPULARRECENT