بنگلہ دیش سے روہنگیا میانمار واپس جانا نہیں چاہتے، احتجاجی مظاہرہ

ڈھاکہ ۔ 19 جنوری (سیاست ڈاٹ کام) بنگلہ دیش میں سینکڑوں روہنگیا پناہ گزینوں نے انہیں میانمار واپس بھیجنے کے منصوبہ کے خلاف زبردست احتجاج منظم کیا۔ یاد رہیکہ لاکھوں روہنگیا مسلمان میانمارمیں فوجیوں اوربدھسٹوں کے ظلم و جبر سے اپنی جان بچا کر بنگلہ دیش آ چکے ہیں اور یہاں مختلف مقامات پر پناہ گزین ہیں جن میں کاکس بازار سب کی توجہ کا مرکز ہے۔ احتجاجیوں نے اپنے ہاتھوں میں بیانرس تھام رکھے تھے جن پر تحریر تھا کہ میانمار روانہ کرنے سے قبل ان کے تحفظ اور انہیں وہاں کی شہریت دیئے جانے کی طمانیت دی جائے۔ اس موقع پر وہ نعرے بازی بھی کررہے تھے۔ اطلاعات کے مطابق یہ احتجاج اقوام متحدہ کے خصوصی رپورٹر یانگھی لی کے روہنگیاؤں کے کیمپس کا دورہ کرنے کے بعد منظم کیا گیا۔ اس سلسلہ میں میانمار اور بنگلہ دیش کے درمیان ایک معاہدہ کو بھی قطعیت دی گئی ہے کہ اکٹوبر 2016ء سے یہاں آنے والے 750,000 روہنگیاؤں کو آئندہ دو سالوں کے اندر مرحلہ وار طور پر میانمار میں ان کے وطن راکھین روانہ کردیا جائے گا۔ دوسری طرف دائیں بازو کے گروپس کا یہ بھی کہنا ہیکہ روہنگیاؤں کی میانمار واپسی رضاکارانہ طور پر ہونی چاہئے۔

TOPPOPULARRECENT