Monday , June 25 2018
Home / دنیا / بنگلہ دیش میں بس پر آتشزنی حملہ، 7 افراد ہلاک

بنگلہ دیش میں بس پر آتشزنی حملہ، 7 افراد ہلاک

ڈھاکہ ۔ 3 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) کم از کم 7 مسافر بشمول دو خواتین جھلس کر خاکستر ہوگئے جبکہ مشتبہ اپوزیشن کارکنوں نے پٹرول بموں سے ایک پرہجوم بس پر مشرقی بنگلہ دیش میں حملہ کیا۔ یہ بدترین حملہ سیاسی بے چینی کے موجودہ عروج کے دوران کیا گیا جس میں ملک گیر سطح پر 54 ہلاکتیں واقع ہوچکی ہیں۔ پولیس نے کہا کہ سابق وزیراعظم خالدہ ضیاء کی بنگلہ

ڈھاکہ ۔ 3 فبروری (سیاست ڈاٹ کام) کم از کم 7 مسافر بشمول دو خواتین جھلس کر خاکستر ہوگئے جبکہ مشتبہ اپوزیشن کارکنوں نے پٹرول بموں سے ایک پرہجوم بس پر مشرقی بنگلہ دیش میں حملہ کیا۔ یہ بدترین حملہ سیاسی بے چینی کے موجودہ عروج کے دوران کیا گیا جس میں ملک گیر سطح پر 54 ہلاکتیں واقع ہوچکی ہیں۔ پولیس نے کہا کہ سابق وزیراعظم خالدہ ضیاء کی بنگلہ دیش نیشنلسٹ پارٹی (بی این پی) کے کارکنوں نے پٹرول بموں سے 3.30 بجے شب کے قریب بس پر حملہ کیا جو ڈھاکہ سے کاکس بازار شہر جارہی تھی۔ بس پر حملہ چوڑو گرام علاقہ میں ڈھاکہ ۔ چتگانگ قومی شاہراہ پر کیا گیا۔ شدید زخمی مسافروں کو ڈھاکہ میڈیکل کالج ہاسپٹل کے آتشزنی کے شکار افراد کے شعبہ میں شریک کردیا گیا۔ دیگر زخمیوں کو قریبی کومیلا میڈیکل کالج ہاسپٹل میں شریک کیا گیا۔ اخباری نمائندوں سے قومی شاہراہ کی پولیس کے ایک عہدیدار نے بات چیت کرتے ہوئے کہا کہ 7 افراد بشمول دو خواتین ہلاک ہوگئے اور کم از کم دیگر 16 زخمی ہیں۔ دواخانہ کے ڈاکٹرس نے کہا کہ جھلس جانے سے ہلاک ہونے والے افراد کی انتقال کی تعداد میں اضافہ ہوسکتا ہے کیونکہ چند زخمی مسافر ایسا معلوم ہوتا ہیکہ ناقابل علاج ہیں کیونکہ وہ 70 فیصد تک جھلس چکے ہیں۔

دو قریبی بیک وقت حملوں میں مشتبہ اپوزیشن کارکنوں نے ریلوے پٹریاں اکھاڑ دیں جس کی وجہ سے ایک ٹرین جنوب مشرقی شہر چٹگانگ کے قریب پٹری سے اتر گئی۔ کارکنوں نے ایک اور ٹرین پر ڈھاکہ کے مضافات میں پٹرول بم پھینکیں جن سے 14 مسافر زخمی ہوگئے۔ یہ گذشتہ 24 گھنٹے میں ٹرینوں پر حملہ کا دوسرا واقعہ تھا۔ قبل ازیں سبوتاج کرنے والوں نے پٹریاں اکھاڑ کر پھینک دی تھیں جس کی وجہ سے ٹرین پٹریوں سے اتر گئی تھی 5 افراد زخمی ہوئے تھے اور چٹگانگ کئی گھنٹے تک باقی ملک سے ٹرین رابطہ سے محروم ہوگیا تھا۔ کل رات کا واقعہ ریلویز کے سبوتاج کی ساتویں کوشش کی تھی جس کی وجہ سے ٹرینوں کو سست رفتار سے چلایا جارہا ہے تاکہ حملوں سے بچا جاسکے جس کے نتیجہ میں ٹرینوں کی آمد و رفت میں تاخیر ہورہی ہے۔ گذشتہ 24 گھنٹے میں کم از کم 15 گاڑیوں پر آتشزنی کے ذریعہ حملے کئے گئے جس میں کئی افراد زخمی ہوگئے۔

TOPPOPULARRECENT