Monday , October 22 2018
Home / دنیا / بنگلہ دیش میں سائنس فکشن مصنف کوچاقوزنی

بنگلہ دیش میں سائنس فکشن مصنف کوچاقوزنی

ڈھاکہ ۔4مارچ ( سیاست ڈاٹ کام ) ایک 21سالہ شخص کو یونیورسٹی کے ایک سمینار میں ایک سیکولر سائنس فکشن رائٹر 64سالہ محمد ظفر اقبال کو شاہ جلال یونیورسٹی آف سائنس سلہٹ کے احاطہ میں گردن اور سرپر چاقوزنی کی کئی ضربات کے الزام میں گرفتار کرلیا گیا ۔ اقبال عسکریت پسندی اور فرقہ پرستی کی مخالفت کیلئے شہرت رکھتے ہیں ۔ انہیں ایک مقامی دواخانہ منتقل کیا گیا اور وہاں سے بذریعہ طیارہ ملٹری ہاسپٹل ڈھاکہ منتقل کیا گیا ۔ پولیس کے بموجب حملہ آور فیض الرحمن گرفتار کرلیا گیا ہے ۔ وزیراعظم شیخ حسینہ نے اس حملہ کی سخت مذمت کی ہے اور حملہ آور کو انصاف کے کٹہرے میں کھڑا کرنے والے عہدیداروں کی ستائش کی ہے ۔ یونیورسٹی کے شعبہ الکٹرانک انجنیئرنگ کی جانب سے ایک سمینار منعقد کیا گیا تھا جس میں ظفر اقبال مہمان خصوصی تھے ۔ طلبہ اور ملازمین پولیس پروفیسر کی حفاظت کررہے تھے جب کہ ان پر فیض الرحمن نے چاقو زنی کے ذریعہ حملہ کیا ۔ اسے
پولیس کے حوالے کردیا گیا اور ظفراقبال کوسنگین حالات میں احاطہ سے مقامی اسپتال منتقل کیا گیا جہاں سے انہیں ملٹری ہاسپٹل ڈھاکہ منتقل کیا گیا ۔ ظفر اقبال کو 2015ء سے پولیس تحفظ حاصل تھا ۔ جب کہ عسکریت پسندوں نے انہیں جان سے مار دینے کی دھمکی دی تھی ۔ لیفٹننٹ کرنل علی حیدر آزاد احمد ریپڈایکشن بٹالین پولیس نے کہا کہ فیض الرحمن نے کہا ہے کہ وہ سلہٹ میں ایک مدرسہ کا طالب علم ہے ۔ تاہم اس کے بیان کی ہنوز توثیق نہیں کی جاسکی ۔ اس نے ظفر اقبال پر انہیں قتل کردینے کے ارادہ سے حملہ کیا تھا کیونکہ اس کے خیال میں وہ ’اسلام دشمن ‘ شخص ہے۔

TOPPOPULARRECENT