Saturday , November 18 2017
Home / عرب دنیا / بنگلہ دیش میں فیکٹری حادثہ کے ورکرس ہنوز انصاف سے محروم

بنگلہ دیش میں فیکٹری حادثہ کے ورکرس ہنوز انصاف سے محروم

سوار (بنگلہ دیش) ۔ 24 اپریل (سیاست ڈاٹ کام) بنگلہ دیش میں ہزاروں کپڑا ورکرس نے بادیدہ نم ایک احتجاجی مظاہرہ کیا جو دراصل فیکٹری کے انہدام کے واقعہ کی چوتھی برسی تھی۔ اس موقع پر انہوں نے مہلوک ورکرس کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے حادثہ کے متاثرین کیلئے انصاف اور بہتر اجرتوں کا مطالبہ کیا۔ یاد رہیکہ فیکٹری کے انہدام میں 1138 افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ چار سال قبل رانا پلازہ فیکٹری کامپلکس کے حادثہ کے بعد اب تک کسی بھی خاطی کے خلاف کوئی قانونی کارروائی نہیں کی گئی۔ بات صرف مہلوکین کی ہی نہیں ہے بلکہ زخمی ہونے والوں کی تعداد بھی 2000 بتائی گئی ہے۔ اس حادثہ کے بعد کپڑوں کی برانڈیڈ کمپنیوں کی قلعی کھل گئی ہے جو ترقی پذیر ملکوں میں اپنے کپڑے تیار کرواتے ہیں لیکن ورکرس کے تحفظ اور دیگر سہولیات کا کوئی خیال نہیں کرتیں۔ اس موقع پر ایک خاتون ورکر مریم اختر نے کہا کہ چار سال بھی کسی قصوروار کو سزاء دینے کیلئے ناکافی ہیں تو انہیں ہمارے حوالے کردو۔ ہم اپنا انصاف خود حاصل کرلیں گے۔ مریم کی بیٹی بھی فیکٹری حادثہ میں ہلاک ہوگئی تھی۔ اس نے کہا کہ اسے کوئی معاوضہ نہیں چاہئے۔ وہ صرف اس بات کی خواہاں ہے کہ فیکٹری کے مالک سہیل رانا کو پھانسی پر لٹکایا جائے۔

TOPPOPULARRECENT